ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

امت شاہ کےبیان پراسدالدین اویسی کاسخت ردعمل،کہا۔مہلوکین اورمتاثرین کونہیں ملے گاانصاف

مجلس اتحادالمسلمین رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے بدھ کے روز کہا کہ مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے دہلی تشدد پر بحث کا جواب دیتے ہوئے لوک سبھا میں دہلی پولیس کا کھلے عام دفاع کیا۔

  • Share this:
امت شاہ کےبیان پراسدالدین اویسی کاسخت ردعمل،کہا۔مہلوکین اورمتاثرین کونہیں ملے گاانصاف
مجلس اتحاد المسلمین کے سربراہ اسدالدین اویسی: فائل فوٹو

نئی دہلی : مجلس اتحادالمسلمین رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے بدھ کے روز کہا کہ مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے دہلی تشدد پر بحث کا جواب دیتے ہوئے لوک سبھا میں دہلی پولیس کا کھلے عام دفاع کیا۔حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی کا کہنا ہے کہ امت شاہ کے بیان کے بعد اب کسی انصاف کی توقع نہیں کی جاسکتی ہے ۔وہ فخر سے کہے رہے کہ فرقہ وارانہ قتل عام صرف 36 گھنٹوں میں روک گیا۔تشدد کے لیے دہلی پولیس ہی ذمہ دار ہے اور مرکزی وزیرداخلہ دہلی پولیس کا دفاع کیا ہے


اسدالدین اویسی نے نیوز ایجنسی اے این آئی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ"دہلی پولیس کا دفاع کرنے کے پیچھے ایک ہی وجہ ہے کہ وہ (امت شاہ) نہیں چاہتے ہیں کہ خاص طور پر ان مسلمانوں کو انصاف فراہم کیا جائے ، جن کی جانیں ضائع ہوگئیں ، جن کے گھروں کو نذر آتش کردیا گیا تھا۔ امت شاہ کے بیان کے بعد کوئی انصاف نہیں کیا جائے گا۔


مجلس اتحادالمسلمین کے صدر نے کہاکہ جس طرح 1984 کے فسادات میں سکھوں کو انصاف نہیں ملا ۔ اسی طرح دہلی فسادات میں مرنے والے مسلمانوں کو انصاف نہیں ملے گا۔ہم نے انکوائریز ایکٹ کے تحت ایک کمیشن تشکیل دینے کا مطالبہ کیاہے۔ جس کی قیادت سپریم کورٹ یا ہائیکورٹ کے کسی جج سونپی جائے۔اسے بھی مسترد کردیاگیا۔ ایس آئی ٹی کیا کرے گی؟ دہلی میں یک طرفہ گرفتاریاں ہو رہی ہیں۔ اویسی نے کہا ، 1100 سے زائد مسلمان غیر قانونی نظربند ہیں۔


حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ نے کا کہنا ہے کہ امت شاہ نے اپنے ممبران پارلیمنٹ کے بارے میں کوئی بات نہیں کی۔ انہوں نے کپل مشرا کے بارے میں بات نہیں کی۔ جہاں تک وارث پٹھان کا تعلق ہے تو انہوں نے اپنی رائے واپس لی ہے۔ ان کے خلاف ایف آئی آر درج ہے۔ لیکن کیا انوراگ ٹھاکر کے خلاف کوئی ایف آئی آر درج کی گئی ہے یا کپل مشرا کے خلاف؟ حکومت ان کو بچانے کی کوشش کر رہی ہے۔ ملک اسے دیکھ رہا ہے۔اس سے پہلے امت شاہ نے کہا تھا کہ دہلی پولیس نے شہر کے دوسرے علاقوں میں فسادات کو پھیلنےنہیں دیا ۔ اسی لیے پولیس کی تعریف کی جانی چاہیے۔
First published: Mar 12, 2020 01:00 PM IST