ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

وزیر اعظم کی میٹنگ کے بعد محبوبہ مفتی نے پھر اپالا پاکستان راگ ، جانئے کیا کہا

محبوبہ مفتی (Mehbooba Mufti) نے کہا کہ سرکار چین کے ساتھ بات کررہی ہے ، جہاں لوگوں کی کوئی شمولیت نہیں ہے ، پاکستان کے ساتھ جنگ بندی کرائی ، دراندازی کم کرائی ، کشمیر کے لوگوں کو سکون ملتا ہے تو آپ کو پھر پاکستان سے بات کرنی چاہئے ۔

  • Share this:
وزیر اعظم کی میٹنگ کے بعد محبوبہ مفتی نے پھر اپالا پاکستان راگ ، جانئے کیا کہا
وزیر اعظم کی میٹنگ کے بعد محبوبہ مفتی نے پھر اپالا پاکستان راگ ، جانئے کیا کہا ۔ فائل فوٹو ۔

نئی دہلی : جموں و کشمیر کو لے کر ہونے والی اہم میٹنگ سے پہلے بھی ریاست کی سابق وزیر اعلی محبوبہ مفتی نے پاکستان کا راگ الاپا تھا اور وزیر اعظم مودی کے ساتھ ریاست کے لیڈروں کی میٹنگ کے بعد ایک مرتبہ پھر انہوں نے کہا کہ ہندوستان کو پاکستان کے ساتھ بات کرنی چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ اگر کشمیر کے لوگوں کو بات چیت سے سکون ملتا ہے تو نئی دہلی کو پاکستان سے بات کرنی چاہئے ۔ بتادیں کہ گپکار ایلائنس کے ساتھی فاروق عبداللہ نے محبوبہ مفتی کے پاکستان والے بیان سے کنارہ کشی اختیار کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہیں پاکستان کی بات نہیں کرنی ہے اور وہ اپنے وطن کو لے کر اپنے  ملک کے وزیر اعظم سے بات کرنے آئے ہیں ۔


محبوبہ مفتی نے پاکستان سے بات چیت کی وکالت کرتے ہوئے کہا کہ سرکار چین کے ساتھ بات کررہی ہے ، جہاں لوگوں کی کوئی شمولیت نہیں ہے ، پاکستان کے ساتھ جنگ بندی کرائی ، دراندازی کم کرائی ، کشمیر کے لوگوں کو سکون ملتا ہے تو آپ کو پھر پاکستان سے بات کرنی چاہئے ۔ کشمیر میں جو سختی ہے وہ بھی بند ہونی چاہئے ۔


میٹنگ کے بعد انہوں نے کہا کہ کشمیر کے لوگ مصیبت برداشت کر رہے ہیں ۔ پانچ اگست 2019 کے بعد غصے میں ہیں ، ناراضگی میں ہیں ۔ کشمیر میں جس طریقہ سے 370 کو ہٹایا گیا وہ جموں و کشمیر کے لوگوں کو منظور نہیں ہے ۔ بی جے پی نے غیر قانونی طریقہ سے اس کو ہٹایا ، ہم جموں و کشمیر میں 370 بحال کریں گے ، یہ ہماری شناخت کی بات ہے ، سابق وزیر اعظم جواہر لال نہرو اور سردار ولبھ بھائی پٹیل نے یہ قانون ہمیں خود دیا تھا ۔


وہیں دوسری طرف جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلی اور کانگریس کے سینئر رہنما غلام نبی آزاد نے کہا کہ انہوں نے اجلاس میں پانچ نکاتی مطالبات پیش کیے تھے ، جن میں جموں و کشمیر کو مکمل ریاست دینا ، اسمبلی انتخابات کروانا اور جمہوریت کی بحالی ، کشمیری پنڈتوں کی بازآباد کاری یقینی بنانا، سیاسی قیدیوں کی رہائی اور منتقلی کے قوانین میں تبدیلی شامل ہیں۔

غلام نبی آزاد نے کہا کہ وزیر داخلہ امت شاہ نے کہا کہ حکومت جموں و کشمیر کو مکمل ریاست دینے کے لئے پرعزم ہے۔ اجلاس کے بعد کانگریس کے سینئر رہنما غلام نبی آزاد نے کہا کہ تقریبا تمام رہنماوں نے ریاست میں جلد انتخابات اور جموں و کشمیر کے لئے مکمل ریاست کا مطالبہ کیا۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jun 24, 2021 10:03 PM IST