உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    SBIگاہکوں پر خطرہ! کہیں آپ کے پاس بھی تو نہیں آیا یہ SMS-جواب دینے کی نہ کریں غلطی

    SBIگاہکوں کے لئے خطرہ!

    SBIگاہکوں کے لئے خطرہ!

    اگر آپ کے پاس کبھی بھی اس طرح کی کال یا میسیج آئے تو آپ فوری شکایت درج کروائی۔ اس کی شکایت report.phishing@sbi.co.in پر کرواسکتے ہیں۔ اس کے علاوہ 1930 ہیلپ لائن نمبر پر بھی رابطہ کرسکتے ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: ٹیکنالوجی میں ترقی کے ساتھ لوگوں کو بہت زیادہ سہولتیں مل رہی ہیں۔ لیکن اس ٹیکنالوجی کا فائدہ اٹھا کر سائبر کریمنلس لوگوں کی محنت کی کمائی کو توڑنے کی کوشش کرتے رہتے ہیں۔ جی ہاں، حال ہی میں ایک SBI YONO ایس ایم ایس فشنگ اسکینڈل چل رہا ہے جو پچھلے کئی سالوں میں کافی عام ہو گیا ہے۔ پچھلے ایک سال میں اس طرح کے کئی کیسز سامنے آئے ہیں جہاں صارفین کے بینک کی رقم چوری ہوئی ہے۔ جی ہاں، جس پل صارفین نے اپنے بینک اکاؤنٹس کی معلومات شیئر کیں، اسی پل رقم غائب ہوگئی۔ حال ہی میں اسٹیٹ بینک آف انڈیا (SBI) کے صارفین کے ساتھ اس قسم کا واقعہ پیش آ یا ہے۔ جی ہاں، ایس بی آئی کے صارفین کو ایک لنک کے ساتھ پین نمبر کو اپ ڈیٹ کرنے کا پیغام مل رہا ہے جو ایس بی آئی کے ویب پیج کے طور پر ظاہر ہوتا ہے، لیکن یہ ایک فراڈ ہے۔ اگر آپ اسٹیٹ بینک آف انڈیا کے صارف ہیں تو آپ یہ خبر ضرور پڑھیں۔

      SBI گاہک نشانے پر
      اس گھوٹالے میں ایس بی آئی کے صارفین کو خاص طور پر ایک پیغام دیا جا رہا ہے، جس میں کہا جا رہا ہے کہ اگر وہ اس لنک پر اپنا پین نمبر اپ ڈیٹ نہیں کرتے ہیں، تو ان کے یونو اکاؤنٹ پر پابندی لگا دی جائے گی۔ یونو ایس بی آئی کا ڈیجیٹل بینکنگ پلیٹ فارم ہے۔ پیغام میں لنک ایس بی آئی کے صفحے کے طور پر ظاہر ہوتا ہے جو صارفین سے ذاتی تفصیلات درج کرنے کو کہتا ہے۔ اگر صارفین اپنی نجی معلومات درج کرتے ہیں تو یہ براہ راست ہیکرز تک پہنچ جاتا ہے، پھر پیسے چرانے کا کاروبار شروع ہوجاتا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      اب تمام بینکوں کے ATM سے بغیر کارڈ کے نکال سکیں گےCash، آر بی آئی نے لگائی مہر

      کبھی نہ کریں یہ کام
      آپ کو بتادیں کہ یہ ایک نیا فشنگ حملہ ہے۔ فشنگ اٹیک کا تعلق بینک اکاؤنٹ سے ہے، اس لیے ہم آپ کو بتا رہے ہیں کہ کسی بھی صورت میں آپ کو کسی نامعلوم لنک پر کلک نہیں کرنا چاہیے، اگر آپ اس لنک پر کلک کر کے کوئی ذاتی معلومات درج کرتے ہیں تو آپ کی رقم چوری ہو سکتی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      ’50روپے سے کم کاپٹرول نہیں ملے گا‘جھگڑے کے بعد پٹرول پمپ کے مالک نے لگایا نوٹس

      SBI نے اپنے گاہکوں کو دی صلاح
      ایس بی آئی گاہکوں تک آنے والے اس میسیج کو ایس بی آئی نے دکھایا ہے۔ بینک نے بتایا کہ اس کی آئی ٹی سیکوریٹی ٹیم اس پر کارروائی کرے گی۔ بینک نے گاہکوں کو صلاح دی ہے کہ وہ کسی بھی طرح کے ای میل، ایس ایم ایس، کال، امبیڈیڈ لنک کا کوئی جواب نہ دیں۔ جب ان سے ان کی نجی جانکاری یا بینک کی جانکاری شیئر کرنے کے لئے کہا جائے تو اسے بالکل بھی شیئر نہ کریں۔

      بینک عام طور پر کبھی بھی کوئی او ٹی پی میسیج نہیں مانگتے ہیں اور نہ ہی نجی جانکاری کی مانگ کرتے ہیں۔ اگر آپ کے پاس کبھی بھی اس طرح کی کال یا میسیج آئے تو آپ فوری شکایت درج کروائی۔ اس کی شکایت report.phishing@sbi.co.in پر کرواسکتے ہیں۔ اس کے علاوہ 1930 ہیلپ لائن نمبر پر بھی رابطہ کرسکتے ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: