ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بہار اسمبلی انتخابات 2020: 63 فیصد لوگ بدلنا چاہتے ہیں حکومت، ٹوڈے چانکیہ کا دعویٰ

ٹوڈے چانکیہ ایگزٹ پول (Today's Chanakya Exit Poll) کے مطابق، بہار میں 63 فیصد لوگ حکومت بدلنا چاہتے ہیں۔ بے روزگاری پر 35 فیصد، بدعنوانی- 19 فیصد اور دیگر مدعوں پر 34 فیصد لوگوں کا مدعا رہا ہے۔

  • Share this:
بہار اسمبلی انتخابات 2020: 63 فیصد لوگ بدلنا چاہتے ہیں حکومت، ٹوڈے چانکیہ کا دعویٰ
بہار اسمبلی انتخابات: 63 فیصد لوگ بدلنا چاہتے ہیں حکومت، ٹوڈے چانکیہ کا دعویٰ

بہار اسمبلی انتخابات 2020 کے لئے ووٹنگ کا عمل مکمل ہوچکا ہے۔ 10 نومبر کو ووٹوں کی گنتی ہوگی۔ تاہم اس سے پہلے ایگزٹ پول سامنے آگئے ہیں۔ ٹوڈے چانکیہ ایگزٹ پول (Today's Chanakya Exit Poll) کا سب سے بڑا سروے سامنے آیا ہے۔ بہار میں 63 فیصد لوگ حکومت بدلنا چاہتے ہیں۔ ٹوڈے چانکیہ ایگزٹ پول کا ماننا ہے کہ عظیم اتحاد کو 180 سیٹیں مل سکتی ہیں، جبکہ بی جے پی - جے ڈی یو اتحاد کا صفایا ہوسکتا ہے۔ پول کے مطابق، این ڈی اے کو محض 55 سیٹیں ملتی ہوئی نظر آرہی ہیں۔


ٹوڈے چانکیہ ایگزٹ پول (Today's Chanakya Exit Poll) کا سب سے بڑا سروے سامنے آیا ہے۔ بہار میں 63 فیصد لوگ حکومت بدلنا چاہتے ہیں۔ بے روزگاری پر 35 فیصد،  بدعنوانی- 19 فیصد اور دیگر مدعوں پر 34 فیصد لوگوں نے ووٹ دیا ہے۔ اس کے علاوہ 21 فیصد لوگوں نے موجودہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار کو اچھا بتایا جبکہ 29 فیصد لوگوں نے اوسط بتایا ہے۔ وہیں 37 فیصد لوگوں نے موجودہ حکومت کو برا بتایا ہے۔





ٹوڈے چانکیہ ایگزٹ پول (Bihar Elections Today's Chanakya Exit Poll) کے مطابق، ان اسمبلی انتخابات میں عام لوگوں نے این ڈی اے اتحاد کو مسترد کردیا ہے۔ جبکہ آرجے ڈی لوگوں کی پہلی پسند بنی ہے۔ پول کے مطابق 44 فیصد ووٹ آرجے ڈی + (عظیم اتحاد) کے حصے میں جاتی ہوئی نظر آرہی ہیں جبکہ 34 فیصد ووٹ این ڈی اے اور 22 فیصد ووٹ دیگر کے کھاتے میں جاسکتے ہیں۔


این ڈی اے کو عوام نے کیا مسترد

ٹوڈے چانکیہ ایگزٹ پول کے مطابق، ان اسمبلی انتخابات میں عام لوگوں نے این ڈی اے اتحاد کو مسترد کردیا ہے۔ جبکہ آر جے ڈی لوگوں کی پہلی پسند بنی ہے۔ ایگزٹ پول کے مطابق، 44 فیصد ووٹ آرجے ڈی، 34 فیصد ووٹ جے ڈی یو اور 22 فیصد ووٹ دیگر کے کھاتے میں جاسکتے ہیں۔ سٹیک ایگزٹ پول جاننے والے چانکیہ ایگزٹ پول (Today's Chanakya Bihar Election Exit Poll) کے ذریعہ آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ اس بار بہارکے لوگ کس پر بھروسہ کر رہے ہیں۔ ساتھ ہی کون سی پارٹی بہار کے اقتدار پر اس بار قابض ہوگی۔ حالانکہ ایگزٹ پول بہار اسمبلی انتخابات کے سٹیک نتائج نہیں ہوں گے۔ ایگزٹ پول قیاس آرائیوں پر مبنی ہیں۔ حقیقی نتیجے 10 نومبر (Bihar election result date 2020) کو آئیں گے، تبھی پتہ چلے گا کہ بہار میں اس بار کس کی حکومت بن رہی ہے۔





 

2015 میں بنی تھی نتیش کمار کی حکومت

سال 2015 کے بہار اسمبلی انتخابات میں راشٹریہ جنتا دل (آرجے ڈی) کو سب سے زیادہ 80 سیٹوں پر جیت ملی تھی۔ وہیں دوسرے نمبر پر نتیش کمار کی پارٹی جے ڈی یو تھی، جسے 71 سیٹیں حاصل ہوئی تھیں۔ اس کے علاوہ بی جے پی کو 54، کانگریس کو 27، ایل جے پی کو 2، آرایل ایس پی کو 2، ہم کو 1 اور دیگر کے حصے میں 7 سیٹیں گئی تھیں۔ 2015 اسمبلی انتخابات میں نتیش کمار کی جے ڈی یو نے آر جے ڈی - کانگریس کے ساتھ اتحاد کیا تھا اور واضح اکثریت حاصل کرتے ہوئے حکومت بنائی تھی۔ حالانکہ نتیش کمار نے بعد عظیم اتحاد سے الگ ہوکر استعفیٰ دے دیا تھا۔ اس کے بعد بی جے پی کے ساتھ مل کر حکومت سازی کی تھی۔


Published by: Nisar Ahmad
First published: Nov 07, 2020 08:55 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading