உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کیا Paytm Payments Bank آپ کا ڈیٹا چین بھیج رہا ہے؟ کمپنی کی جانب سے ڈیٹا لیک کے دعووں کی تردید، لیکن کیا ہے حقیقت؟

    Youtube Video

    اس معاملے پر تبصرہ کرتے ہوئے پے ٹی ایم پیمنٹس بینک کے ترجمان نے ڈیٹا لیک ہونے کے دعووں کی تردید کی اور کہا کہ پے ٹی ایم پیمنٹس بینک کے بارے میں بلومبرگ کی حالیہ رپورٹ جس میں چینی فرموں کے ذریعہ ڈیٹا لیک ہونے کا دعویٰ کیا گیا ہے وہ مکمل طور پر غلط اور محض سنسنی خیز ہے۔

    • Share this:
      پچھلے ہفتے ریزرو بینک آف انڈیا (RBI) نے پے ٹی ایم پیمنٹس بینک (Paytm Payments Bank) کو ہدایت دی تھی کہ وہ فوری طور پر نئے صارفین کو آن بورڈنگ سے روک دے۔ کیونکہ ’بینک میں مشاہدہ کیے گئے کچھ مواد کی نگرانی کے خدشات درپیش ہیں‘۔ تازہ ترین بلومبرگ رپورٹ سے پتہ چلتا ہے کہ ادائیگیوں کا بینک چینی اداروں کے ساتھ معلومات کا اشتراک کر رہا تھا، جس کی ہنوز تصدیق نہیں کی جاسکی۔ پے ٹی ایم پیمنٹس بینک میں بالواسطہ حصہ داری کا مالک ہے، جو RBI کے رہنما خطوط کے خلاف ہے۔ رپورٹ میں اس قسم کا ڈیٹا ظاہر نہیں کیا گیا جو چین کے ساتھ شیئر کیا گیا ہو۔

      آر بی آئی کے رہنما خطوط کے مطابق ملک میں کام کرنے والی ادائیگی پر مبنی تمام کمپنیوں کو یہ یقینی بنانا چاہیے کہ لین دین کا ڈیٹا خصوصی طور پر مقامی سرورز پر محفوظ ہے۔ بلومبرگ کی رپورٹ پے ٹی ایم پیمنٹس بینک کے لیے دوسری صورت میں تجویز کرتی ہے۔

      Paytm ڈیٹا لیک کے دعووں کی تردید کرتا ہے:

      اس معاملے پر تبصرہ کرتے ہوئے پے ٹی ایم پیمنٹس بینک کے ترجمان نے ڈیٹا لیک ہونے کے دعووں کی تردید کی اور کہا کہ پے ٹی ایم پیمنٹس بینک کے بارے میں بلومبرگ کی حالیہ رپورٹ جس میں چینی فرموں کے ذریعہ ڈیٹا لیک ہونے کا دعویٰ کیا گیا ہے وہ مکمل طور پر غلط اور محض سنسنی خیز ہے۔

      مزید پڑھیں: Bank Holidays in March: بینک اگلے ہفتے لگاتار 4 دن کے لیے بند رہیں گے، مکمل فہرست یہ ہے

      انھوں نے کہا کہ پے ٹی ایم پیمنٹس بینک کو مکمل طور پر مقامی بینک ہونے پر فخر ہے اور ڈیٹا لوکلائزیشن پر RBI کی ہدایات کی پوری طرح تعمیل کرتا ہے۔ بینک کا تمام ڈیٹا ملک کے اندر رہتا ہے۔ ہم ڈیجیٹل انڈیا پہل کے سچے ماننے والے ہیں، اور ملک میں مالی شمولیت کو آگے بڑھانے کے لیے پرعزم ہیں۔ گزشتہ ہفتے مرکزی بینک نے ادائیگیوں کے بینک سے ایک جامع آئی ٹی آڈٹ کرنے کے لیے ایک بیرونی فرم کا تقرر کرنے کو بھی کہا ہے۔

      RBI کی Paytm Payments Bank کو ہدایت:

      گزشتہ ہفتے جاری کردہ آر بی آئی کی ہدایت میں نوٹ کیا گیا کہ اپنی طاقت کا استعمال کرتے ہوئے بینکنگ ریگولیشن ایکٹ 1949 کے سیکشن 35A کے تحت پی ٹی ایم پیمنٹس بینک لمیٹڈ کو ہدایت دی جاتی ہے کہ وہ فوری طور پر نئے صارفین کی آن بورڈنگ کو روک دے۔ مرکزی بینک نے گزشتہ ہفتے جاری کردہ ایک بیان میں مزید کہا کہ Paytm Payments Bank Ltd کی طرف سے نئے صارفین کی آن بورڈنگ آئی ٹی آڈیٹرز کی رپورٹ کا جائزہ لینے کے بعد ریزرو بینک آف انڈیا (RBI) کی طرف سے دی جانے والی مخصوص اجازت سے مشروط ہوگی۔

      اسی دوران پے ٹی ایم پیمنٹس بینک پلیٹ فارم نے یقین دلایا کہ وہ فی الحال آر بی آئی کی ہدایات کی تعمیل کے لیے ضروری اقدامات کر رہا ہے۔ پے ٹی ایم پیمنٹس بینک ادائیگیوں کے ترجمان نے کہا کہ ہم آپ کو یقین دلاتے ہیں کہ RBI کی حالیہ ہدایت ہمارے موجودہ صارفین پر کسی بھی طرح سے اثر انداز نہیں ہوگی اور وہ بغیر کسی رکاوٹ کے ہماری بینکنگ خدمات کا استعمال جاری رکھ سکتے ہیں، ہم ضروری اقدامات کر رہے ہیں۔ آر بی آئی کی ہدایات کی تعمیل کرنے اور اپنے صارفین کو ہونے والی کسی بھی قسم کی تکلیف کو کم کرنے کے لیے پرعزم ہے۔

      مزید پڑھیں: Deliveroo: عالمی فوڈ ڈیلیوری کمپنی ڈیلیورو نے حیدرآباد میں قائم کیا اپنا سنٹر، برطانیہ سے باہر ہے سب سے بڑا مرکز


      Paytm Payments Bank کی آفیشل ویب سائٹ کے مطابق اس پلیٹ فارم میں فی الحال 300 ملین سے زیادہ بٹوے اور 60 ملین بینک اکاؤنٹس ہیں۔ موجودہ صارفین اب بھی لین دین کے لیے ادائیگیوں کے پلیٹ فارم کو استعمال کرنے کے قابل ہیں
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: