உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    حکومت کے رواں مالی سال کے واجبات پچھلے سہ ماہی کے مقابلے 4 فیصد بڑھے، 125 لاکھ کروڑ روپے سے متجاوز

    مجموعی واجبات اُچھل کر ستمبر سہ ماہی میں 125،71،747 کروڑ روپے پہنچ گئے ہیں۔ اس میں حکومت کے تحت آنے والے واجبات شامل ہیں۔ جون کی سہ ماہی کے آخر میں مجموعی واجبات 1,20,91,193 کروڑ روپے تھے۔

    مجموعی واجبات اُچھل کر ستمبر سہ ماہی میں 125،71،747 کروڑ روپے پہنچ گئے ہیں۔ اس میں حکومت کے تحت آنے والے واجبات شامل ہیں۔ جون کی سہ ماہی کے آخر میں مجموعی واجبات 1,20,91,193 کروڑ روپے تھے۔

    مجموعی واجبات اُچھل کر ستمبر سہ ماہی میں 125،71،747 کروڑ روپے پہنچ گئے ہیں۔ اس میں حکومت کے تحت آنے والے واجبات شامل ہیں۔ جون کی سہ ماہی کے آخر میں مجموعی واجبات 1,20,91,193 کروڑ روپے تھے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: حکومت کے مجموعی واجبات رواں مالی سال 2021-22 کے ستمبر کی سہ ماہی میں بڑھ کر 125.71 لاکھ کروڑ روپے تک پہنچ گئے ہیں جب کہ جون کی سہ ماہی میں یہ 120.91 لاکھ کروڑ روپے تھی۔ پبلک ڈیبٹ مینجمنٹ رپورٹ کے مطابق اضافہ 2021-22 کی جولائی۔ ستمبر سہ ماہی میں آدھار پر 3.97 فیصد ہے۔

      عوامی قرض کی حصہ دار ہوئی کم
      مجموعی واجبات اُچھل کر ستمبر سہ ماہی میں 125،71،747 کروڑ روپے پہنچ گئے ہیں۔ اس میں حکومت کے تحت آنے والے واجبات شامل ہیں۔ جون کی سہ ماہی کے آخر میں مجموعی واجبات 1,20,91,193 کروڑ روپے تھے۔ وزارت فائنانس کی منگل کو جاری اس رپورٹ کے مطابق ستمبر سہ ماہی میں مجموعی بقایہ واجبات میں پبلک لون کی حصہ داری 91.15 فیصد تھی۔ جون سہ ماہی میں یہ 91.60 فیصد تھی۔ اس میں سے 30 فیصد سے زیادہ سیکیوریٹی کی میچیوریٹی 5 سال سے کم کی ہے۔ رپورٹ کے مطابق، ستمبر سہ ماہی کے دوران ایسی سیکیورٹیز کی سپلائی میں اضافے کے نتیجے میں سیکنڈری مارکیٹ میں سرکاری سیکیورٹیز پر منافع میں اضافہ ہوا ہے۔

      ستمبر سہ ماہی میں GDP تھا 8 فیصد سے زیادہ
      وہیں اسی سہ ماہی یعنی مالی سال 2021-22 کی دوسری سہ ماہی میں ملک کی جی ڈی پی گروتھ 8.4 فیصد رہی۔ آفیشل اعدادوشمار کے مطابق، رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں جی ڈی پی گروتھ لیول 20.1 فیصد رہا تھا۔ وہیں پچھلے سال اپریل جون سہ ماہی میں اضافی سطح میں 24.4 فیصد کی گراوٹ آئی تھی۔ قومی شماریات دفتر (NSO) کے اعدادوشمار کے مطابق پچھلے مالی سال 2020-21 کی جولائی۔ستمبر سہ ماہی میں جی ڈی پی گروتھ لیول میں 7.4 فیصد کی گراوٹ آئی تھی۔ حکومت نے پچھلے سال کوویڈ-19 وبا کی روک تھام کے لئے ملک بھر میں ’لاک ڈاون‘ لگایا تھا۔ جس کے بعد حکومت نے اکنامی کو تیزی دینے کے لئے خرچ بڑھانے اور آسان شرح پر قرض دینے پر زور دیا جس سے مانگ کو بڑھایا جاسکے۔

      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: