உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آر بی آئی گورنر شکتی کانت داس کی آج پریس کانفرنس، مسلسل  8ویں بار مستحکم رہ سکتی ہے سود شرح

    ماہرین کا خیال ہے کہ آر بی آئی مسلسل آٹھویں بار سود کی شرح میں کوئی تبدیلی نہ کرکے جس کا تس ہی رکھ سکتا ہے۔ اس وقت ریپو ریٹ 4 فیصد اور ریورس ریپو ریٹ 3.35 فیصد ہے۔

    ماہرین کا خیال ہے کہ آر بی آئی مسلسل آٹھویں بار سود کی شرح میں کوئی تبدیلی نہ کرکے جس کا تس ہی رکھ سکتا ہے۔ اس وقت ریپو ریٹ 4 فیصد اور ریورس ریپو ریٹ 3.35 فیصد ہے۔

    ماہرین کا خیال ہے کہ آر بی آئی مسلسل آٹھویں بار سود کی شرح میں کوئی تبدیلی نہ کرکے جس کا تس ہی رکھ سکتا ہے۔ اس وقت ریپو ریٹ 4 فیصد اور ریورس ریپو ریٹ 3.35 فیصد ہے۔

    • Share this:
      RBI Monetary Policy: آر بی آئی (RBI) کے گورنر شکتی کانت داس (Shaktikanta Das) آج ایم پی سی یعنی مانیٹری پالیسی کمیٹی کی میٹنگ MPC-Monetary Policy Committee) میں لیے گئے سود کی شرح کے فیصلوں کا اعلان کریں گے۔ تاہم ماہرین معاشیات (economists) کو شرح سود میں کسی تبدیلی کی امید نہیں ہے۔ کیونکہ مہنگائی کو کو کنٹرول کرنے کے لیے ایسا ہو سکتا ہے۔

      سینٹرل بینک کی چھ رکنی مانیٹری پالیسی کمیٹی Monetary Policy Committee (ایم پی سی) 6 اکتوبر سے شروع ہونے والی تین روزہ میٹنگ کے بعد آج فیصلہ کرے گی۔ بتادیں کہ آر بی آئی کے گورنر شکتی کانت داس صبح 10 بجے ایم پی سی کے فیصلے کا اعلان کریں گے جس کے بعد میڈیا بریفنگ ہوگی جو دوپہر 12 بجے منعقد ہوگی۔


      8ویں بار مستحکم رہ سکتی ہے سود شرح
      ماہرین کا خیال ہے کہ آر بی آئی مسلسل آٹھویں بار سود کی شرح میں کوئی تبدیلی نہ کرکے جس کا تس ہی رکھ سکتا ہے۔ اس وقت ریپو ریٹ 4 فیصد اور ریورس ریپو ریٹ 3.35 فیصد ہے۔

      مہنگائی کو کنٹرول کرنے پر زور دیا جائے گا۔
      کورونا بحران سے معیشت آہستہ آہستہ ٹھیک ہونے کے آثار کے درمیان ، اس بار آر بی آئی کے لیے ایک نیا چیلنج سامنے آئے گا۔  شکتی کانت داسکے پاس ایک طرف بینکوں کے ساتھ اضافی رقم کی دستیابی کو کنٹرول کرنے کا چیلنج ہے۔ دوسری طرف مہنگائی پر قابو پانا پہلے سے بڑا مسئلہ ہے۔

      کورونا بحران میں لوگوں کی آمدنی میں کمی آئی ہے۔ اس کے باوجود وہ قرض لینے کے بجائے بینکوں میں جمع کرنے کو ترجیح دے رہا ہے۔ ریزرو بینک کے اعداد و شمار اس بات کے گواہ ہیں۔ ریزرو بینک کے تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق 24 ستمبر کو ختم ہونے والے پندرہ روز میں بینکوں کا کریڈٹ 6.67 فیصد بڑھ کر 109.57 لاکھ کروڑ روپے ہو گیا۔ اس عرصے کے دوران بینکوں کے ذخائر 9.34 فیصد بڑھ کر 155.95 لاکھ کروڑ روپے ہو گئے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: