طاق - جفت پرزبردست سیاست، بی جے پی لیڈروجےگوئل نےتوڑا ضابطہ تووزیرٹرانسپورٹ نےدیا گلدستہ

دہلی میں طاق - جفت فارمولہ نافذ ہونےکے پہلے ہی روزرکن پارلیمنٹ وجےگوئل نے ضابطہ توڑکراس کی مخالفت کی۔ وہیں دہلی کے وزیرٹرانسپورٹ کیلاش گہلوت ان کے گھرپہنچےاوران کوگلدستہ پیش کیا۔

Nov 04, 2019 08:17 PM IST | Updated on: Nov 04, 2019 08:20 PM IST
طاق - جفت پرزبردست سیاست، بی جے پی لیڈروجےگوئل نےتوڑا ضابطہ تووزیرٹرانسپورٹ نےدیا گلدستہ

بی جے پی رکن پارلیمنٹ وجے گوئل طاق- جفت فارمولے کی مخالفت کرنے نکل پڑے۔

نئی دہلی: دارالحکومت دہلی میں طاق - جفت (آڈ- ایون) فارمولہ نافذ ہونے سےآلودگی کم ہویا نہ ہو، لیکن دہلی کی سیاست زبردست طریقے سےگرم ہوگئی ہے۔ طاق - جفت فارمولہ نافذ ہونےکے پہلے ہی روز بی جے پی رکن پارلیمنٹ وجےگوئل نے ضابطہ توڑ کراس کی مخالفت کی۔ وہیں اس کے بعد دہلی کے وزیرٹرانسپورٹ کیلاش گہلوت بی جے پی کے سینئر لیڈروجے گوئل کےگھرپہنچےاوران کوگلدستہ پیش کیا۔  کیلاش گہلوت نےاس کے ساتھ ہی وجےگوئل سے طاق - جفت ضوابط پرعمل کرنےکےلئےبھی کہا۔

دراصل وجے گوئل طاق - جفت کی مخالفت کرنےکےلئے پیرکواپنی کارلےکرنکلے تھے۔ طاق تاریخ کوجفت نمبرکی کارہونے پرپولیس نے وجےگوئل کا چالان کاٹ دیا۔ اس پروجے گوئل نےکہا کہ وہ چالان بھرنےکےلئےتیارہیں۔ اس کے بعد اروند کیجریوال حکومت میں وزیرٹرانسپورٹ کیلاش گہلوت  گلدستہ لےکروجے گوئل کےگھرپہنچ گئے۔

Loading...

وجےگوئل کا کہنا ہےکہ دہلی میں طاق - جفت فارمولہ نافذ ہونے سےآلودگی میں کوئی کمی نہیں ہونے والی ہے۔ انہوں نےکہا کہ گزشتہ سال کی آلودگی کے ریکارڈ کو دیکھا جائےتوپتہ چلتا ہےکہ طاق - جفت کے دوران دہلی میں آلودگی میں کمی نہیں آئی ہے۔ وجے گوئل نےکہا کہ دہلی کی کیجریوال حکومت اس طرح کے ضوابط لگا کرعوام کو پریشان کررہی ہے۔ اس سے لوگوں کوفائدہ نہیں بلکہ نقصان ہورہا ہے۔ عوام کوایک مقام سے دوسرے مقام پرجانے میں پریشانی ہورہی ہے۔

آج جفت نمبرکی گاڑیوں کو چھوٹ

دہلی میں آج طاق - جفت فارمولہ نافذ ہونےکا پہلا دن ہے۔ آج جفت نمبرکی گاڑیوں جیسے 0,2,4,6,8  نمبروالی گاڑیوں کے سڑک پرنکلنےکی چھوٹ ہے جبکہ آئندہ روزجیسے 1,3,5,7,9 نمبروالی گاڑیاں سڑکوں پراتریں گی۔

انہیں ملے گی اس ضابطے سے چھوٹ

طاق - جفت کےدائرے میں دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال سمیت ان کے سبھی وزراء بھی آئیں گے، لیکن صدرجمہوریہ، نائب صدرجمہوریہ، وزیراعظم، سپریم کورٹ کے جج، لوک سبھا اسپیکر، مرکزی وزراء، لوک سبھا اورراجیہ سبھا میں اپوزیشن لیڈر، لیفٹیننٹ گورنراس کے دائرے میں نہیں آئیں گے۔ عام لوگوں کی بات کریں تو خواتین، معذورافراد اور ایمبولینس کواس سے چھوٹ ملے گی۔ اگرکوئی اس ضابطے کی خلاف ورزی کرتا ہے تو اسے چارہزارجرمانہ ادا کرنا پڑے گا۔ گزشتہ بارجرمانے کی رقم دو ہزار روپئے تھی۔

Loading...