اپنا ضلع منتخب کریں۔

    پنجاب پولیس کا ریاست بھر میں کارڈن اینڈ سرچ آپریشن،گھروں اور گاڑیوں کی لی گئی تلاشی۔

     ریاستی حکومت نے سوشل میڈیا سمیت عوام میں ہتھیاروں کی نمائش پر پابندی لگا دی ہے اور اگر کسی نے حکم کی خلاف ورزی کی تو کارروائی کی جائے گی۔

    ریاستی حکومت نے سوشل میڈیا سمیت عوام میں ہتھیاروں کی نمائش پر پابندی لگا دی ہے اور اگر کسی نے حکم کی خلاف ورزی کی تو کارروائی کی جائے گی۔

    پنجاب پولیس نے منگل کے روز ریاست بھر میں غیر سماجی عناصر اور منشیات کے سمگلروں کی نقل و حرکت کو روکنے کے لیے ایک خصوصی کارڈن اینڈ سرچ آپریشن کیا۔یہ آپریشن صبح گیارہ بجے سے شام چار بجے تک چلایا گیا۔پولیس کے ڈائریکٹر جنرل نے ریاستی حکومت کے ہتھیاروں کے لائسنسوں پر نظرثانی کے حالیہ اقدام کے بارے میں پوچھے جانے پر کہا کہ، ڈپٹی کمشنروں کے ساتھ مل کر لائسنسوں کی تصدیق کے لیے ایک مہم شروع کی جائے گی۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Punjab | Chandigarh | Ludhiana | Delhi
    • Share this:
      پنجاب پولیس نے منگل کے روز ریاست بھر میں غیر سماجی عناصر اور منشیات کے سمگلروں کی نقل و حرکت کو روکنے کے لیے ایک خصوصی کارڈن اینڈ سرچ آپریشن کیا۔ یہ آپریشن صبح گیارہ بجے سے شام چار بجے تک چلایا گیا اور ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل، انسپکٹر جنرل اور ڈپٹی انسپکٹر جنرل کے رینک کے کئی سینئر افسران اس میں مصروف تھے۔

      پولیس کے ڈائریکٹر جنرل گورو یادو نے کہا کہ مشتبہ افراد کی تلاش اور گھروں کی مکمل تلاشی سینئر افسران کی نگرانی میں کی گئی۔ سخت نگرانی کو یقینی بنانے کے لیے سونگھنے والے کتے  اور ڈرونز کو بھی ہاٹ سپاٹ پر تعینات کیا گیا تھا۔

      یادو نے لدھیانہ میں آپریشن کی قیادت کی اور ان کے ساتھ اے ڈی جی پی گرپریت کور اور کمشنر پولیس لدھیانہ مندیپ سنگھ سدھو بھی شامل ہوئے۔

      یادو نے میڈیا کو بتایا کہ، ریاستی سطح پر کارڈن اینڈ سرچ آپریشن کے پیچھے کا مقصد عوام کے اعتماد کو بڑھانا اور غیر سماجی عناصر میں خوف پیدا کرنے کے لیے پولیس اہلکاروں کی موجودگی میں اضافہ کرنا تھا، جس سے ریاست میں امن اور ہم آہنگی برقرار رہے گی۔

      انہوں نے کہا کہ یہ آپریشن ضلعی پولیس فورسز کی طرف سے ڈیٹا کے تجزیہ کے ذریعے منشیات اور جرائم کے مراکز کی نشاندہی کے بعد کیا گیا۔

      یادو نے ریاستی حکومت کے ہتھیاروں کے لائسنسوں پر نظرثانی کے حالیہ اقدام کے بارے میں پوچھے جانے پر کہا کہ، ڈپٹی کمشنروں کے ساتھ مل کر لائسنسوں کی تصدیق کے لیے ایک مہم شروع کی جائے گی۔ اب تک جاری کیے گئے تمام اسلحہ لائسنسوں کی فزیکل تصدیق کی جائے گی، اور کوئی نیا لائسنس جاری نہیں کیا جائے گا جب تک کہ اگلے تین ماہ میں پچھلے لائسنس کی فزیکل تصدیق مکمل نہیں ہو جاتی۔

      یہ بھی پڈھیں:ایل اےسی پرفوجیوں کی تیزی سےنقل وحرکت، ہندوستان کی جانب سےسرحدی رابطوں میں اضافہ



      یادو نے  مزید کہا کہ ریاستی حکومت نے سوشل میڈیا سمیت عوام میں ہتھیاروں کی نمائش پر پابندی لگا دی ہے اور اگر کسی نے حکم کی خلاف ورزی کی تو کارروائی کی جائے گی۔

      یادو نے یہ بھی کہا کہ یہ دیکھا گیا ہے کہ ساٹھ فیصد جرائم میں لائسنس یافتہ ہتھیاروں کا استعمال کیا گیا ہے اور ہم بڑے پیمانے پر گن ہاؤسز کی جانچ بھی کریں گے۔

      ایک اور سوال کا جواب دیتے ہوئے یادو نے کہا کہ کسی بھی برادری کے خلاف نفرت انگیز تقریر کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی، اور پنجاب پولیس کا سائبر ونگ خلاف ورزیوں کو روکنے کے لیے سوشل میڈیا پر نظر رکھے گا۔

      لدھیانہ میں، گورہا کالونی، امبیڈکر کالونی، موتی نگر اور پیرو بنڈہ جیسے علاقوں میں آپریشن کیا گیا اور چار مشتبہ افراد کو پکڑا گیا۔ پولیس نے بتایا کہ گورہ کالونی آسو میں تلاشی کے دوران بارہ گرام ہیروئن برآمد ہوئی۔ موہالی میں پولیس نے 71 مشتبہ افراد کو پکڑ لیا۔

      اتوار کو پنجاب میں اے اے پی حکومت نے بندوق کی ثقافت اور تشدد کو فروغ دینے والے آتشیں ہتھیاروں اور گانوں کی عوامی نمائش پر پابندی لگا دی۔

      بھگونت مان حکومت ریاست میں مبینہ طور پر بگڑتی ہوئی امن و امان کی صورت حال کو لے کر اپوزیشن پارٹیوں کی تنقید کی زد میں ہے۔
      Published by:Mudasir Mir
      First published: