உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آج سے Tataکی ہوگئی Air India, اب اس نئے پلان سے بھرے گی اڑان

     ٹاٹا گروپ کی ہوئی ایئر انڈیا

    ٹاٹا گروپ کی ہوئی ایئر انڈیا

    ایسا مانا جاتا ہے کہ اب ٹاٹا گروپ تین ایئر لائنز - ایئر انڈیا، ایئر انڈیا ایکسپریس اور وسٹارا کو چلائے گا۔ یہ گروپ ایئر ایشیا انڈیا اور ایئر انڈیا ایکسپریس کو ضم کرسکتا ہے۔ اس سے ملک کی ایئر لائن انڈسٹری میں ٹاٹا گروپ کا دبدبہ قائم ہو سکتا ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:ایئر انڈیا کی گھر واپسی ہوگئی ہے۔ 27 جنوری یعنی جمعرات کو ایئر انڈیا ٹاٹا گروپ کو سونپ دی جائے گی۔ اس ڈیل کی باقی بچی رسموں کو اگلے ایک دو دنوں میں پورا کرلیا جائے گا۔ ایئر انڈیا (Air India) کے ملازمین کو بھیجے ایک میسیج میں ایئر انڈیا کے فائنانس ڈائریکٹر ونود ہیزمادی نے بتایا تھا کہ 24 جنوری کو کمپنی کی بیلنس شیٹ بند کردی جائے گی، تا کہ ٹاٹا گروپ (Tata Group) اس کا جائزہ لے سکے۔ پچھلے سال 8 اکتوبر کو ٹاٹا گروپ نے ایئر انڈیا کی بِڈ جیتی تھی۔ Air India-Tata Group کی یہ ڈیل 18,000 کروڑ روپے میں ہوئی ہے۔ اس ڈیل کے تحت ایئر انڈیا کو ٹاٹا گروپ کی ہولڈنگ کمپنی Talace پرائیوٹ لمیٹیڈ کو بیچ دیا گیا ہے۔ بشمول ایئر انڈیا ایکسپریس اور گراؤنڈ ہینڈلنگ بازو AISATS کی فروخت۔ 2003-04 کے بعد یہ پہلی نجکاری ہے۔

      ایئر انڈیا گھریلو ہوائی اڈوں پر 4,480 اور بین الاقوانی سطح پر 2,738 لینڈنگ اور پارکنگ سلاٹ رکھتی ہے۔ ساتھ ہی بین الاقوامی ہوائی اڈوں پر پارکنگ کے کمپنی کے پاس قریب 900 سلاٹس ہیں۔

      یہ سلاٹ کمپنی کی بین الاقوامی بازار میں پہنچ اور پروازوں کے بارے میں بتاتے ہیں۔ جب کہ ایئر انڈیا کی سبسڈیئری Air India Express ہر ہفتے 665 پروازوں کا آپریشن کرتی ہے۔

      آئیے اب نئے پلان کے بارے میں جانتے ہیں۔۔۔
      معاہدے کے تحت، ٹاٹا گروپ کو ایئر انڈیا اور ایئر انڈیا ایکسپریس میں 100 فیصد اور گراؤنڈ ہینڈلنگ کمپنی AISATS میں 50 فیصد حصہ مل رہا ہے۔ ٹاٹا ایئر انڈیا اس سودے کے بدلے حکومت کو 2,700 کروڑ روپے نقد دے گا اور ایئر لائنز پر بقایا 15,300 کروڑ روپے کا قرض لے گا۔

      ایسا مانا جاتا ہے کہ اب ٹاٹا گروپ تین ایئر لائنز - ایئر انڈیا، ایئر انڈیا ایکسپریس اور وسٹارا کو چلائے گا۔ یہ گروپ ایئر ایشیا انڈیا اور ایئر انڈیا ایکسپریس کو ضم کرسکتا ہے۔ اس سے ملک کی ایئر لائن انڈسٹری میں ٹاٹا گروپ کا دبدبہ قائم ہو سکتا ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: