ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

اویسی کی موجودگی میں وارث پٹھان کا متنازع بیان ، کہا : مسلمان 15 کروڑ مگر 100 کروڑ پر بھاری

وارث پٹھان نے متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا کہ اینٹ کا جواب پتھر سے دینا ہم نے سیکھ لیا ہے ۔ مگر اکٹھا ہوکر چلنا ہوگا ۔ اگر آزادی دی نہیں جاتی تو ہمیں چھیننی پڑے گی ۔ انہوں نے مزیدی کہا کہ مسلمان پندرہ کروڑ ہیں ، لیکن 100 کروڑ پر بھاری ہیں۔

  • UNI
  • Last Updated: Feb 20, 2020 09:15 PM IST
  • Share this:
اویسی کی موجودگی میں وارث پٹھان کا متنازع بیان ، کہا : مسلمان 15 کروڑ مگر 100 کروڑ پر بھاری
وارث پٹھان ۔ فائل فوٹو ۔

آل انڈیا مجلس اتحادالمسلمین (اے آئی اے آئی ایم ) کے قومی ترجمان وارث پٹھان نے حکومت کے خلاف جاری مسلمانوں کے احتجاجی مظاہرے پر اعتراض ظاہر کرنے والوں پر حملہ کرتے ہوئے بغیر کسی مذہب کا نام لیے کہا کہ ملک میں مسلمانوں کی تعداد اگرچہ 15 کروڑ سے کم ہو ، لیکن ضرورت پڑنے پر وہ 100 کروڑ پر بھاری پڑیں گے۔ وارث پٹھان نے كلبرگی میں ایک جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ابھی تو صرف مسلم خواتین باہر نکلی ہیں ۔ جب پوری کمیونٹی متحد ہوکر باہر نکلے گی ، تو اس وقت بہت واضح اثر پڑے گا۔


ممبئی کے بھائیکھلا سے سابق رکن اسمبلی وارث پٹھان نے متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا کہ اینٹ کا جواب پتھر سے دینا ہم نے سیکھ لیا ہے ۔ مگر اکٹھا ہوکر چلنا ہوگا ۔ اگر آزادی دی نہیں جاتی تو ہمیں چھیننی پڑے گی ۔ انہوں نے مزیدی کہا کہ مسلمان پندرہ کروڑ ہیں ، لیکن 100 کروڑ پر بھاری ہیں۔


قابل ذکر ہے کہ انہوں نے جب یہ بیان دیا تو وہاں حیدرآباد سے رکن پارلیمنٹ اور اے آئی ایم آئی ایم کے صدر اسد الدین اویسی بھی موجود تھے۔ وارث پٹھان کے اس اشتعال انگیز بیان سے کافی تنازعہ پیدا ہو گیا ہے اور سیاست بھی گرم ہو گئی ہے ۔ لیکن انہوں نے معافی مانگنے سے انکار کر دیا ہے۔


انہوں نے کہا کہ میں معافی نہیں مانگ رہا ہوں ۔ وارث پٹھان وہ آخری شخص ہے جو کسی بھی مذہب یا ملک کے خلاف بولے گا ۔ میرے بیان کو غلط اور توڑمروڑ کر پیش کیا گیا ہے۔ انہوں نے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) پر اشتعال انگیز تبصرہ کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ وہ مسلمانوں کو ہندوستان سے الگ کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔
First published: Feb 20, 2020 09:15 PM IST