உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    SpiceJet In Trouble:ونڈشیلڈ میں شگاف اور فیول انڈیکٹر میں خرابی۔۔مشکل میں اسپائس جیٹ

    Spicejet کی فلائٹس میں خرابی کے مسلسل سات واقعات۔ مشکل میں ایئرلائنس!

    Spicejet کی فلائٹس میں خرابی کے مسلسل سات واقعات۔ مشکل میں ایئرلائنس!

    SpiceJet In Trouble: لائٹ انڈیکیٹر مشینری میں کوئی مسئلہ تھا لیکن اسے فوری طور پر ٹھیک نہیں کیا جا سکتا۔ چنانچہ مسافروں کو دبئی لے جانے کے لیے ایک اور طیارے کا انتظام کیا گیا۔ کراچی ایئرپورٹ کے ایک اور ذریعے نے بتایا کہ جہاز میں 150 کے قریب مسافر سوار تھے جنہیں کھانا اور ناشتہ فراہم کرایا گیا۔

    • Share this:
      SpiceJet In Trouble:اسپائس جیٹ(SpiceJet) کے لئے کل منگل کو ایک اور مشکل دن تھا کیونکہ ایئر لائن کی دہلی-دبئی پرواز(Delhi-Dubai Flight) کو فیول انڈیکیٹر(Fuel Indicator) میں خرابی کی وجہ سے کراچی (Karachi)کی طرف موڑ دیا گیا تھا اور اس کی کانڈلا-ممبئی پرواز(Kandla-Mumbai flight) کو ونڈشیلڈ میں شگاف آنے کے بعد مہاراشٹر کے دارالحکومت میں ترجیحی طور پر اتارا گیا۔

      منگل کو ہونے والے ان دو واقعات کے ساتھ ہی گزشتہ 17 دنوں میں اسپائس جیٹ طیارے میں تکنیکی خرابی کے واقعات کی کل تعداد سات ہو گئی ہے۔ ڈائریکٹوریٹ جنرل آف سول ایوی ایشن (ڈی جی سی اے) کے حکام کے مطابق ایوی ایشن ریگولیٹر تمام سات واقعات کی تحقیقات کر رہا ہے۔

      خرابی کی وجہ سے کراچی میں اُترا تھا جہاز
      حکام نے بتایا کہ جہاز کے بائیں ٹینک میں ایندھن کی مقدار میں غیر معمولی کمی اس وقت نظر آنے لگی جب منگل کی صبح دہلی سے دبئی جانے والا بوئنگ 737 میکس جہاز ہوا میں تھا، جس کی وجہ سے جہاز کا رخ کراچی کی طرف موڑ دیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ کراچی ایئرپورٹ پر چیک کیا گیا تو بائیں ٹینک سے کوئی رساو نہیں پایا گیا۔

      پاکستان سول ایوی ایشن اتھارٹی (پی سی سی اے) کے ایک اہلکار نے بتایا کہ اسپائس جیٹ کی دہلی-دبئی پرواز کے پائلٹ نے پاکستان کی فضائی حدود سے ٹیک آف کرتے وقت کنٹرول ٹاور سے رابطہ کیا اور بتایا کہ طیارے میں کچھ تکنیکی خرابی پیدا ہوگئی ہے۔

      لائٹ انڈیکیٹر میں تھی خرابی
      انہوں نے کہا کہ پائلٹ نے ہنگامی صورتحال میں طیارے کو لینڈ کرنے کی درخواست کی جس کی اجازت انسانی ہمدردی کی بنیاد پر دی گئی۔ اہلکار نے بتایا کہ اس کے بعد، پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز کے انجینئرز نے اسپائس جیٹ کے عملے کے ارکان کے ساتھ مل کر تکنیکی خرابی کو تلاش کرنے اور اسے ٹھیک کرنے کے لیے کام کیا۔

      یہ بھی پڑھیں:

      Railway Land Policy: آج کابینہ میں ریلوے اراضی اصلاحات پر بحث کا امکان، ریلوے کی نجکاری..؟

      یہ بھی پڑھیں:
      Explained: اترپردیش کا بندیل کھنڈ ایکسپریس وے تیار، شیڈول سے 8 مہینے پہلے تعمیر

      انہوں نے کہا کہ ظاہر ہے کہ طیارے کی لائٹ انڈیکیٹر مشینری میں کوئی مسئلہ تھا لیکن اسے فوری طور پر ٹھیک نہیں کیا جا سکتا۔ چنانچہ مسافروں کو دبئی لے جانے کے لیے ایک اور طیارے کا انتظام کیا گیا۔ کراچی ایئرپورٹ کے ایک اور ذریعے نے بتایا کہ جہاز میں 150 کے قریب مسافر سوار تھے جنہیں کھانا اور ناشتہ فراہم کرایا گیا۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: