உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جی۔33ممالکWTOمیں موثراورنتائج پرمبنی کردارکریں ادا! پیوش گوئل کاڈبلیوٹی اوپلیٹ فارم سےخطاب

    پیوش گوئل

    پیوش گوئل

    انھوں نے کہا کہ میں چیئر سے گزارش کروں گا کہ اگر میرے تمام دوست متفق ہوں تو اس پر عمل کیا جائے۔ گوئل نے مزید کہا کہ یہ کوئی اعلان نہیں ہے بلکہ ایک فیصلہ ہے جو 2013 میں کیا گیا تھا، پھر 2015 میں اور پھر دوبارہ 2018 میں بھی یہی فیصلہ کیا گیا تھا۔

    • Share this:
      ہندوستان نے اتوار کے روز ترقی پذیر ممالک کے G-33 گروپ پر زور دیا کہ وہ اجتماعی طور پر کام کریں اور دیگر ہم خیال ممالک تک رسائی حاصل کریں تاکہ ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن (WTO) میں ایک منصفانہ، متوازن اور ترقی پر مبنی نتیجہ حاصل کرنے میں ان کی حمایت حاصل کی جا سکے۔ جس کے ذریعہ عوامی ذخیرہ اندوزی اور خصوصی حفاظتی طریقہ کار کا حل پیش کیا جاسکے۔

      کامرس اور صنعت کے وزیر پیوش گوئل نے کہا کہ یہ گروپ طویل عرصے سے ایک قابل رسائی اور موثر خصوصی حفاظتی طریقہ کار (SSM) کا مطالبہ کر رہا ہے تاکہ درآمدی اضافے اور قیمتوں میں کمی کی وجہ سے ترقی یافتہ ممبران کی طرف سے بھاری سبسڈی کی وجہ سے غیر مستحکم اور تباہ کن اثرات کو حل کیا جا سکے۔

      انہوں نے کہا کہ میں اس بات پر زور دیتا ہوں کہ ہم سب کو اس اتحاد کی ہم آہنگی کو برقرار رکھنے کے لیے اجتماعی طور پر کام کرنا چاہیے اور دوسرے ہم خیال ممالک تک پہنچ کر اسے مزید مضبوط کرنا چاہیے (اور) منصفانہ، متوازن اور ترقی پر مبنی نتائج کے لیے ان کی حمایت حاصل کرنا چاہیے، جس میں پبلک اسٹاک ہولڈنگ اور ایس ایس ایم کا مستقل حل شامل ہونا چاہیے

      وزیر تجارت 12ویں ڈبلیو ٹی او وزارتی کانفرنس کے موقع پر G-33 وزارتی اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔ ہندوستان ایس ایس ایم کے لیے تیار ہے، جس کا مقصد غریب اور پسماندہ کسانوں کو درآمدات میں اضافے یا قیمتوں میں زبردست گراوٹ سے بچانا ہے۔

      یہ بھی پڑھئے: یوگی سرکار کی بلڈوزر کارروائی کے خلاف جمعیۃ علما ہند کی سپریم کورٹ میں عرضی

      ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ بہتر ہوتا اگر ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن (WTO) کے ڈائریکٹر جنرل ترقی پذیر دنیا کے تحفظات سننے کے لیے اس اجلاس میں موجود ہوتے۔ میں سمجھتا ہوں کہ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ اپنے مختصر تبصروں میں اس نے ایک ایسے فیصلے کا حوالہ دیا جو ایک بار نہیں، دو بار نہیں بلکہ تین بار کیا گیا ہے، محض تکرار کے طور پر ایسا کیا گیا ہے ۔

      یہ بھی پڑھئے: Rahul Gandhi نیشنل ہیرالڈ کیس میں ED کے دفتر پہنچے، ای ڈی نے پوچھے یہ 8 سوال



      انھوں نے کہا کہ میں چیئر سے گزارش کروں گا کہ اگر میرے تمام دوست متفق ہوں تو اس پر عمل کیا جائے۔ گوئل نے مزید کہا کہ یہ کوئی اعلان نہیں ہے بلکہ ایک فیصلہ ہے جو 2013 میں کیا گیا تھا، پھر 2015 میں اور پھر دوبارہ 2018 میں بھی یہی فیصلہ کیا گیا تھا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: