ہوم » نیوز » معیشت

ایس بی آئی اے ٹی ایم قواعد پر انکم ٹیکس اور ایکسس بینک چارجز سے متعلق 5 اہم تبدیلیاں، جانیے تفصیلات

سب سے بڑی تبدیلی حکومت کی طرف سے آئی ہے جو گذشتہ دو مالی سال میں انکم ٹیکس ریٹرن (ITR) داخل کرنے والے افراد کے لئے ایک اعلی ٹی ڈی ایس نافذ کرنے والی ہے۔ یہ نیا قاعدہ فائنانس ایکٹ 2021 (Finance Act, 2021) کے دائرے میں آئے گا اور اس کا اطلاق ان ٹیکس دہندگان پر بھی ہوگا جن کی ٹی ڈی ایس کٹوتی ہر سال 50000 روپے سے تجاوز

  • Share this:
ایس بی آئی اے ٹی ایم قواعد پر انکم ٹیکس اور ایکسس بینک چارجز سے متعلق 5 اہم تبدیلیاں، جانیے تفصیلات
سب سے بڑی تبدیلی حکومت کی طرف سے آئی ہے جو گذشتہ دو مالی سال میں انکم ٹیکس ریٹرن (ITR) داخل کرنے والے افراد کے لئے ایک اعلی ٹی ڈی ایس نافذ کرنے والی ہے۔ یہ نیا قاعدہ فائنانس ایکٹ 2021 (Finance Act, 2021) کے دائرے میں آئے گا اور اس کا اطلاق ان ٹیکس دہندگان پر بھی ہوگا جن کی ٹی ڈی ایس کٹوتی ہر سال 50000 روپے سے تجاوز

جولائی 2021 سے بینکنگ کے شعبے میں تبدیلیاں رونما ہونے والی ہیں۔ حکومت ٹیکس دہندگان کو ٹیکس کی کٹوتی کی اعلی شرحوں کے ساتھ نئے قواعد وضع کرسکتی ہے۔ اسٹیٹ بینک آف انڈیا (State Bank of India ) نے اگلے ماہ سے لگائے جانے والے نظر ثانی شدہ چارجز متعارف کرائے ہیں جو اس سے خودکار ٹیلر مشینوں (ATMs) اور شاخوں سے نقد رقم نکالنے کے الزامات میں اضافہ کرے گا۔ چیک بک کے استعمال پر لگائے جانے والے چارجز سے لیکر ایکسس بینک کے ایس ایم ایس چارجز تک اور سنڈیکیٹ بینک (Syndicate Bank ) کے آئی ایف ایس سی کوڈز میں بھی تبدیلی کی جائے گی۔ جو کہ حسب ذیل ہے:


1) ٹی ڈی ایس کی شرح میں بدلاؤن (TDS Rates to Change):

سب سے بڑی تبدیلی حکومت کی طرف سے آئی ہے جو گذشتہ دو مالی سال میں انکم ٹیکس ریٹرن (ITR) داخل کرنے والے افراد کے لئے ایک اعلی ٹی ڈی ایس نافذ کرنے والی ہے۔ یہ نیا قاعدہ فائنانس ایکٹ 2021 (Finance Act, 2021) کے دائرے میں آئے گا اور اس کا اطلاق ان ٹیکس دہندگان پر بھی ہوگا جن کی ٹی ڈی ایس کٹوتی ہر سال 50000 روپے سے تجاوز کر جاتی ہے۔ روشن پہلو پر ٹیکس دہندگان کو مالی سال 20۔21 (FY20-21) کی آخری سہ ماہی کے لئے اپنا ٹی ڈی ایس فائل کرنے کا وقت دیا جائے گا۔ اس کے لئے آخری تاریخ 15 جولائی ہے۔


نیا انکم ٹیکس پورٹل ٹیکس دہندگان کا اپنا پین کارڈ نمبر استعمال کرکے کھڑے ہونے کی جانچ کرنے کی سہولت فراہم کرے گا۔ اگر ٹی ڈی ایس فائل نہیں کیا گیا ہے تو موجودہ ٹی ڈی ایس سے 5 فیصد کی شرح سے کٹوتی دگنی ہوگی۔

2) ایس بی آئی کے اے ٹی ایمز اور شاخوں سے واپسی کے معاوضے (Withdrawal Charges from SBI ATMs and Branches):

ان تمام صارفین کے لئے جو کم سے کم بیلنس اکاؤنٹ یا بیسک سیونگس بینک ڈپازٹ (بی ایس بی ڈی) اکاؤنٹ رکھتے ہیں۔ ایس بی آئی کے اے ٹی ایم اور برانچوں سے واپسی کے لئے چارجز عائد کیے جائیں گے۔ اکاؤنٹ رکھنے والے بینک کے اے ٹی ایم اور شاخوں سے چار مفت نقد رقم نکالنے کے اہل ہوں گے۔ چار بار مفت میں رقم نکالنے کے بعد ایس بی آئی ہر 15 سے 75 روپے کے علاوہ سامان اور خدمات ٹیکس (جی ایس ٹی) وصول کرے گا۔ یہ کسی بھی اضافی ویلیو ایڈڈ خدمات کے لیے کیا جاتا ہے۔

3) چیک بک کے استعمال کے معاوضے (Cheque Book Usage Charges):

بچت کھاتوں والے ایس بی آئی صارفین کو یکم جولائی سے محدود مفت چیک - لیف استعمال کے ساتھ مقابلہ کرنا ہوگا۔ ایس بی آئی کے نئے مینڈیٹ کے مطابق اکاؤنٹ رکھنے والے اگلے مہینے سے پہلے دس چیک کا ہی استعمال کرسکتے ہیں۔ یہ پورے مالی سال کے لئے مفت سمجھے جائیں گے۔ تاہم اضافی سرگرمیوں کے لیے چارجز عائد ہوں گے۔ اس کے بعد کے 10 لیوس کے لئے اکاؤنٹ ہولڈرز سے 40 روپے کے علاوہ جی ایس ٹی اور 25 لیوس کے لئے ان سے 75 روپے کے علاوہ جی ایس ٹی وصول کیا جائے گا۔

ایمرجنسی چیک بک کے استعمال سے 10 لیوس پر 50 روپے کے علاوہ جی ایس ٹی لگے گا۔ اگرچہ یہ وسیع قواعد صرف گوشواروں کے آس پاس ہیں ، تاہم سینئر شہریوں کے لئے ابھی تک ایسا کوئی مینڈیٹ جاری نہیں کیا گیا ہے۔
4) سنڈیکیٹ بینک کے نئے آئی ایف ایس سی کوڈز جاری کیے جائیں (Syndicate Bank’s New IFSC Codes to be Issued):
سنڈیکیٹ بینک کے صارفین کو اپنے اکاؤنٹس کے لئے نئے آئی ایف ایس سی کوڈ حاصل کرنے کی ضرورت ہوگی۔ یہ تبدیلی سنڈیکیٹ بینک اور کینارا بینک کے درمیان انضمام کی وجہ سے سامنے آئی ہے۔

5) ایکسس بینک نے صارفین کو تبدیل کرنے کے الزامات کے بارے میں انتباہ کیا (AXIS Bank Alerts Customers of Charges to Change):

ایکسس بینک نے اپنے اکاؤنٹ ہولڈرز کے لئے بچت بینک اکاؤنٹ سے متعدد چارجز بڑھائے ہیں۔ جبکہ مئی سے ابتدائی تبدیلیاں لاگو کردی گئیں۔ نئی تبدیلیاں یکم جولائی سے عمل میں لائی جائے گی۔ بینک نے اپنے اے ٹی ایم سے نقد رقم نکالنے کے پچھلے مفت حد سے کہیں زیادہ اضافہ کردیا ہے۔

اس نے اپنے بچت کھاتوں کے لیے کم سے کم توازن کی ضروریات میں بھی اضافہ کیا ہے۔ مزید برآں ٹیلی کام ریگولیٹری اتھارٹی کے ذریعہ متعارف کرائے جانے والے قواعد و ضوابط کی وجہ سے ایکسس بینک نے بھی صارفین کو ایس ایم ایس کے معاوضے بحال کردیئے۔ پروموشنل ٹیکسٹس یا OTP پیغامات کو چھوڑ کر ہر ایس ایم ایس الرٹ پر صارفین سے 25 پیسے وصول کیے جائیں گے۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: Jul 01, 2021 09:48 PM IST