உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Afghanistan Crisis:افغانستان کےبحران پرآل پارٹی میٹنگ آج،حکومت ان سوالات کےدےسکتی ہےجواب

    اقوام متحدہ میں ایس جے شنکر نے کہا : کسی بھی دہشت گردانہ کارروائی کا کوئی جواز نہیں ہوسکتا ۔ فائل فوٹو ۔

    اقوام متحدہ میں ایس جے شنکر نے کہا : کسی بھی دہشت گردانہ کارروائی کا کوئی جواز نہیں ہوسکتا ۔ فائل فوٹو ۔

    توقع ہے کہ اجلاس 90 سے 120 منٹ تک جاری رہے گا۔ ذرائع نے بتایا کہ حکومت ارکان پارلیمنٹ کو زمینی صورتحال اور ہندوستانیوں کے انخلاء پر کے بارے میں بھی آگاہ کرے گی۔ حکومت اس بارے میں بھی معلومات دے سکتی ہے کہ اس وقت طالبا ن کو لیکر ہندوستان کاموقف کیا ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:حکومت ہند نے افغانستان میں ہونے والی پیش رفت کے متعلق آج یعنی جمعرات کو کل جماعتی اجلاس طلب کیا ہے۔ پارلیمانی امور کے وزیر پرہلاد جوشی نے کہا تھا کہ وزیر خارجہ ایس جے شنکر افغانستان کی موجودہ صورتحال کے بارے میں سیاسی جماعتوں کی پارلیمانی پارٹیوں کے رہنماؤں کو آگاہ کریں گے۔ جوشی نے ٹویٹ کیا تھا ، "سیاسی جماعتوں کی پارلیمانی پارٹیوں کے رہنماؤں کو وزیر خارجہ ڈاکٹر ایس جے شنکر 26 اگست ، صبح 11 بجے مرکزی کمیٹی روم ، پارلیمنٹ ہاؤس اینیکسی ، نئی دہلی میں افغانستان کی موجودہ صورتحال کے بارے میں تفصیلات شیئر کرینگے۔ ای میل کے ذریعے دعوت نامے بھیجے جا رہے ہیں۔ تمام متعلقہ حضرات سے شرکت کی درخواست ہے۔

      وزیر خارجہ کے علاوہ پارلیمانی امور کے وزیر پرہلاد جوشی ، پارلیمانی امور کے وزیر مملکت ارجن رام میگھوال ، لوک سبھا کے ڈپٹی لیڈر اور وزیر دفاع راجناتھ سنگھ ، راجیہ سبھا میں قائد ایوان اور مرکزی وزیر پیوش گوئل ، ڈپٹی لیڈر اور مرکزی وزیر مختار عباس نقوی ، وزیر مملکت برائے خارجہ اس میٹنگ میں موجود رہیں گے۔ وی مرلیدھرن ، میناکشی لیکھی اور راج کمار سنگھ بھی شرکت کرینگے۔


      اپوزیشن کے یہ لیڈرمیٹنگ میں شامل ہو سکتے ہیں میٹنگ کے تناظر میں مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے کہا کہ ان کی پارٹی ترنمول کانگریس کے نمائندے میٹنگ میں شرکت کریں گے۔ ترنمول کانگریس کے سربراہ بنرجی نے کولکاتا کے ریاستی سیکرٹریٹ میں کہا ، "ہم افغانستان کے بارے میں کل جماعتی اجلاس میں ضرور شرکت کریں گے۔"

      اپوزیشن کی طرف سے میٹنگ میں شرکت کرنے والے کچھ نمایاں لیڈر ہیں،کانگریس سے ملیکارجن کھرگے اور ادھیر رنجن چودھری ، ٹی ایم سی سے پروفیسر سوگاتا رائے اور سکھندو شیکھر رائے ، سماج وادی پارٹی کے پروفیسر رام گوپال یادو ، بی ایس پی سے ستیش مشرا ، سابق وزیر دفاع اور این سی پی سربراہ شرد پوار ، اے آئی ایم آئی ایم کے سربراہ اسد الدین اویسی ، سی پی آئی کے رکن پارلیمنٹ بنوئے وشوام سمیت دیگر رہنما اجلاس میں شریک ہوسکتے ہیں۔

      حکومت اور اپوزیشن کے درمیان ہونگے سوال و جواب

      میٹنگ کے بعد حکومت کی بریفنگ متوقع ہے کہ وہ افغانستان سے ہندوستانیوں کے انخلاء پر تو جہ مرکوز کیے ہوئے ہیں اور اس میں حکومت کی وہاں کی صورتحال کے جائزے کے بارے میں معلومات بھی شامل ہو سکتی ہیں۔ سی این این نیوز 18 نے اپنی رپورٹ میں حکومتی ذرائع کے مطابق کْل جماعتی میٹنگ کا آغاز وزیر خارجہ کے خطاب سے ہوگا ۔ اس کے بعد ہندوستان کے سیکریٹری خارجہ ہرش شرنگلا کی جانب سے پریزنٹیشن دی جائے گی۔ میٹنگ ختم ہونے سے پہلے سوال و جواب کا دور ہوگا۔ توقع ہے کہ اجلاس 90 سے 120 منٹ تک جاری رہے گا۔ ذرائع نے بتایا کہ حکومت ارکان پارلیمنٹ کو زمینی صورتحال اور ہندوستانیوں کے انخلاء پر کے بارے میں بھی آگاہ کرے گی۔ حکومت اس بارے میں بھی معلومات دے سکتی ہے کہ اس وقت طالبا ن کو لیکر ہندوستان کا
      Published by:Mirzaghani Baig
      First published: