مانجھی جیسی فلمیں لیپ ٹاپ پر دیکھنے کے لئے نہیں: نوازالدين

فلم اداکار نواز الدین صدیقی کا کہنا ہے کہ مانجھی دی ماؤنٹین مین جیسی فلم لیپ ٹاپ پر دیکھنے کا کوئی مطلب نہیں،

Aug 16, 2015 06:04 PM IST | Updated on: Aug 16, 2015 06:07 PM IST
مانجھی  جیسی فلمیں لیپ ٹاپ پر دیکھنے کے لئے نہیں: نوازالدين

ممبئی  :  بالی وڈ میں اپنی سنجیدہ اداکاری کے لئے مشہور نوازالدین صدیقی کا کہنا ہے کہ ’’مانجھی‘‘دی ماؤنٹین مین جیسی فلمیں لیپ ٹاپ پر دیکھنے کے لیے نہیں بنائی گئی ہیں۔نوازالدین کی فلم ’’مانجھی‘‘ دی ماؤنٹین مین 21 اگست کو ریلیز ہونے والی ہے۔ اگرچہ یہ فلم پہلے ہی لیک ہو گئی ہے۔ نوازالدین نے کہا، "میں یہی کہہ سکتا ہوں کہ اس جیسی فلم اور کہانی کو لیپ ٹاپ پر نہیں دیکھا جانا چاہئے۔ ایسی کہانی جس میں ایک آدمی بڑے پہاڑ کے آگے کھڑا ہے، جس میں اتنے گہرے مناظرہیں، اسے لیپ ٹاپ کے چھوٹے سے اسکرین پر دیکھنے کا کوئی مطلب نہیں۔

نوازالدین نے کہا کہ "میری درخواست ہے کہ جن لوگوں نے فلم دیکھ لی ہے، وہ بھی سنیما جاکر پھر سے یہ فلم دیکھیں۔ فلم دیکھنے کا مزہ بڑے پردے پر ہی آئے گا۔ فلم دیکھ کر آپ رو سکیں گے، ہنس سکیں گے اور جذبات کو محسوس کر سکیں گے، تو آپ کو یہ فلم بڑے پردے پر دیکھنی چاہئے۔

واضح ر ہے کہ بہار کے گیا ضلع کے گهلور گاؤں کے رہنے والے دشرتھ مانجھی نے سال 1960 سے سال 1982 تک تقریبا 22 سال کی سخت محنت کے بعد اتری اور وزيرگنج کے درمیان تنہا ہی پہاڑ کو کاٹ کر راستہ بنایا تھا جس سے اتری اور وزيرگنج کے درمیان کی دوری 55 کلومیٹر سے کم ہوکر 15 کلومیٹر تک ہی رہ گئی۔ دشرتھ مانجھی کے اس جرات مندانہ کارنامے نے انہیں ملک و بیرون ملک میں مقبول بنا دیا۔ بہار حکومت اور کئی قومی اور بین الاقوامی اداروں نے انہیں اعزاز سے نوازا۔ دشرتھ مانجھی کا انتقال 17 اگست 2007 کو ہوا۔

Loading...

Loading...