உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پی ایف واپسی کے قواعد میں تبدیلی، فوری طور پر ایک لاکھ روپے ایڈوانس کیسے کریں حاصل؟

    ملازمین کو فنڈز واپس لینے سے قبل اسپتال میں داخل ہونے یا اس کے طریقہ کار کی لاگت کے بارے میں بھی کوئی تخمینہ دینے کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ معلومات ایک سرکلر کی روشنی میں سامنے آئی ہے جو ایمپلائز ’پروویڈنٹ فنڈ آرگنائزیشن (Employee Provident Fund) کے ذریعہ جاری کی گئی۔ تنظیم کی طرف سے یہ سرکلر پی ایف اسکیم کے تحت ملازمین کو میڈیکل ہنگامی صورت حال کی صورت میں میڈیکل ایڈوانس دینے کے معاملے پر نظرثانی شدہ ہے۔

    ملازمین کو فنڈز واپس لینے سے قبل اسپتال میں داخل ہونے یا اس کے طریقہ کار کی لاگت کے بارے میں بھی کوئی تخمینہ دینے کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ معلومات ایک سرکلر کی روشنی میں سامنے آئی ہے جو ایمپلائز ’پروویڈنٹ فنڈ آرگنائزیشن (Employee Provident Fund) کے ذریعہ جاری کی گئی۔ تنظیم کی طرف سے یہ سرکلر پی ایف اسکیم کے تحت ملازمین کو میڈیکل ہنگامی صورت حال کی صورت میں میڈیکل ایڈوانس دینے کے معاملے پر نظرثانی شدہ ہے۔

    • Share this:
      وہ ملازمین جو اپنے یپملائی پروویڈنٹ فنڈ (EPF) کے لئے رجسٹرڈ ہیں، وہ میڈیکل ایڈوانس کے بطور ایک لاکھ روپے کے فنڈز کے اہل ہیں۔ اس کو ہنگامی طبی علاج یا اسپتال میں داخل کرانے کے لئے ان کے جمع کارپس کے تحت نکالا جاسکتا ہے۔

      ملازمین کو فنڈز واپس لینے سے قبل اسپتال میں داخل ہونے یا اس کے طریقہ کار کی لاگت کے بارے میں بھی کوئی تخمینہ دینے کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ معلومات ایک سرکلر کی روشنی میں سامنے آئی ہے جو ایمپلائز ’پروویڈنٹ فنڈ آرگنائزیشن (Employee Provident Fund) کے ذریعہ جاری کی گئی۔ تنظیم کی طرف سے یہ سرکلر پی ایف اسکیم کے تحت ملازمین کو میڈیکل ہنگامی صورت حال کی صورت میں میڈیکل ایڈوانس دینے کے معاملے پر نظرثانی شدہ ہے۔

      نظرثانی شدہ اور منظم طرز کے سرکلر میں اس دائرہ کار کی نشاندہی کی گئی ہے جس کے اندر طبی ضرورت کی تکمیل ہوسکے یہاں تک کہ علاج کی شرائط بھی جن کے تحت یہ دیا جائے گا۔ ان طبی شرائط میں کورونا کا علاج بھی شامل ہے۔

      سرکلر کے مطابق یہ پیشگی سنٹرل سروسز میڈیکل اٹینڈینٹ (CSMA) قوانین کے تحت آنے والے ملازمین کے ساتھ ساتھ مرکزی حکومت کی صحت کی اسکیم (CGHS) کے دائرہ کار میں آنے والے ملازمین پر بھی لاگو ہوگی۔

      سرکلر میں کہا گیا ہے کہ ’’جان لیوا بیماریوں میں کئی بار یہ ضروری ہوجاتا ہے کہ مریض کو اپنی جان بچانے کے لئے ہنگامی حالت میں فوری طور پر اسپتال میں داخل کرایا جائے اور ایسے حالات میں اسپتال سے اندازہ لگانا ممکن نہیں ہے۔ ایسے مریض کو ایمرجنسی میں داخل کرایا جاتا ہے تو اسپتال میں مریضوں کے لیے پیشگی سہولت کو ہموار کرنے کی ضرورت محسوس کی جاتی ہے۔ کبھی کبھی آئی سی یو میں جہاں تخمینہ پہلے سے معلوم نہیں ہوتا ہے، وہاں زائد رقم کی بھی ضرورت پڑتی ہے۔ لہذا کووڈ سمیت جان لیوا خطرناک بیماری کی وجہ سے ہنگامی اسپتال میں طبی امداد کے لئے مندرجہ ذیل طریقہ کار کو اختیار کیا جاسکتا ہے‘‘۔

      • میڈیکل ایڈوانس حاصل کرنے کے لئے مرحلہ وار عمل


      1) قواعد کے مطابق مریض کو کسی سرکاری / PSU / CGHS کے اسپتال میں علاج کے لئے داخل کرنا ضروری ہے۔ ایسی صورت میں جب مریض کو کسی ایمرجنسی کی وجہ سے نجی اسپتال میں داخل کیا گیا ہو تو وہ متعلقہ اتھارٹی سے اپیل کرسکتے ہیں کہ وہ اپنے معاملے کو قواعد میں نرمی کے قابل سمجھے تاکہ میڈیکل بلوں کی ادائیگی کی جاسکے۔ ایسے میں ایڈوانس نجی اسپتالوں کو بھی دیا جاسکتا ہے۔
      2) ملازم یا خاندان کے کسی فرد کو پیشگی دعوی کرنے کے لئے مریض کی طرف سے ایک خط پیش کرنا ہوتا ہے۔ اس میں لاگت کا تخمینہ لگانے کی ضرورت نہیں ہے، لیکن اس میں اسپتال اور مریض کی تفصیلات بتانے کی ضرورت ہے۔

      3) ایک لاکھ روپے تک کی میڈیکل ایڈوانس متعلقہ اتھارٹی مریض اور خاندان کے رکن کو دے سکتی ہے یا علاج کے عمل کو شروع کرنے کے لئے براہ راست اسپتال کے کھاتوں میں جمع کی جاسکتی ہے۔ یہ پیشگی فوری طور پر اسی کام کے دن فراہم کی جانی چاہئے۔ اگر نہیں تو یہ درخواست کی وصولی کے بعد درج ذیل کام کے دن دیا جانا چاہئے۔ اسپتال سے اخراجات کے تخمینے یا کسی اور دستاویزات کے لئے بھی اسے اصرار کے بغیر دیا جانا چاہئے۔ یہ ذمہ داری متعلقہ دفتر (ہیڈ آفس کے لئے ACC-ASD) پر عائد ہوتی ہے۔

      2) اگر ای پی ایف او کی واپسی کے اصولوں کے تحت اس کے علاج معالجے میں ایک لاکھ روپے ایڈوانس لاگت ہوجاتی ہے تو اس وقت تک ایک اضافی پیشگی ممکن ہوسکتی ہے۔ اس پیشگی کا تخمینہ وصول ہونے کے بعد ہی دیا جائے گا جو آنے والا ہے اور اس سے پہلے کہ مریض کو اسپتال سے فارغ کیا جائے۔ اضافی پیشگی رقم دی جائے گی، جو رقم ابتدائی طور پر دی گئی تھی۔

      5) ملازم یا خاندان کی کسی فرد کو چھٹی ہونے کے بعد 45 دن کے اندر اسپتال کا بل پیش کرنے کی ضرورت ہے۔ ای پی ایف کے قواعد کے مطابق اسپتال کا حتمی بل فٹ کرنے کے لئے میڈیکل ایڈوانس ایڈجسٹ کیا جائے گا۔ میڈیکل بل پر کارروائی کے دوران پیشگی کسی بھی مزید معاوضہ یا پیشگی وصولی کی ضرورت ہے۔

      • ای پی ایف او کی واپسی کے حالات کیا ہیں؟


      جو رقم نکالی جاسکتی ہے وہ کم از کم 6 ماہ کی بنیادی اجرت اور ممبر کی مہنگائی الاؤنس یا ممبر کی شراکت میں حصہ کے ل interest سود کے ساتھ ہوسکتی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: