உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    AAP اور BJP آمنے سامنے، دہلی اسمبلی میں رات بھر کیلئے دھرنا پر بیٹھے پارٹیوں کے ممبران اسمبلی

    AAP اور BJP آمنے سامنے، دہلی اسمبلی میں رات بھر کیلئے دھرنا پر بیٹھے پارٹیوں کے ممبران اسمبلی

    AAP اور BJP آمنے سامنے، دہلی اسمبلی میں رات بھر کیلئے دھرنا پر بیٹھے پارٹیوں کے ممبران اسمبلی

    Delhi News : ممبران دیر شام تک ایوان میں ہی رہے اور ایل جی وی کے سکسینہ پر بدعنوانی کا الزام لگاتے ہوئے ان کے استعفی اور جانچ کی مانگ کرنے لگے ۔ اس کے بعد عام آدمی پارٹی کے ممبران نے رات بھر اسمبلی کے احاطہ میں دھرنا دینے کا اعلان کردیا ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | New Delhi | New Delhi
    • Share this:
      نئی دہلی : دہلی اسمبلی میں پیر کو ایوان میں جم کر ہنگامہ ہوا ۔ خصوصی اجلاس کے دوران وزیر اعلی کیجریوال نے اعتماد کے ووٹ کی تحریک پیش کی ۔ اس دوران اپوزیشن بی جے پی ممبران اسمبلی نے جم کر ہنگامہ کیا تو مارشلوں کے ساتھ انہیں ایوان سے باہر کردیا گیا ۔ بات یہیں پر نہیں ختم ہوئی۔ ایوان منگل کی صبح گیارہ بجے تک کیلئے ملتوی ہوا تو عام آدمی پارٹی کے ممبران نے ہنگامہ شروع کردیا ۔ ممبران دیر شام تک ایوان میں ہی رہے اور ایل جی وی کے سکسینہ پر بدعنوانی کا الزام لگاتے ہوئے ان کے استعفی اور جانچ کی مانگ کرنے لگے ۔ اس کے بعد عام آدمی پارٹی کے ممبران نے رات بھر اسمبلی کے احاطہ میں دھرنا دینے کا اعلان کردیا ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: جموں و کشمیر میں مضبوط سیاسی کھلاڑی کے طور پر ابھر رہے ہیں غلام نبی آزاد


      عام آدمی پارٹی کے ممبران کی جانب سے رات بھر دھرنا کی بات سامنے آنے کے کچھ ہی دیر بعد بی جے پی کی طرف سے بھی ایسا ہی اعلان کردیا گیا ۔ بی جے پی نے کہا کہ پارٹی کے ممبران اسمبلی مبینہ بدعنوانی کے سلسلے میں منیش سسودیا اور ستیندر جین کو برخاست کرنے کی مانگ کو لے کر وہاں رات بھر دھرنا دیں گے ۔


      یہ بھی پڑھئے:  راجوری اور پونچھ سے دراندازی کی پاکستان کیوں کررہا سازش؟ ماہرین نے بتائی یہ وجہ


      بی جے پی کے ایک بیان میں اپوزیشن لیڈر رام ویر سنگھ بدھوڑی نے کہا کہ پارٹی ممبران اسمبلی اس لئے دھرنے پر بیٹھنے کیلئے مجبور ہیں ، کیونکہ اسمبلی میں ان کی بات نہیں سنی گئی ہے ۔ بی جے پی کے سبھی آٹھ ممبران اسمبلی پیر اور جمعہ کو دہلی اسمبلی کے خصوصی سیشن کی کارروائی میں شامل نہیں ہوئے تھے ، کیونکہ انہیں دونوں دن ایوان سے باہر کردیا گیا تھا ۔

      پارٹی نے اپنے بیان میں کہا کہ اس کے ممبران اسمبلی کو پیر کو پھر سے دہلی اسمبلی سے غیر آئینی طور پر نکالا گیا اور کسی بھی معاملہ کو اٹھانے کی اجازت نہیں دی گئی ۔ پارٹی نے کہا کہ آج دوپہر اپوزیشن لیڈر بدھوڑی کی صدارت میں بی جے پی لیجسلیچر پارٹی کی میٹنگ ہوئی اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ بی جے پی کے ممبران، اسمبلی کے احاطہ میں شہید اعظم بھگت سنگھ ، راج گرو اور سکھدیو کے مجمسہ کے پاس دھرنے پر بیٹھیں گے ۔ یہ احتجاج رات بھر جاری رہے گا۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: