ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

ارونا چل پردیش میں جے ڈی یو کو جھٹکا دینے کے بعد بہار کے بی جے پی لیڈر نے کہا- وزارت داخلہ چھوڑ دیں نتیش کمار

اروناچل پردیش (Arunachal Pradesh) میں جے ڈی یو (JDU) کو جھٹکا دینے کے بعد بی جے پی (BJP) نے بہار (Bihar) میں بھی نتیش کمار (Nitish Kumar) کے طریقہ کار پر سوال اٹھانے شروع کردیئے ہیں۔

  • Share this:
ارونا چل پردیش میں جے ڈی یو کو جھٹکا دینے کے بعد بہار کے بی جے پی لیڈر نے کہا- وزارت داخلہ چھوڑ دیں نتیش کمار
ارونا ل جے ڈی یو کو جھٹکا دینے کے بعد بہار کے بی جے پی لیڈر نے کہا- وزارت داخلہ چھوڑ دیں نتیش کمار

پٹنہ: اروناچل پردیش (Arunachal Pradesh) میں جنتا دل یونائیٹیڈ (جے ڈی یو) کو جھٹکا دینے کے بعد بی جے پی (BJP) نے بہار میں بھی نتیش کمار (Nitish Kumar) کے طریقہ کار پر سوال اٹھانے شروع کردیئے ہیں۔ اروناچل پردیش میں جے ڈی یو کے 7 میں سے 6 اراکین اسمبلی کو بی جے پی میں شامل کرا دیا گیا ہے۔ جبکہ بہار میں بی جے پی اور جے ڈی یو کی اتحادی حکومت ہے۔ اس کے بعد بہار بی جے پی کے لیڈر اور سابق مرکزی وزیر سنجے پاسوان کا بڑا بیان سامنے آیا ہے۔ سنجے پاسوان نے اپنے بیان میں بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار کے طریقہ کار پر ہی سوال اٹھا دیئے ہیں۔


سابق مرکزی وزیر سنجے پاسوان نے گزشتہ ہفتہ بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار کو لے کر بیان دیا۔ انگریزی اخبار انڈین ایکسپریس میں شائع رپورٹ کے مطابق، سنجے پاسوان نے بیان میں وزیر اعلیٰ نتیش کمار کو وزارت داخلہ کو کسی اور کو سونپنے کے لئے کہا۔ واضح رہے کہ بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار کے پاس وزارت داخلہ، نگرانی اور جنرل ایڈمنسٹریشن محکمہ جات کے انچارج میں ہیں۔ واضح رہے کہ اروناچل پردیش میں جے ڈی یو اراکین اسمبلی کی ٹوٹ سے بہار میں سیاست گرم ہوگئی ہے۔


سابق مرکزی وزیر سنجے پاسوان نے کہی یہ بات


سنجے پاسوان نے کہا کہ نتیش کمار پر بہت سارے کاموں کے بوجھ ہیں۔ انہیں وزارت داخلہ کسی اور کو دے دینا چاہئے، میں یہ نہیں کہہ رہا ہوں کہ انہیں یہ وزارت بی جے پی کو سونپ دینی چاہئے۔ کچھ دیگر جے ڈی یو کے لیڈر کو عہدہ سنبھالنے دیں’۔ یہ پوچھے جانے پر کہ کیا ان کا مطالبہ لا اینڈ آرڈر کی وجہ سے ہے۔ سنجے پاسوان نے کہا، ہاں! لا اینڈ آرڈر بگڑنے کے معاملے پر موثر طریقے سے کام کرنے کی ضرورت ہے۔ گزشتہ دو ہفتوں میں ریاست میں دو درجن سے زیادہ لوگ مارے گئے ہیں۔ 6 اراکین اسمبلی کے بی جے پی میں چلے جانے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے سنجے پاسوان نے کہا، ’ہمارے پاس اس پر کہنے کے لئے کچھ بھی نہیں ہے’۔ واضح رہے کہ اروناچل پردیش کے سانحہ کو لے کر جے ڈی یو کے جنرل سکریٹری کے سی تیاگی نے پٹنہ میں کہا کہ اس سیاسی سانحہ سے اتحادی دھرم کو تکلیف ہوئی ہے۔ حالانکہ اس سے بہار میں جے ڈی یو - بی جے پی اتحاد کو کوئی فرق نہیں پڑے گا۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Dec 27, 2020 09:11 AM IST