உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بورس جانسن اور PM Modi کی ملاقات کے بعد ہوسکتے ہیں کئی اعلانات، باہمی اہداف کو لے کر بڑا فیصلہ ممکن

    اس سے پہلے برطانوی وزیر خارجہ لیز ٹرس کے دورے کے دوران دونوں ممالک کے درمیان مستقبل کے دفاعی تعلقات کو گہرا کرنے پر جس شدت سے بات چیت ہوئی ہے اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ دفاعی شعبے میں مشترکہ تحقیق اور ترقی مودی اور جانسن کے درمیان ہونے والی بات چیت کا ایک اہم پہلو ہوگا۔

    اس سے پہلے برطانوی وزیر خارجہ لیز ٹرس کے دورے کے دوران دونوں ممالک کے درمیان مستقبل کے دفاعی تعلقات کو گہرا کرنے پر جس شدت سے بات چیت ہوئی ہے اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ دفاعی شعبے میں مشترکہ تحقیق اور ترقی مودی اور جانسن کے درمیان ہونے والی بات چیت کا ایک اہم پہلو ہوگا۔

    اس سے پہلے برطانوی وزیر خارجہ لیز ٹرس کے دورے کے دوران دونوں ممالک کے درمیان مستقبل کے دفاعی تعلقات کو گہرا کرنے پر جس شدت سے بات چیت ہوئی ہے اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ دفاعی شعبے میں مشترکہ تحقیق اور ترقی مودی اور جانسن کے درمیان ہونے والی بات چیت کا ایک اہم پہلو ہوگا۔

    • Share this:
      نئی دہلی: یوکرین روس جنگ کے بارے میں متضاد خیالات رکھنے کے باوجود ہندوستان اور برطانیہ اپنے باہمی تعلقات کو متاثر نہیں ہونے دیں گے۔ اگلے ہفتے ہندوستان کے دورے پر آنے والے برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن اور وزیر اعظم نریندر مودی کے درمیان ہونے والی ملاقات دو طرفہ تعلقات کے مستقبل کے حوالے سے بہت اہم ثابت ہو سکتی ہے۔ وزارت خارجہ کے مطابق بورس جانسن 21-22 اپریل کو ہندوستان کا دورہ کریں گے۔ پی ایم مودی کے ساتھ ان کی دو طرفہ بات چیت 22 اپریل کو ہوگی۔

      گجرات بھی جائیں گے بورس جانسن
      بورس جانسن بھی گجرات کا دورہ کریں گے۔ وزیر اعظم کے طور پر جانسن کا ہندوستان کا یہ پہلا دورہ ہے۔ دونوں وزرائے اعظم کی ملاقات میں دو طرفہ تعلقات کے حوالے سے کچھ اہم اعلانات کیے جانے کا امکان ہے۔ دونوں رہنما ہندوستان اور برطانیہ کے درمیان تجارتی معاہدے پر بات چیت کا بھی جائزہ لیں گے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      غذائی اجناس کی برآمد پر پابندیوں سے ملے چھوٹ، UN کی رپورٹ میں کی گئی سفارش

      یوکرین-روس جنگ پر بھی ہوسکتی ہے بات چیت
      یوکرین پر روس کے حملے کے بعد برطانوی وزیر اعظم جانسن چوتھے ایسے عالمی رہنما ہوں گے جن کے ساتھ مودی آمنے سامنے یا ورچوئل ملاقات کریں گے۔ اس سے قبل وہ جاپان اور آسٹریلیا کے وزرائے اعظم اور امریکی صدر سے بات چیت کر چکے ہیں۔ اس سے قبل کی تینوں ملاقاتوں میں یوکرین روس کی صورتحال بڑا ایشو رہی تھی، اسی طرح برطانوی وزیراعظم سے ملاقات میں بھی یہ بڑا ایشو ہوگا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Crisis in Sri Lanka:صدر کے خلاف تحریک عدم اعتماداورمواخذہ پربحث کیلئے اپوزیشن کی آج میٹنگ

      دوطرفہ تعلقات کی مضبوطی پرفوکس
      ذرائع کا کہنا ہے کہ یوکرین روس جنگ کے وسیع تر مضمرات کو مدنظر رکھتے ہوئے یہ یقیناً وزرائے اعظم کے درمیان اہم موضوع ہو گا تاہم آئندہ ملاقات کا بنیادی مرکز دو طرفہ تعلقات کی سمت پر ہو گا۔ انڈو پیسیفک خطے پر بھی بات چیت ہوگی اور کچھ اہم اعلانات بھی متوقع ہیں۔

      ہندوستان میں مینوفیکچرنگ پر زور
      اس سے پہلے برطانوی وزیر خارجہ لیز ٹرس کے دورے کے دوران دونوں ممالک کے درمیان مستقبل کے دفاعی تعلقات کو گہرا کرنے پر جس شدت سے بات چیت ہوئی ہے اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ دفاعی شعبے میں مشترکہ تحقیق اور ترقی مودی اور جانسن کے درمیان ہونے والی بات چیت کا ایک اہم پہلو ہوگا۔ خیال کیا جاتا ہے کہ برطانیہ کی دفاعی کمپنیاں آتم نربھر بھارت کے تحت ہندوستان میں تیاری مینوفیکچرنگ کرنے کے لیے بے چین ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: