உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وزارت داخلہ کا دہشت گردی پر بڑا ایکشن، 10 لوگوں کو قرار دیا دہشت گرد

    وزارت داخلہ کا دہشت گردی پر بڑا ایکشن، 10 لوگوں کو قرار دیا دہشت گرد

    وزارت داخلہ کا دہشت گردی پر بڑا ایکشن، 10 لوگوں کو قرار دیا دہشت گرد

    وزارت نے حزب المجاہدین، لشکر طیبہ، اور دیگر ممنوعہ تنظیموں کے مجموعی طور پر 10 ارکان کو غیر قانونی سرگرمیوں کی روک تھام ایکٹ (یو اے پی اے) کے تحت دہشت گرد قرار دیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Srinagar | New Delhi
    • Share this:
      مرکزی وزارت داخلہ نے دہشت گردی پر بڑا ایکشن لیا ہے۔ وزارت نے حزب المجاہدین، لشکر طیبہ، اور دیگر ممنوعہ تنظیموں کے مجموعی طور پر 10 ارکان کو غیر قانونی سرگرمیوں کی روک تھام ایکٹ (یو اے پی اے) کے تحت دہشت گرد قرار دیا ہے۔

      ان لوگوں کو قرار دیا دہشت گرد
      وزارت داخلہ نے جن لوگوں کو دہشت گرد قرار دیا ہے ان میں پاکستانی شہری حبیب اللہ ملک عرف ساجد جٹ، جموں کشمیر کے بارہمولا کا باسط ریشی جو اب پاکستان میں رہ رہا ہے۔ جموں کشمیر کے سوپور کا امتیاز احمد کانڈو عرف سجاد یہ بھی پاکستان میں پناہ لیے ہوئے ہے۔ ساتھ ہی پاکستان میں رہ رہا جموں کشمیر کے پونچھ کا ظفر اقبال عرف سلیم اور پلوامہ کا شیخ جمیل الرحمن عرف شیخ صاحب شامل ہیں۔

      اس کے ساتھ ہی بلال احمد بیگ عرف بابر ہے جو سرینگر کا رہائشی ہے لیکن فی الحال پاکستان میں رہتا ہے۔ وہیں پاکستان میں رہ رہے دیگر لوگ پونچھ کے رفیق نائی عرف سلطان، ڈوڈا کے ارشاد احمد عرف ادریس، کپواڑہ کے بشیر احمد پیر عرف امتیاز اور بارہمولہ کے شوکت احمد شیخ عرف شوکت موچی کو بھی وزارت داخلہ نے دہشت گرد قرار دیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      امت شاہ نے کہا- مرکزی حکومت کشمیر کے ساتھ، ہماری حکومت نے آرٹیکل 370 کو ہٹایا

      یہ بھی پڑھیں:
      جموں۔کشمیر: امت شاہ کااپوزیشن پر طنز، بغیرنام لئے عبداللہ فیملی و محبوبہ مفتی پربولا حملہ

      ہندوستانی فوجیوں پر حملے میں رہا شامل
      ایک سرکاری بیان میں ایم ایچ اے نے کہا کہ حبیب اللہ ملک ان دہشت گردوں کا چیف ہینڈلر تھا، جنہوں نے پونچچھ میں ہندوستانی فوجیوں پر حملہ کیا تھا اور جموں کشمیر میں دہشت گردوں کے ساتھ جموں علاقے میں ڈرون سے حملے کی کئی کوششیں بھی کی تھیں۔ ملک نے وادی میں کٹر دہشت گردوں کا بڑا نیٹ ورک بھی بنایا ہے اور کشمیر میں کئی دہشت گردانہ حملوں کا ماسٹر مائنڈ رہا ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: