உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    خواتین کیلئے Budget 2022 میں تین نئی اسکیمیں، کسانوں، دلتوں اور نوجوانوں پر خصوصی توجہ مرکوز

    Youtube Video

    وزیر خزانہ نے کہا کہ خواتین اور بچوں کی ترقی کے لیے تین اسکیمیں شروع کی گئی ہیں۔ بچوں کی صحت کو بہتر بنانے کے لیے دو لاکھ آنگن واڑیوں کو بہتر بنایا جائے گا۔ دماغی صحت سے متعلق کاؤنسلنگ کے لیے نیشنل ٹیلی مینٹل ہیلتھ پروگرام شروع کیا جائے گا۔

    • Share this:
      Budget 2022: وزیر خزانہ (Finance Minister) نرملا سیتا رمن نے آج پارلیمنٹ میں مالی سال 2022-23 کا بجٹ پیش کیا۔ انہوں نے اسے کسانوں، خواتین اور نوجوانوں کا بجٹ بتایا۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ بجٹ اگلے 25 سال کا بلیو پرنٹ ہے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ حکومت خواتین کو بااختیار بنانے کے لیے پرعزم ہے۔ خواتین کے لیے تین نئی اسکیمیں شروع کی جائیں گی۔ ہماری حکومت نے فوائد فراہم کرنے کے لیے خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزارت کی مشن شکتی، مشن وتسالیہ، سکشم آنگن واڑی اور پوشن 2.0 جیسی اسکیموں کو بڑے پیمانے پر از سر نو بنایا ہے۔ انہوں نے کہا، 2 لاکھ آنگن واڑیوں کو سکشم آنگن واڑیوں (Anganwadi) میں اپ گریڈ کیا جائے گا۔

      وزیر خزانہ نے کہا کہ خواتین اور بچوں کی ترقی کے لیے تین اسکیمیں شروع کی گئی ہیں۔ بچوں کی صحت کو بہتر بنانے کے لیے دو لاکھ آنگن واڑیوں کو بہتر بنایا جائے گا۔ دماغی صحت سے متعلق کاؤنسلنگ کے لیے نیشنل ٹیلی مینٹل ہیلتھ پروگرام شروع کیا جائے گا۔

      اگلے 25 سالوں کیلئے معیشت کا بلیو پرنٹ ہوگا یہ بجٹ
      وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے کہا کہ یہ عام بجٹ اگلے سالوں کے لئے ہندوستان کی معیشت کی بنیاد تیار کرے گا اور معیشت کا بلیو پرنٹ دے گا۔ اس کے ذریعے ہندوستان آزادی کے 75 سال سے 100 سال تک کا سفر طے کرے گا۔

      مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن (Finance Minister Nirmala Sitharama) نے پارلیمنٹ میں بجٹ (Budget 2022) پیش کیا ۔ اس بجٹ میں خواتین، کسانوں، دلتوں اور نوجوانوں پر خصوصی توجہ مرکوز کی گئی ہے ۔ اس کے علاوہ نرملا سیتارمن نے کہا کہ سب کی فلاح و بہبود ہی ہمارا مقصد ہے۔ جانئے بجٹ میں کئے گئے 10 بڑے اعلانات کے بارے میں…

      1- نوجوانوں کو 60 لاکھ نوکریاں دی جائیں گی۔
      2- اگلے 3 سالوں میں 400 نئی جنریشن کی وندے بھارت ٹرینیں چلائی جائیں گی۔
      3- 3 سالوں کے دوران، 100 پی ایم گتی شکتی کارگو ٹرمینلز تیار کئے جائیں گے۔
      4- 1.5 لاکھ پوسٹ آفس ، کور بینکنگ کے دائرے میں آئیں گے۔ اب پوسٹ آفس میں بھی آن لائن ٹرانسفر ممکن ہوگا۔
      5- سال 2022-23 میں 80 لاکھ نئے مکانات تعمیر کئے جائیں گے۔
      6- ملک میں ایک ڈیجیٹل یونیورسٹی بنائی جائے گی۔
      7- 25 ہزار کلومیٹر طویل قومی شاہراہ 20 ہزار کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کی جائے گی۔
      8- ملک کے 5 بڑے دریاؤں کو جوڑنے کے لئے آبی وسائل کی ترقی کی وزارت کی مدد سے بھی کام کیا جائے گا۔
      9- 75 اضلاع میں ڈیجیٹل بینکنگ شروع کی جائے گی۔
      10- ای پاسپورٹ 2022-23 میں نافذ کیا جائے گا۔
      یکس دہندگان (Income Taxpayers) اپنا سالانہ ریٹرن دو سال تک اپ ڈیٹ کر سکیں گے اور اگر کوئی غلطی ہے تو اس میں تصحیح کر سکیں گے ۔ اس کے ذریعہ وہ اپنا بقایا ٹیکس بھی ادا کر سکتے ہیں ۔ اس کیلئے حکومت جلد ہی ایک New IT Return Portal جاری کرے گی ۔
      کوآپریٹو سوسائٹیز پر بھی ٹیکس 15 فیصد سے کم کر کے 12 فیصد کر دیا گیا ہے۔ اس پر سرچارج بھی کم کر کے 7.5 فیصد کر دیا گیا ہے ۔
      معذور افراد کے والدین کو انشورنس پر ملنے والے لمپسم کو ٹیکس سے باہر رکھا گیا ہے۔ اس میں انیوٹی بھی شامل ہے ۔ اس کا اطلاق 60 سال کی عمر تک ہو گا ۔

      اس کے علاوہ این پی ایس پر 14 فیصد ٹیکس چھوٹ ایمپلائر کی بھاگیداری پر ملے گا ، جو کہ اب تک 10 فیصد ہے ۔
      وزیر خزانہ نے اسٹاک اور میوچل فنڈز میں سرمایہ کاری کرنے سے حاصل ہونے والے منافع پر سرچارج کو محدود کردیا ہے۔ اب سرمایہ کاروں کو لانگ ٹرم کیپیٹل گینز پر 15 فیصد سے زیادہ سرچارج ادا نہیں کرنا پڑے گا ۔ اس سے ریٹرن کا حقیقی فائدہ مزید بڑھ جائے گا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: