உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Mahindra شوروم میں کسان کے ساتھ بدسلوکی سے آنند مہندرا ناراض، کہا - یہ ہمارے...

    صنعتکار آنند مہندرا نے مہندرا شوروم میں کسان کے ساتھ بدسلوکی پر ناراضگی ظاہر کی۔

    صنعتکار آنند مہندرا نے مہندرا شوروم میں کسان کے ساتھ بدسلوکی پر ناراضگی ظاہر کی۔

    بتادیں کہ کمپنی کی طرف سے یہ وضاحت کرناٹک کے تماکورو میں مہندرا کے شوروم میں ہونے والے ایک واقعے کے بعد سامنے آئی ہے جہاں ایک کسان کے ساتھ اس کے لباس کی بنیاد پر بدتمیزی کی گئی۔ دراصل کیمپے گوڑا نامی کسان اپنے دوستوں کے ساتھ مہندرا کے ایس یو وی شو روم میں اپنی پسند کی کار خریدنے آیا تھا لیکن وہاں موجود ایک سیلز مین نے اس کے کپڑوں کو دیکھ کر اس کے ساتھ ایسا سلوک کیا کہ وہ کار نہیں خرید سکا۔

    • Share this:
      بنگلورو:کرناٹک میں مہندرا کے شوروم میں ایک کسان کے ساتھ ہوئی بدسلوکی کے معاملے میں بزنس مین آنند مہندرا (Anand Mahindra) نے ناراضگی ظاہر کی ہے۔ آنند مہندرا نے اس حوالے سے ٹویٹ کر کے اپنی کمپنی کی اقدار کے بارے میں بتایا ہے۔ انہوں نے لکھا، ’مہندرا رائز کا بنیادی مقصد ہماری کمیونٹیز اور تمام اسٹیک ہولڈرز کو اوپر اٹھنے کے قابل بنانا ہے اور ایک اہم قدر فرد کے وقار کو برقرار رکھنا ہے۔ اس فلسفے کے ساتھ کسی بھی گڑبڑی کو بہت جلد دور کیا جائے گا۔‘


      آنند مہندرا نے یہ بات مہندرا اینڈ مہندرا کے سی ای او وجے ناکرا کے ٹویٹ کو ری ٹویٹ کرتے ہوئے کہی۔ ناکرا نے اس واقعے سے متعلق ایک ٹویٹ میں لکھا کہ ’ڈیلرز گاہک پر مبنی تجربہ فراہم کرنے کا ایک لازمی حصہ ہیں اور ہم اپنے تمام صارفین کی عزت اور وقار کو یقینی بناتے ہیں۔ ہم واقعے کی تحقیقات کر رہے ہیں اور کسی بھی خلاف ورزی کی صورت میں مناسب کارروائی کریں گے جس میں فرنٹ لائن عملے کی مشاورت اور تربیت شامل ہے۔‘

      کیا تھا معاملہ
      بتادیں کہ کمپنی کی طرف سے یہ وضاحت کرناٹک کے تماکورو میں مہندرا کے شوروم میں ہونے والے ایک واقعے کے بعد سامنے آئی ہے جہاں ایک کسان کے ساتھ اس کے لباس کی بنیاد پر بدتمیزی کی گئی۔ دراصل کیمپے گوڑا نامی کسان اپنے دوستوں کے ساتھ مہندرا کے ایس یو وی شو روم میں اپنی پسند کی کار خریدنے آیا تھا لیکن وہاں موجود ایک سیلز مین نے اس کے کپڑوں کو دیکھ کر اس کے ساتھ ایسا سلوک کیا کہ وہ کار نہیں خرید سکا۔ سیلز مین نے کہا ’10 لاکھ روپے دور، آپ کی جیب میں 10 روپے بھی نہیں ہوں گے۔‘ اس کے بعد شو روم سے نکلنے سے پہلے کسان اور اس کے دوستوں نے کہا کہ اگر نقد لے آؤ تو کیا آج ڈلیوری ہو جائے گی۔ اس پر شوروم کے ایگزیکٹو نے رضامندی ظاہر کی اور کسان 30 منٹ میں 10 لاکھ روپے نقد لے کر واپس شو روم میں آگیا۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: