உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہندوستانی ویکسین سرٹیفکیٹ کو 96 ممالک میں کیا گیا تسلیم، کیاآپ اب ان تمام ممالک کا کرسکتے ہیں سفر؟

    کووی شیلڈ کی دونوں ڈوز کے درمیان کا وقفہ ہوگا کم ، جلد ہوسکتا ہے فیصلہ : ذرائع

    کووی شیلڈ کی دونوں ڈوز کے درمیان کا وقفہ ہوگا کم ، جلد ہوسکتا ہے فیصلہ : ذرائع

    وزارت صحت (Health Ministry) کے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’اس وقت 96 ممالک نے ویکسین کے سرٹیفکیٹس کی باہمی شناخت پر اتفاق کیا ہے اور مسافروں کے ہندوستانی ویکسینیشن سرٹیفکیٹ کو تسلیم کرتے ہیں جو ڈبلیو ایچ او کی منظور شدہ ویکسین کے مکمل طور پر ٹیکے لگائے گئے ہیں‘‘۔

    • Share this:
      عالمی ادارہ صحت (WHO) کی جانب سے ہندوستانی کوویکسین کی منظٰوری کے بعد بیرون ملک سفر کرنے کے خواہشمند افراد کو راحت ملی ہے۔ اب وہ کئی ممالک کا سفر بھی کرسکتے ہیں، جہاں ہندوستانی ویکسین سرٹیفکیٹ کو تسلیم کیا جائے گا۔

      اسی ضمن میں 96 ممالک نے ہندوستان کے ساتھ مکمل ویکسین شدہ مسافروں کے ویکسین سرٹیفکیٹ کو باہمی طور پر تسلیم کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ وزارت صحت (Health Ministry) کے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’اس وقت 96 ممالک نے ویکسین کے سرٹیفکیٹس کی باہمی شناخت پر اتفاق کیا ہے اور  مسافروں کے ہندوستانی ویکسینیشن سرٹیفکیٹ کو تسلیم کرتے ہیں جو ڈبلیو ایچ او کی منظور شدہ ویکسین کے مکمل طور پر ٹیکے لگائے گئے ہیں‘‘۔ بین الاقوامی دورے کرنے کے خواہشمند لوگوں کے لیے اس اقدام کا کیا مطلب ہے؟

      ریاستہائے متحدہ نے بھی 8 نومبر سے ویکسین لگوانے والے مسافروں کے لیے اپنے دروازے کھول دیے ہیں۔
      ریاستہائے متحدہ نے بھی 8 نومبر سے ویکسین لگوانے والے مسافروں کے لیے اپنے دروازے کھول دیے ہیں۔


      وہ ممالک جنہوں نے ہندوستانی ویکسین سرٹیفکیٹس کو تسلیم کرنے پر اتفاق کیا ہے

      ان 96 ممالک میں کینیڈا، امریکا، برطانیہ، فرانس، جرمنی، بیلجیم، آئرلینڈ، ہالینڈ، اسپین، بنگلہ دیش، مالی، گھانا، سیرا لیون، انگولا، نائجیریا، بینن، چاڈ، ہنگری، سربیا، پولینڈ، سلوواک ریپبلک، شامل ہیں۔ سلووینیا، کروشیا، بلغاریہ، ترکی، یونان، فن لینڈ، ایسٹونیا، رومانیہ، مالڈووا، البانیہ، جمہوریہ چیک، سوئٹزرلینڈ، لیختنسٹین، سویڈن، آسٹریا، مونٹی نیگرو، کینیڈا اور آئس لینڈ شامل ہیں۔

      تاہم کینیڈا کے ہائی کمیشن نے منگل کو کہا تھا کہ وہ ابھی تک Covaxin کو تسلیم نہیں کرتا ہے اور ویکسین بنانے والی کمپنی Bharat Biotech کو کلینیکل ٹرائلز سے متعلق تمام ڈیٹا اور شواہد کے ساتھ درخواست جمع کرانے کی ضرورت ہے۔

      کیا اس اقدام سے سفر کو آسان بنانے میں مدد ملے گی؟

      منگل کو مرکزی وزیر صحت منسکھ منڈاویہ کے ذریعہ اعلان کردہ اس اقدام سے توقع ہے کہ ہندوستانی تیار کردہ ویکسین Covishield اور Covaxin سے ٹیکے لگانے والوں کے سفر میں آسانی ہوگی۔ وزارت صحت نے کہا کہ وہ لوگ جو بیرون ملک سفر کرنا چاہتے ہیں، بین الاقوامی سفری ویکسینیشن سرٹیفکیٹ CoWIN پورٹل سے ڈاؤن لوڈ کیا جا سکتا ہے۔

      یہ اعلان برطانیہ کے اعلان کے ایک دن بعد سامنے آیا ہے کہ وہ 22 نومبر سے اندرون ملک سفر کے لیے ہندوستان کی کوویکسین ویکسین کو منظور شدہ کوویڈ 19 ویکسین کے طور پر تسلیم کیا گیا۔

      ریاستہائے متحدہ نے بھی 8 نومبر سے ویکسین لگوانے والے مسافروں کے لیے اپنے دروازے کھول دیے ہیں۔ حال ہی میں اس نے اپنی منظور شدہ ویکسین کی فہرست کو اپ ڈیٹ کیا ہے اور ان لوگوں کو گرین لائٹ دی ہے جنہیں Covaxin سے ٹیکہ لگایا گیا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: