உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کچھ ایسی نظر آئے گی دنیا کی آخری سیلفی، دیکھتے ہی ڈر سے کانپ جائے گی روح

    Tiktok یوزرس Robot Overlords نے یہ تصاویر AI امیجز کے ذریعے بنائی ہیں۔ اس کے نتائج کافی پریشان کن تھے۔ جب دنیا ختم ہونے والی ہوگی تب لی گئی سیلفی دیکھ کر آپ کا دل کانپ جائے گا۔

    Tiktok یوزرس Robot Overlords نے یہ تصاویر AI امیجز کے ذریعے بنائی ہیں۔ اس کے نتائج کافی پریشان کن تھے۔ جب دنیا ختم ہونے والی ہوگی تب لی گئی سیلفی دیکھ کر آپ کا دل کانپ جائے گا۔

    Tiktok یوزرس Robot Overlords نے یہ تصاویر AI امیجز کے ذریعے بنائی ہیں۔ اس کے نتائج کافی پریشان کن تھے۔ جب دنیا ختم ہونے والی ہوگی تب لی گئی سیلفی دیکھ کر آپ کا دل کانپ جائے گا۔

    • Share this:
      دنیا میں فوٹوگرافی کا آغاز 1830 کی دہائی میں فرانس سے ہوا۔ بلیک اینڈ وائٹ تصویروں سے لے کر کلر فل کا سفر کافی دلچسپ تھا۔ اس کے بعد تھری ڈی سے کئی دوسری قسم کی تصویریں سامنے آئیں، سیلفی نے اس سمت میں انقلاب برپا کردیا۔ سیلفی کی ایجاد کے بعد اب تصاویر لینے کے لیے کسی اور پر انحصار نہیں کرنا پڑے گا لیکن کیا آپ نے کبھی سوچا ہے کہ دنیا کی آخری سیلفی کیسی ہوگی؟ سوشل میڈیا پر ایک شخص نے دنیا کی آخری سیلفی کی جھلک پوسٹ کی۔

      Tiktok یوزرس Robot Overlords نے یہ تصاویر AI امیجز کے ذریعے بنائی ہیں۔ اس کے نتائج کافی پریشان کن تھے۔ جب دنیا ختم ہونے والی ہوگی تب لی گئی سیلفی دیکھ کر آپ کا دل کانپ جائے گا۔ آرٹیفیشل انٹیلی جنس ٹیکنالوجی سے بنائی گئی تصاویر خوفزدہ کرنے والی ہیں۔ یہ DALL-E mini AI امیج جنریٹر کے ذریعہ بنائے گئے ہیں۔ یہ تصاویر سوشل میڈیا پر کافی وائرل ہو رہی ہیں۔ اس پر لوگ بڑی عجیب و غریب درخواستیں کر کے ان کی تصویریں بنواتے ہیں۔ اس میں روبوٹ نے دنیا کی آخری سیلفی دکھانے کی درخواست کی تھی۔

      اس صارف نے کچھ عرصہ قبل ایک ویڈیو شیئر کی تھی جس میں اس نے DALL-E mini AI امیج جنریٹر پر دنیا کی آخری سیلفی دکھانے کی درخواست کی تھی۔ لیکن جب اس کا نتیجہ سامنے آیا تو لوگ اور بھی حیران ہوئے۔ یہ تصاویر کمزور دلوں کے لیے نہیں ہیں۔ ان تصویروں میں نظر آنے والے انسانوں کو کئی طرح سے مسخ شدہ دیکھا گیا ہے۔ اس کے ساتھ  بیک گراؤنڈ میں زمین کی تباہی کو واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔ تصویروں میں نظر آنے والے زیادہ تر لوگ صرف ہڈیوں کا ڈھانچہ دکھائی دے رہے  ہیں۔ اس کے ساتھ ان کا چہرہ بھی بہت خوفناک لگ رہا ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: