உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    YouTube: یوٹیوب کاتخلیق کارماحولیاتی نظام کارآمد، ہندوستانی GDP میں 6,800 کروڑ روپےسےہواتعاون

    آکسفورڈ اکنامکس میں اس کا ذکر کیا گیا ہے۔

    آکسفورڈ اکنامکس میں اس کا ذکر کیا گیا ہے۔

    انہوں نے مزید کہا کہ ہم لاکھوں ہندوستانیوں کے لیے ایک کھلا، جامع اور ذمہ دار پلیٹ فارم فراہم کرنے کے اپنے مقصد پر لیزر پر مرکوز رہتے ہیں جو نئی مہارتوں کو فروغ دینے، اپنے شوق کو دریافت کرنے، اپنی صلاحیتوں کو نکھارنے اور اپنے کاروبار کو بڑھانے کے لیے یوٹیوپ کا رخ کرتے ہیں۔

    • Share this:
      گوگل (Google) کی ملکیت والا یوٹیوب (YouTube) ہندوستان میں اپنے تخلیق کار ماحولیاتی نظام (ecosystem) کی اقتصادی قدر پر بات کر رہا ہے، یہاں تک کہ وہ ملک میں تخلیق کاروں کو اپنے پلیٹ فارم پر راغب کرنے کے لیے عالمی ٹیک کمپنیاں اور مقامی انٹرنیٹ کمپنیوں کے ساتھ جوڑ توڑ کر رہا ہے۔

      یوٹیوب دنیا کا سب سے بڑا ویڈیو شیئرنگ پلیٹ فارم ہے۔ آکسفورڈ اکنامکس (Oxford Economics) کی ایک رپورٹ کے مطابق اس نے کہا کہ اس کے بڑھتے ہوئے تخلیق کار ماحولیاتی نظام نے ہندوستانی جی ڈی پی میں 6,800 کروڑ روپے کا حصہ لیا ہے اور 2020 میں ملک میں 6,83,900 کل وقتی ملازمتوں کے مساوی کی حمایت کی۔

      APAC یوٹیوب پارٹنرشپس علاقائی ڈائریکٹر اجے ودیا ساگر نے کہا کہ ملک میں تخلیق کار معیشت (Creator Economy) ایک نرم طاقت کے طور پر ابھرنے کی صلاحیت رکھتی ہے جو اقتصادی ترقی، ملازمتوں کی تخلیق اور ثقافتی اثر و رسوخ کو بھی متاثر کرتی ہے۔ جیسا کہ ہمارے تخلیق کار اور فنکار میڈیا کمپنیوں کی نیکسٹ جنریشن بناتے ہیں جو عالمی سامعین کے ساتھ جڑ رہی ہیں۔ ان کے معیشت کی مجموعی کامیابی پر اثر صرف تیزی سے جاری رہے گا۔

      مختصر ویڈیوزکا ہمارا پیلٹ فارم ہندوستان میں واٹس ایپ کی طرح اختیارکرےگاوسعت، شیئر چیٹ کے Ankush Sachdeva سے تفصیلی انٹرویو



      انہوں نے مزید کہا کہ ہم لاکھوں ہندوستانیوں کے لیے ایک کھلا، جامع اور ذمہ دار پلیٹ فارم فراہم کرنے کے اپنے مقصد پر لیزر پر مرکوز رہتے ہیں جو نئی مہارتوں کو فروغ دینے، اپنے شوق کو دریافت کرنے، اپنی صلاحیتوں کو نکھارنے اور اپنے کاروبار کو بڑھانے کے لیے یوٹیوپ کا رخ کرتے ہیں۔

      Telangana Budget 2022: تلنگانہ بجٹ میں ’تعلیم اور صحت کو دی جائےگی اولین ترجیح، مرکزی حکومت کا تعاون نہیں‘



      جب کہ یہ پہلا موقع ہے جب یوٹیوب ہندوستان میں اپنے معاشی اثرات کا اشتراک کر رہا ہے، اس سے قبل اس نے آکسفورڈ اکنامکس سے اسی طرح کی رپورٹیں جاری کی ہیں جو دوسرے ممالک میں اس کے معاشی اثرات کو نمایاں کرتی ہیں۔

      ریاستہائے متحدہ امریکہ میں یوٹیوب نے کہا کہ اس نے 2020 میں امریکی جی ڈی پی میں 20.5 بلین ڈالر کا تعاون کیا اور 394,000 کل وقتی ملازمتوں کے مساوی تعاون کیا جب کہ برطانیہ میں، اس نے 2020 میں تقریباً 2.38 بلین یورو (تقریباً 2.64 بلین ڈالر) کا تعاون کیا اور 142,000 کی مکمل حمایت کی

      براہ راست اور بالواسطہ تخلیق کار کا اثر

      رپورٹ میں آکسفورڈ اکنامکس نے کہا کہ یوٹیوب کے معاشی اثرات کا ایک بنیادی ذریعہ اس آمدنی سے حاصل ہوتا ہے جو کمپنی اپنے تخلیق کاروں کو دوبارہ تقسیم کرتی ہے جس میں اشتہارات، سبسکرپشنز اور مداحوں کی مالی معاونت جیسے کہ چینل کی رکنیت اور سپر چیٹ کے ساتھ موسیقی کو ادا کی جانے والی رائلٹی کی ادائیگی شامل ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: