உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Income Tax Refund:محکمہ انکم ٹیکس نے31اگست تک1.14لاکھ کروڑ روپے کے ری فنڈ جاری کیے، ایسے چیک کریں اسٹیٹس

    انکم ٹیکس ریٹرن کو لے کر یہ معلومات آپ کے لئے کافی اہم ہوسکتی ہے۔

    انکم ٹیکس ریٹرن کو لے کر یہ معلومات آپ کے لئے کافی اہم ہوسکتی ہے۔

    Income Tax Refund: سی بی ڈی ٹی (Central Board of Direct Taxes) کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اس مدت کے دوران پرسنل انکم ٹیکس ری فنڈ کے طور پر 1.96 کروڑ ٹیکس دہندگان کو 61 ہزار 252 کروڑ روپے جاری کیے گئے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Mumbai | Delhi | Hyderabad
    • Share this:
      Income Tax Refund:محکمہ انکم ٹیکس نے یکم اپریل 2022 سے 31 اگست 2022 کے درمیان 1.97 کروڑ ٹیکس دہندگان کا 1.14 لاکھ کروڑ روپے کا ری فنڈ جاری کردیا ہے۔ سی بی ڈی ٹی (Central Board of Direct Taxes) کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اس مدت کے دوران پرسنل انکم ٹیکس ری فنڈ کے طور پر 1.96 کروڑ ٹیکس دہندگان کو 61 ہزار 252 کروڑ روپے جاری کیے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ 1,46,871 معاملوں میں 53,158 کروڑ روپے کارپوریٹ ٹیکس ری فنڈ کے طور پر ٹیکس دہندگان کو جاری کردئیے گئے ہیں۔

      اس طرح چیک کریں اپنا ری فنڈ اسٹیٹس
      1. یوزر آئی ڈی پاس ورڈ کا استعمال کرتے ہوئے انکم ٹیکس پورٹل میں لاگ ان کریں۔

      2. مائے اکاؤنٹ پر جائیں اور 'ریفنڈ/ڈیمانڈ اسٹیٹس' پر کلک کریں۔

      3. تمام معلومات آپ کے سامنے آجائیں گی۔ اگر رقم کی واپسی نہیں کی گئی ہے، تو آپ فوری طور پر 'وجہ' پر جا کر اسٹیٹس چیک کر سکتے ہیں۔

      اگر آپ کو نہیں ملا ریٹرن تو یہ ہوسکتی ہیں وجوہات


      تکنیکی خامی
      محکمہ انکم ٹیکس پورٹل یا آپ کے اکاؤنٹ سے متعلق کوئی تکنیکی مسئلہ آپ کے انکم ٹیکس کی واپسی میں تاخیر کی وجہ ہو سکتا ہے۔ ایسی صورت حال میں، اگر آپ کو اب تک ریفنڈ کی رقم نہیں ملی ہے، تو آپ انکم ٹیکس ڈیپارٹمنٹ کی ہیلپ لائن پر رابطہ کر کے تفصیلی معلومات حاصل کر سکتے ہیں۔ محکمہ انکم ٹیکس کا ہیلپ لائن نمبر (انکم ٹیکس رابطہ مرکز، ASK کا نمبر) 18001801961 ہے۔

      دستاویزوں کی کمی
      اضافی دستاویزوں کی کمی بھی ریفنڈ ملنے میں دیری کی ایک بڑی وجہ ہوسکتی ہے۔ اس مسئلہ کے حل کے لئے آپ ٹیکس عہدیدار سے بات کرسکتے ہیں اور ضروری دستاویز دوبارہ جمع کرسکتے ہیں۔

      ویریفکیشن نہ ہونا
      ریفنڈ نہ ملنے کی ایک وجہ ویریفکیشن بھی ہے۔ اگر آپ کا ITR مقررہ وقت کے اندر تصدیق شدہ نہیں ہوتا ہے، تو اسے غلط سمجھا جائے گا۔ انکم ٹیکس ایکٹ، 1961 کے تحت، آئی ٹی آرز جو تصدیق شدہ نہیں ہیں، غلط ہو جاتے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:

      Refund Rules: انڈین ریلوے میں رقم کی واپسی کے قوانین میں تبدیلی، ٹکٹوں کی منسوخی کے .....!

      یہ بھی پڑھیں:
      Instant loan mobile apps: لون ایپس کرسکتے ہیں آپ کی زندگی کو برباد! جانیے کیسے؟

      بینک سے جڑی جانکاری
      اگر بینک تفصیلات میں کوئی تبدیلی کی گئی ہے تو بھی آپ کا ری فنڈ ملنے میں دیری ہوسکتی ہے۔ اگر آپ کے پرائمری اکاونٹ کے موبائل نمبر اور ای میل جیسی جانکاری نئے اکاونٹ سے حاصل ہوتی رہے گی، تو ہی اکاونٹ صحیح مانا جائے گا، اور اگر جانکاری بدلی گئی ہے تو پورٹل پر ایک وارننگ دکھائی دے گی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: