உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آر بی آئی نے سود کی شرح میں نہیں کی کوئی تبدیلی، GDP گروتھ ریٹ 9.5 فیصد پر برقرار

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    ریپو ریٹ چارفیصد (4%) اور ریورس ریپو ریٹ تین اعشاریہ تین پانچ فیصد ( 3.35%) برقراررہے گا۔ گورنر داس نے کہا کہ ابھی کووڈ19 وبا کا خطرہ پوری طرح سے ختم نہیں ہوا ہے۔

    • Share this:
      ریزرو بینک آف انڈیا کے گورنر شکتی کانت داس (Shaktikanta Das) نے مالیاتی پالیسی کا اعلان کیا۔ آر بی آئی نے ایک بار پھر ریپو ریٹ اور ریورس ریپو ریٹ کو برقرار رکھا ہے۔ ریپو ریٹ چارفیصد (4%) اور ریورس ریپو ریٹ تین اعشاریہ تین پانچ فیصد ( 3.35%) برقراررہے گا۔ گورنر داس نے کہا کہ ابھی کووڈ19 وبا کا خطرہ پوری طرح سے ختم نہیں ہوا ہے۔ سینٹرل بینک کی چھ رکنی مانیٹری پالیسی کمیٹی Monetary Policy Committee (ایم پی سی) کے مطابق معیشت آگے بڑھ رہی ہے۔ ویکسینیشن سے معیشت (economy) میں سدھار آرہا ہے۔

      معیشت کورونا کی دوسری لہر سے ابھر رہی ہے۔ سپلائی اور ڈیمانڈ کا توازن بگڑ گیا ہے جسے بتدریج درست کیا جا رہا ہے۔ ریزرو بینک آف انڈیا نے مالی سال دوہزار اکیس۔بائیس کے لیے جی ڈی پی کی شرح نمو کا تخمینہ نو اعشاریہ پانچ فیصد برقرار رکھا ہے۔ شکتی کانت داس نے کہا کہ جولائی میں اقتصادی صورتحال جون کی نسبت بہتر تھی۔ اس کے ساتھ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کورونا کی تیسری لہر کے حوالے سے چوکنا رہنے کی ضرورت ہے۔

      معیشت میں تیزی سے ہو رہا ہے سدھار
      آر بی آئی گورنر نے کہا کہ ریزرو بینک مسلسل کوشش کرے گا کہ افراط زر کی شرح ٹارگیٹ کے اندر رہے۔ انہوں نے کہا کہ ایم پی سی کے تمام 6 ارکان نے پالیسی ریٹ میں تبدیلی نہ کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ شکتی کانت داس نے کہا کہ معیشت میں تیزی سے بہتری کے آثار ہیں۔ لیکن بنیادی افراط زر ایک چیلنج ہے۔ جولائی ستمبر میں خوردہ مہنگائی کی شرح کی اندازے سے کم تھی۔

      مہنگائی کو کنٹرول کرنے پر زور دیا جائے گا۔
      کورونا بحران سے معیشت آہستہ آہستہ ٹھیک ہونے کے آثار کے درمیان ، اس بار آر بی آئی کے لیے ایک نیا چیلنج سامنے آئے گا۔ شکتی کانت داسکے پاس ایک طرف بینکوں کے ساتھ اضافی رقم کی دستیابی کو کنٹرول کرنے کا چیلنج ہے۔ دوسری طرف مہنگائی پر قابو پانا پہلے سے بڑا مسئلہ ہے۔

      کورونا بحران میں لوگوں کی آمدنی میں کمی آئی ہے۔ اس کے باوجود وہ قرض لینے کے بجائے بینکوں میں جمع کرنے کو ترجیح دے رہا ہے۔ ریزرو بینک کے اعداد و شمار اس بات کے گواہ ہیں۔ ریزرو بینک کے تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق 24 ستمبر کو ختم ہونے والے پندرہ روز میں بینکوں کا کریڈٹ 6.67 فیصد بڑھ کر 109.57 لاکھ کروڑ روپے ہو گیا۔ اس عرصے کے دوران بینکوں کے ذخائر 9.34 فیصد بڑھ کر 155.95 لاکھ کروڑ روپے ہو گئے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: