اپنا ضلع منتخب کریں۔

    NPCI کے اس فیصلے سے UPI ایپس کو ملے گی راحت؟ جانیے فون پے اور گوگل پے کو کیسے ہوگا فائدہ

    NPCI کے اس فیصلے سے UPI ایپس کو ملے گی راحت؟ جانیے فون پے اور گوگل پے کو کیسے ہوگا فائدہ

    NPCI کے اس فیصلے سے UPI ایپس کو ملے گی راحت؟ جانیے فون پے اور گوگل پے کو کیسے ہوگا فائدہ

    این پی سی آئی، یونیفائیڈ پیمنٹس انٹرفیس (یو پی آئی) چلاتا ہے، جس کا استعمال خریداری کرتے وقت خریداروں اور بیوپاریوں کے درمیان رئیل ٹائم ادائیگی کے لیے کیا جاتا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • New Delhi, India
    • Share this:
      نیشنل پیمنٹ کارپوریشن آف انڈیا(این پی سی آئی) نے جمعہ کو تھرڈ پارٹی سروس پرووائیڈرس کے لیے ڈیجیٹل ادائیگی لین دین میں 30 فیصد والیوم کیپ حاصل کرنے کی حد دو سال بڑھا کر دسمبر 2024 تک کردی ہے۔ این پی سی آئی کے اس فیصلے سے تھرڈ پارٹی ایپ فراہم کرنے والوں کو راحت ملنے کی امید ہے۔ گوگل پے اور فون پے جیسے تھرڈ پارٹی ایپ پرووئیڈرس یعنی TPAP کو اس فیصلے سے کافی راحت مل سکتی ہے۔ یو پی آئی پر مبنی لین دین میں ان دونوں ایپ کا ایک بڑا حصہ ہے۔

      تھرڈ پارٹی ایپ فراہم کرنے والے اداروں (TPAPs) کے لیے یہ اقدام راحت کے طور پر سامنے آ سکتا ہے۔ یہ مطالبہ کافی عرصے سے کیا جا رہا تھا۔ ڈیجیٹل ادائیگیوں میں 30 فیصد ٹرانزیکشن کی حد کو حاصل کرنے کے لیے آخری تاریخ کو دسمبر 2024 تک بڑھانا ایپس کو اپنی تیاری مکمل کرنے کے لیے کافی وقت مل جائے گا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      زیادہ سود نہیں وصول پائیں گے ڈیجیٹل پلیٹ فارم، آربی آئی کے ترمیمی گائیڈلائنس آج سے لاگو

      یہ بھی پڑھیں:
      پرنئے اور رادھیکارائے نےRRPRHکے ڈائریکٹر کے عہدے سے دیا استعفیٰ، بورڈ میں انہیں کیاگیاشامل

      ایئرانڈیا اور وستارا کا ہوگا انضمام، سنگاپور ایئرلائنس اور ٹاٹا سنس مرجر پر ہوئیں راضی

      یو پی آئی ایپس کو بڑی راحت
      این پی سی آئی، یونیفائیڈ پیمنٹس انٹرفیس (یو پی آئی) چلاتا ہے، جس کا استعمال خریداری کرتے وقت خریداروں اور بیوپاریوں کے درمیان رئیل ٹائم ادائیگی کے لیے کیا جاتا ہے۔ نومبر 2020 میں این پی سی آئی نے ایپس کو 30 فیصد کی سطح حاصل کرنے کا حکم دیا تھا۔ یہ کیپ یکم جنوری 2021 سے لاگو ہونا تھا، بعد میں 5 نومبر 2020 کو مزید حصہ داری رکھنے والے ٹی پی اے پی کو مرحلہ وار طریقے سے حد حاصل کرنے کے لیے دو سال کا وقت دیا گیا تھا۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: