உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Pakistan: پاکستان میں پیٹرولیم سبسڈی واپس لینے پرہوگا غور، جلد آئی ایم ایف سے مذاکرات طئے

    آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی نے شہباز حکومت کو پٹرولیم مصنوعات پر بڑھتی ہوئی سبسڈی سے آگاہ کر دیا ہے۔

    آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی نے شہباز حکومت کو پٹرولیم مصنوعات پر بڑھتی ہوئی سبسڈی سے آگاہ کر دیا ہے۔

    وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف جو کہ وزیراعظم شہباز شریف کے ہمراہ لندن میں تھے۔ انھوں نے پارٹی کے سربراہ نواز شریف سے ملاقات کی۔ یہ بات چیت ملک کو اس سنگین اقتصادی حالت پر قابو پانے میں مدد کے لیے حکمت عملی وضع کرنے میں مدد فراہم کرے گی۔

    • Share this:
      پاکستان کے وزیر اعظم شہباز شریف (Pakistan Prime Minister Shehbaz Sharif) کی زیرقیادت حکومت کی جانب سے پیٹرول پر دی جانے والی سبسڈی بتدریج ختم کرنے کا امکان ہے اور اس کے ساتھ ہی اگلے پندرہ ہفتے تک پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ہوگا۔ جیو ٹی وی کے مطابق ذرائع کے مطابق 6 بلین امریکی ڈالر کے قرضہ پروگرام کی بحالی کے لیے پاکستان کے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ مذاکرات سے قبل، شہباز حکومت اتوار کو ایندھن کی سبسڈی ترک کر دے گی۔

      وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف جو کہ وزیراعظم شہباز شریف کے ہمراہ لندن میں تھے۔ انھوں نے پارٹی کے سربراہ نواز شریف سے ملاقات کی۔ یہ بات چیت ملک کو اس سنگین اقتصادی حالت پر قابو پانے میں مدد کے لیے حکمت عملی وضع کرنے میں مدد فراہم کرے گی۔ آصف نے کہا کہ جاری مالیاتی بحران سے نمٹنے کے لیے اگلے 48 گھنٹوں میں ’بڑے فیصلے‘ کیے جائیں گے۔

      فی الحال حکومت پٹرول پر 29.60 روپے فی لیٹر سبسڈی فراہم کر رہی ہے۔ اس معاملے سے باخبر ذرائع کے مطابق اضافے کے بعد پیٹرول کی قیمتوں میں اضافہ نہ ہونے کی صورت میں 16 مئی سے ایندھن پر سبسڈی 45.14 روپے ہو گی۔ مزید برآں اگر حکومت سبسڈی فراہم نہ کرنے کا انتخاب کرتی ہے اور واپس لے لیتی ہے تو پیٹرول کی قیمت حیرت انگیز طور پر 190 روپے لیٹر تک پہنچ جائے گی۔

      میڈیا آؤٹ لیٹ کے مطابق اسی طرح حکومت ڈیزل پر 73.04 روپے فی لیٹر اور مٹی کے تیل پر 43.16 روپے سبسڈی دے رہی ہے۔ اگر سبسڈی ختم کر دی جاتی ہے تو ڈیزل اور مٹی کے تیل کی قیمتیں 230 روپے اور 176 روپے فی لیٹر تک پہنچ جائیں گی۔ اگر ڈیزل اور مٹی کے تیل کی قیمتوں میں اضافہ نہیں کیا جاتا ہے، تو حکومت کو 16 مئی 2022 یعنی آج سے مصنوعات پر بالترتیب 85.85 روپے اور 50.44 روپے فی لیٹر سبسڈی دینا ہوگی۔

      یہ بھی پڑھیں: Lalitpur Rape Case، کس کی ذمے داری ہوگی جب حفاظت کرنے والے ہی بن جائیں درندے؟

      مزید برآں لائٹ ڈیزل کے لیے حکومت 64.70 روپے فی لیٹر سبسڈی فراہم کر رہی ہے اور اگر قیمتیں برقرار رہتی ہیں تو یہ پیر سے بڑھ کر 68 روپے ہو جائے گی۔ لائٹ ڈیزل 186.31 روپے فی لیٹر پر فروخت کیا جائے گا اگر حکومت اس پر تمام سبسڈی واپس لے لیتی ہے۔

      مزید پڑھیں: کانپور کے اسلامیہ مدرسے کو غیر قانونی بتاتے ہوئے چلایا گیا بلڈوزر، روکتے رہ گئے لوگ



      آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (Oil and Gas Regulatory Authority (OGRA)) نے شہباز حکومت کو پٹرولیم مصنوعات پر بڑھتی ہوئی سبسڈی سے آگاہ کر دیا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: