உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کیا اب ٹکنالوجی کمپناں بھی خبریں نشر کریں گی؟ معاوضہ سے متعلق نئے ضوابط کی ہوسکتی ہے پہل

    تکنیکی کاروبار پھیلے ہوئے ہیں

    تکنیکی کاروبار پھیلے ہوئے ہیں

    خبر رساں ادارے برسوں سے شکایت کر رہے ہیں کہ کس طرح انٹرنیٹ کمپنیاں سرچ کے جانے کے نتائج یا دیگر فیچرز میں مواد کو بغیر کسی معاوضے کے استعمال کرتی ہیں، کیونکہ وہ گوگل اور فیس بک جیسے آن لائن ایگریگیٹرز کو اشتہاری آمدنی سے محروم کر رہی ہیں۔

    • Share this:
      آسٹریلیا کا میڈیا ادارہ aceAustralia کے ’’نیوز میڈیا اینڈ ڈیجیٹل پلیٹ فارمز مینڈیٹری بارگینگ کوڈ‘‘ نامی رپورٹ میں بڑی ٹکنالوجی کمپنیوں کے لیے نیوز پبلشرز کو ان کے پلیٹ فارم پر لنکس دکھانے کے لیے ادائیگی کرنے کو لازمی قرار دیا ہے۔ اس نظام کے نفاذ کی عالمی سطح پر جانچ پڑتال کی گئی ہے اور ہندوستان بھی شاید اسی طرح کی کاروائی کرنے کے بارے میں سوچ رہا ہے۔

      حال ہی میں ریاستی وزیر برائے آئی ٹی اور الیکٹرانکس راجیو چندر شیکھر نے ٹائمز آف انڈیا کو بتایا کہ حکومت ایک قانون پاس کرنے کے بارے میں سوچ رہی ہے جس کے تحت ٹیک کمپنیوں جیسے گوگل، میٹا، ٹویٹر، ایپل، مائیکروسافٹ اور دیگر کو ہندوستانی اخبارات اور ڈیجیٹل خبریں دینے کی ضرورت ہوگی۔ پبلشرز اپنے اصل مواد کو استعمال کرنے کے بدلے میں اپنی اشتھاراتی آمدنی میں کمی کرتے ہیں۔

      انہوں نے کہا کہ ڈیجیٹل اشتہارات پر مارکیٹ کی طاقت جو اس وقت بگ ٹیک کی بڑی کمپنیوں کے ذریعہ استعمال کی جارہی ہے، جو ہندوستانی میڈیا کمپنیوں کو نقصان کی حالت میں رکھتی ہے، یہ ایک ایسا مسئلہ ہے جس کا سنجیدگی سے جائزہ لیا جا رہا ہ۔ یہ نئی قانونی سازی اور قواعد کے تناظر میں ہوگا۔

      تاہم یہ قابل ذکر ہے کہ آسٹریلیا کے علاوہ کئی یوروپی ممالک نے بھی اسی طرح کی قانون سازی کی ہے جس میں اس طرح کی ٹیک کارپوریشنز کو مواد کے پروڈیوسروں کو ان کے مواد کو استعمال کرنے اور تلاش کے نتائج میں اس کی تشہیر کرنے کے لیے مناسب معاوضہ دینے کی ضرورت ہے۔

      دریں اثنا ہندوستان کے معاملے میں ڈیجیٹل نیوز پبلشرز ایسوسی ایشن (DNPA) اور انڈین نیوز پیپر سوسائٹی (INS) نے کمپیٹیشن کمیشن آف انڈیا (CCI) کے پاس شکایت درج کروائی، جس نے پہلے اس معاملے کو زیربحث لاتے ہوئے گوگل پر اس کا غلط استعمال کرنے کا الزام لگایا۔ خبروں کے پبلشرز پر غیر منصفانہ شرائط عائد کرنے کے لیے اس کا استعمال ہوسکتا ہے۔

      چندر شیکھر نے کہا کہ نیوز پبلشرز کے پاس کوئی سودے بازی کی طاقت نہیں ہے، جسے قانون سازی سے حل کیا جانا چاہیے کیونکہ یہ ایک اہم مسئلہ ہے۔ مزید برآں ان کا خیال ہے کہ موجودہ آئی ٹی قانون میں ترامیم کے حصے کے طور پر ریگولیٹری مداخلتوں کے ذریعے اس اصول کو لاگو کیا جا سکتا ہے۔

      بڑی ٹیک میں لگام لگائیں:

      مزید پڑھیں:

      PV Sindhu: پی وی سندھو نے جیتا پہلا سنگاپور اوپن ٹائٹل! چین کی وانگ ژی یی کو دی کراری شکست

      Raveena Tandon:میک اپ کرواتی ہوئی روینہ ٹنڈن کو دیکھ کر ڈر جائیں گے آپ

      Air Inda: ایئرانڈیاکی کالی کٹ-دبئی فلائٹ میں گڑبڑ، کیبن کی بدبوبنی مسقط میں لینڈنگ کی وجہ

      تکنیکی کاروبار پھیلے ہوئے ہیں، دولت مند ہوئے ہیں، اور جدید زندگی کے بہت سے پہلوؤں میں مزید جڑے ہوئے ہیں کیونکہ خبر رساں ادارے ڈیجیٹل دور میں گرتے ہوئے وسائل کو محدود کرنے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔ بہت سے لوگ سوچتے ہیں کہ کیا بگ ٹیک کو صحافت کے لیے ادائیگی کرنی چاہیے جو وہ استعمال کرتے ہیں۔

      مزید پڑھیں: Covid-19: ہندوستان نے کی پھر سے تاریخ رقم! 200 کروڑ سے بھی زیادہ کووڈ ویکسینیشن

      نائب صدر جمہوریہ الیکشن: جگدیپ دھنکڑ کے خلاف کون ہوں گے اپوزیشن امیدوار، آج ہوگا فیصلہ

      خبر رساں ادارے برسوں سے شکایت کر رہے ہیں کہ کس طرح انٹرنیٹ کمپنیاں سرچ کے جانے کے نتائج یا دیگر فیچرز میں مواد کو بغیر کسی معاوضے کے استعمال کرتی ہیں، کیونکہ وہ گوگل اور فیس بک جیسے آن لائن ایگریگیٹرز کو اشتہاری آمدنی سے محروم کر رہی ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: