ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

PM Modi to launch e-RUPI : وزیراعظم نریندرمودی آج لانچ کریں ای روپی،کیاہیں اس کے فائدے؟

ای – روپی ڈیجیٹل ادائیگی کے لیے بغیر نقدی والا اور بغیر رابطے والا ایک طریقۂ کار یہ ایک کیو آر کوڈ یا ایس ایم ایس اسٹرنگ پر مبنی ای - واؤچر ہے جو مستفیدین کے موبائل پر فراہم کیا جاتا ہے۔ یہ ایک بار ادائیگی کرنے والا نظام جو بلارکاوٹ کام کرتا ہے ۔

  • Share this:
PM Modi to launch e-RUPI : وزیراعظم نریندرمودی آج لانچ کریں ای روپی،کیاہیں اس کے فائدے؟
ای ۔روپی (e-RUPI)کا آغاز

نئی دہلی : وزیر اعظم نریندر مودی آج ، 2021 کو ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے ای ۔روپی (e-RUPI)کا آغاز کریں گے،جو کسی شخص اور مقصد کے تحت خصوصی ڈیجیٹل ادائیگی کا طریقۂ کار ہے۔وزیراعظم نے ہمیشہ ہی ڈیجیٹل اقدامات کی حمایت کرتے رہیں ہیں۔ کئی برسوں میں ، اس بات کویقینی بنانے کے لیے بہت سے پروگرام شروع کیے گئے ہیں کہ ان کے فوائد ان کے مقررہ مستفیدین تک پہنچ جائے اور اس میں کسی طرح کی خرد برد نہ ہو سکے اور حکومت اور مستفیدین کے درمیان کم سے کم لوگوں کا دخل ہو۔ الیکٹرانک واؤچر کا تصور اچھی حکمرانی کے اِس وِژن کو آگے بڑھاتا ہے۔



ای ۔روپی (e-RUPI) کیاہے؟

ای – روپی ڈیجیٹل ادائیگی کے لیے بغیر نقدی والا اور بغیر رابطے والا ایک طریقۂ کار یہ ایک کیو آر کوڈ یا ایس ایم ایس اسٹرنگ پر مبنی ای - واؤچر ہے جو مستفیدین کے موبائل پر فراہم کیا جاتا ہے۔ یہ ایک بار ادائیگی کرنے والا نظام جو بلارکاوٹ کام کرتا ہے ۔ بغیر کسی کارڈ کے ڈیجیٹل ادائیگی ایپ کے یا انٹرنیٹ بینکنگ رسائی کے ، واؤچر کوسروس فراہم کرنے والے کے لیے دوبارہ تسلیم کرنے کا اہل ہوگا۔ اسے بھارت کے ادائیگیوں کے قومی کارپوریشن نے اپنے یو پی آئی پلیٹ فارم پر مالی خدمات کے محکمے ، صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت اور صحت سے متعلق قومی اتھارٹی کے ساتھ مل کر تیار کیا ہے۔

ای – روپی خدمات کے اسپانسرز کو مستفیدین اور سروس فراہم کرنے والوں کے ساتھ کسی مادّی رابطے کے بغیر ڈیجیٹل طریقے سے مربوط کرتا ہے۔ یہ اس بات کی بھی یقین دہانی کراتا ہے کہ خدمات فراہم کرنے والے کو ادائیگی لین دین مکمل ہونے کے بعد ہی کی گئی ہے۔ اپنی نوعیت کے اعتبار سے یہ پری پیڈ ہے اور اس سے سروس فراہم کرنے والے کو بغیر کسی بچولیے کے بروقت ادائیگی کی یقین دہانی ہوتی ہے۔


امید ہے کہ یہ فلاحی خدمات کی بغیر کسی خامی کے فراہمی کو یقینی بنانے کی سمت میں ایک انقلابی قدم ہوگا۔ اسے ان اسکیموں کے تحت خدمات فراہم کرنے کے لیے بھی استعمال کیا جاسکتا ہے جن کا مقصد ماں اور بچہ بہبود اسکیموں کے تحت دوائیں اور غذائیت فراہم کرنا ہے اور آیوشمان بھارت پردھان منتری جن آروگیہ یوجنا ، کیمیاوی کھادوں کی سبسڈی وغیرہ جیسی اسکیموں کے تحت ، ٹی بی کے خاتمے کے پروگراموں ، دواؤں اور تشخیص کے لیے بھی استعمال کیا جاسکتا ہے، یہاں تک کہ پرائیوٹ شعبہ بھی اپنے ملازمین کی بہبود اور کارپوریٹ سماجی ذمہ داری پروگراموں کے حصے کے طور پر ان ڈیجیٹل واؤچرز کے طور پر استعمال کر سکتا ہے۔
Published by: Mirzaghani Baig
First published: Aug 02, 2021 08:17 AM IST