உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک میں حجاب پہن کر اسکول پہنچیں 58 طالبات معطل، لڑکیاں بولیں- ہمارے لئے حجاب تو...

    کرناٹک میں حجاب پہن کر اسکول پہنچیں 58 طالبات معطل

    کرناٹک میں حجاب پہن کر اسکول پہنچیں 58 طالبات معطل

    Girls students suspended for reaching school wearing hijab: کرناٹک میں حجاب کے موضوع کو لے کر احتجاجی مظاہرہ جاری ہے۔ ریاست کے کئی حصوں میں ہفتہ کو طالبات اپنے تعلیمی اداروں میں حجاب پہن کر آئیں، لیکن انہیں عدالت کے حکم کا حوالہ دے کر داخل نہیں ہونے دیا گیا۔ وہیں شیموگا ضلع کے پری یونیورسٹی کالج انتظامیہ نے حجاب ہٹانے سے انکار کرنے پر 58 طالبات کو معطل کردیا۔

    • Share this:
      بنگلورو: کرناٹک (Karnataka) میں حجاب (Hijab) سے متعلق معاملے پر ہائی کورٹ (Karnataka High Court) کا فیصلہ آنا ابھی باقی ہے، لیکن ریاست میں اس موضوع کو لے کر مسلم طالبات (Muslim Students) کا احتجاجی مظاہرہ جاری ہے۔ ریاست کے کئی حصوں میں ہفتہ کو طالبات اپنے تعلیمی اداروں میں حجاب پہن کر آئیں، لیکن انہیں عدالت کے حکم کا حوالہ دے کر داخل نہیں کرنے دیا گیا۔ وہیں شیوموگا ضلع کے شرلا کوپا میں پری یونیورسٹی کالج انتظامیہ کی مخالفت میں احتجاج کرنے اور حجاب ہٹانے سے منع کرنے پر 58 طالبات کو معطل کردیا گیا۔

      ایک طالبہ نے صحافیوں کو بتایا کہ معطل کی گئی طالبات کو کالج نہیں آنے کو کہا گیا ہے۔ ہفتہ کو بھی طالبات کالج آئیں، حجاب پہننے کی حمایت میں نعرے لگائے، لیکن انہیں داخلہ نہیں دیا گیا۔ طالبات نے کہا کہ ہم یہاں پہنچے، لیکن پرنسپل نے ہم سے کہا کہ ہمیں معطل کردیا گیا ہے اور ہمیں کالج آنے کی ضرورت نہیں ہے۔ پولیس نے بھی ہمیں کالج نہیں آنے کو کہا تھا، پھر بھی ہم آئے، لیکن کسی نے ہم سے بات نہیں کی۔

      داون گیرے ضلع کے ہریہر میں واقع ایس جے وی پی کالج میں لڑکیوں کو حجاب پہن کر داخلہ نہیں دیا گیا۔ اس پر طالبات نے کہا کہ وہ حجاب اتار کر اندر نہیں جائیں گی اور یہ ان کے لئے تعلیم کی جتنی ہی اہمیت ہے اور وہ اپنے حقوق کو نہیں چھوڑ سکتیں۔ بیلگاوی ضلع کے وجے پیرا میڈیکل کالج میں طالبات نے صحافیوں کو بتایا کہ حجاب موضوع کے سبب ادارے نے غیر معینہ مدت کے لئے چھٹی کا اعلان کردیا ہے۔

      ایک طالبہ نے کہا، ’ہم حجاب کے بغیر نہیں بیٹھیں گے۔ کالج کو یہ سمجھ میں آنا چاہئے کہ اس سے ہماری تعلیم پر کیا اثر پڑتا ہے۔ پرنسپل ہماری بات نہیں سن رہی ہیں۔ بلاری کے سرلا دیوی کالج اور کوپل ضلع کے گنگاوتی میں سرکاری کالج میں بھی اسی طرح کی صورتحال دیکھنے کو ملی۔ رام نگر ضلع کے کدور گاوں میں کچھ طالبات کو جب کلاس کے اندر جانے کی اجازت نہیں دی گئی تو انہوں نے کالج کے میدان پر احتجاجی مظاہرہ کیا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: