உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اکھلیش یادو کی بی جے پی پر تنقید- بی جے پی میعاد میں پچھڑ رہا ہے اتر پردیش

    اکھلیش یادو کی بی جے پی پر تنقید- بی جے پی میعاد میں پچھڑ رہا ہے اتر پردیش

    اکھلیش یادو کی بی جے پی پر تنقید- بی جے پی میعاد میں پچھڑ رہا ہے اتر پردیش

    سماجو ادی پارٹی(ایس پی) سربراہ اکھلیش یادو نے بی جے پی حکومت کی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اس کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ریاست ترقی کی سیڑھیاں چڑھنے کے بجائے پچھڑتا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی حکومت کا پورا میعاد ناکامیوں کا ہے۔ اس نے کوئی کام مفاد عامہ میں نہیں کیا ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      لکھنؤ: سماجو ادی پارٹی (ایس پی) سربراہ اکھلیش یادو نے بی جے پی حکومت کی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اس کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ریاست ترقی کی سیڑھیاں چڑھنے کے بجائے پچھڑتا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی حکومت کا پورا میعاد ناکامیوں کا ہے۔ اس نے کوئی کام مفاد عامہ میں نہیں کیا ہے۔ ریاست کی ترقی کے بجائے مہنگائی، بے روزگاری پر کوئی کنٹرول نہیں ہے۔ نظم ونسق کی حالت کافی خستہ ہے۔ سچ تو یہ ہے کہ بی جے پی کو دو ہی کام آتے ہیں۔'جیبھ (زبان) چلانا اور جیپ چڑھانا' لوگوں کو کچلنا اور ان کی آواز کو دبانا ہی ان کا ایجنڈا ہے۔
      سابق وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو نے لکھنؤ کے ڈاکٹر رام منوہر لوہیا آڈیٹوریم میں بڑی تعداد میں یکجا ہوئے کارکنوں سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی عجیب پارٹی ہے، جو بغیر کچھ کئے ہی تال ٹھونک رہی ہے۔ بی جے پی کی ڈبل انجن حکومت نے سماج کے ہر طبقے کو پریشان کیا ہے۔ خود تو کچھ کیا نہیں سماج وادی پارٹی حکومت کے کاموں کو ہی اپنا بتا کر اشتہارات میں اسے شائع کرتی رہی ہے۔
      انہوں نے کہا کہ 2022 میں ہونے والے اسمبلی انتخابات سے قومی سیاست کا سمت طے ہوگا۔ جمہوریت کے لئے بھی یہ امتحان کی گھڑی ہے۔ بی جے پی کے ممکنہ سازشوں سے ہمیں محتاط رہنا ہے۔ چونکہ بی جے پی بہت شاطر ہے، اس لئے اس بارکوئی غلطی نہیں ہونی چاہئے۔ انہوں نےکہا کہ سماجو ادی پارٹی کارکنوں، لیڈروں کو بوتھ سطح تک پارٹی کی مضبوطی کے لئے لگنا ہوگا۔ سماجوادی پارتی کا کام کرنے میں کسی بھی سطح پر کوئی کوتاہی نہیں ہونی چاہئے۔ اکھلیش یادو نے کہا کہ ریاست کے حالات بگڑے ہوئے ہیں۔ سماجو ادی حکومت بننے پر ہی لوگوں کی پریشانیاں دور ہوں گی۔ کسانوں، نوجوانوں کے مفادات کا تحفظ ہوگا۔ اور روزی روزگار کا معقول انتظام ہوگا۔ تعلیمی نظام کو بہتر کریں گے۔ ریاست میں ترقی کے رکے ہوئے کاموں کو پھر سے پورا کرایا جائے گا۔

      Published by:Nisar Ahmad
      First published: