உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    RBI Monetary Policy: کوروناکےبحران کے بعدبہترہورہی ہےہندوستانی معیشت،مالی سال2022میں سی پی آئی5.3فیصدرہنےکاتخمینہ

    Youtube Video

    مالی سال 2022میں خوردہ افراط زد یعنی (Consumer price Index) 5.3 فیصد رہنے کی توقع ہے۔شکتی کانت داس نے اعلان کیا کہ مالی سال 2022 میں خوردہ افراط زر (سی پی آئی) 5.3 فیصد رہنے کا تخمینہ ہے۔ اس کے علاوہ ، مالی سال 2022-23 کی پہلی سہ ماہی کے لیے خوردہ افراط زر کا تخمینہ 5.2 فیصد لگایا گیا ہے۔

    • Share this:
      RBI Monetary Policy Latest Updates:آر بی آئی ریزرو بینک آف انڈیاکے گورنر شکتی کانت داس نے اعلان کیا ہے کہ ریپو ریٹ کی موجود ہ شرح کو برقرار رکھا جا رہا ہے۔ انہوں نے ایم پی سی یعنی مانیٹری پالیسی کمیٹی (MPC-Monetary Policy Committee) کے اجلاس میں سود کی شرح سے متعلق لیے گئے فیصلوں سے آگاہ کیا ۔ ریپو ریٹ بینکوں کی شرح سود کو متاثر کرتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ریپو ریٹ پر اعلان اہم مانا جاتاہے۔ اس کے علاوہ شکتی کانت داس نے اعلان کیا ہے کہ آر بی آئی لبرل موقف کو برقرار رکھے گا۔

      شرح سود کیا ہو گی؟


      ریپو ریٹ 4 فیصد پر مستحکم رہے گا۔ ریورس ریپو ریٹ 3.35 فیصد رہے گا۔شکتی کانت داس نے یہ بھی اعلان کیا ہے کہ آر بی آئی نے مالی سال 2021-22 کے لیے جی ڈی پی کی شرح نمو کو 9.5 فیصد پر برقرار رکھا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ دوسری سہ ماہی میں یہ 7.9 فیصد ، تیسری سہ ماہی میں 6.8 فیصد اور چوتھی سہ ماہی میں 6.1 فیصد رہنے کا تخمینہ ہے۔ مالی سال 2022-23 کی پہلی سہ ماہی کے لیے جی ڈی پی کی حقیقی شرح نمو 17.2 فیصد مقررکی گئی ہے۔


      مالی سال 2022میں خوردہ افراط زد یعنی (Consumer price Index) 5.3 فیصد رہنے کی توقع ہے۔شکتی کانت داس نے اعلان کیا کہ مالی سال 2022 میں خوردہ افراط زر (سی پی آئی) 5.3 فیصد رہنے کا تخمینہ ہے۔ اس کے علاوہ ، مالی سال 2022-23 کی پہلی سہ ماہی کے لیے خوردہ افراط زر کا تخمینہ 5.2 فیصد لگایا گیا ہے۔

      آئی ایم پی ایس ٹرانزیکشن کی حد بڑھ گئی


      اس کے علاوہ شکتی کانت داس نے اعلان کیا کہ آئی ایم پی ایس ٹرانزیکشن(IMPS) کی حد 2 لاکھ روپے سے بڑھا کر 5 لاکھ روپے کی جا رہی ہے۔ انہوں نے یہ بھی اعلان کیا ہے کہ آر بی آئی این بی ایف سی کے لیے اندرونی محتسب اسکیم متعارف کرائے گا۔

      آر بی آئی گورنر نے کہا کہ ہندوستانی معیشت پچھلی ایم پی سی میٹنگ سے بہتر حالت میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب ترقی مستحکم ہو رہی ہے ، مہنگائی کی رفتار توقع سے بہتر اور سازگار ہے۔ انہوں نے توقع ظاہر کی ہےکہ یہ معیشت کو معمول کے حالات پر لیے جانے میں مدد گار ہوگی۔

      آر بی آئی گورنر نے کہا کہ مانیٹری پالیسی کا موقف لبرل رہے گا۔ کیونکہ یہ حالات کو بہتر بنانے اور معیشت کو مستحکم کرنے کے لئے لازمی ہے تاکہ کوویڈ 19 وبا کے اثرات کو کم کیاجاسکے۔ شکتی کانت داس نے کہا کہ یہ بھی یقینی بنایا جا رہا ہے کہ افراط زر ہدف کے مطابق رہے۔


      ریپو ریٹ کیا ہے؟


      ریپو ریٹ وہ شرح ہے جس پر ملک کا مرکزی بینک (انڈیا میں ریزرو بینک آف انڈیا) فنڈز کی کمی کی صورت میں تجارتی بینکوں کو قرض دیتا ہے۔ ریپو ریٹ کو مالیاتی حکام افراط زر پر قابو پانے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ ریپو ریٹ میں کمی سے بینکوں کے قرضے سستے ہوجاتے ہیں۔ جیسے گھر کا قرض ، گاڑی کا قرض وغیرہ۔

      ریورس ریپو ریٹ کیا ہے؟


      ریورس ریپو ریٹ وہ شرح ہے جس پر ملک کا مرکزی بینک (ریزرو بینک آف انڈیا) ملک کے اندر واقع تجارتی بینکوں سے قرض لیتا ہے۔ اس کا استعمال ملک میں رقم کی فراہمی کو کنٹرول کرنے کے لیے کیا جا سکتا ہے۔

      آپ کو بتاتے چلیں کہ مورگن سٹینلے کی ایک تحقیقی رپورٹ کے مطابق ریزرو بینک آئندہ مالیاتی جائزے میں شرح سود میں کوئی تبدیلی نہیں کرے گا اور ساتھ ہی ساتھ اپنا نرم موقف بھی جاری رکھے گا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رواں مالی سال میں کنزیومر پرائس انڈیکس کی بنیاد پر افراط زر پانچ فیصد کے قریب درج ہوسکتی ہے۔


      اسٹیٹ بینک آف انڈیا کے چیئرمین دنیش کھارا نے حال ہی میں کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ شرح سود میں کوئی تبدیلی نہیں کی جائے گی۔ انہوں نے کہا تھا کہ ترقی میں کچھ بہتری ہے۔ ایسی صورتحال میں میرے خیال میں شرح سود میں اضافہ نہیں ہوگا۔ تاہم مرکزی بینک کے ریمارکس میں افراط زر کا ذکر ہوگا۔
      Published by:Mirzaghani Baig
      First published: