ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

میرٹھ میں پولیس نے سی اے اے اور این آر سی کے خلاف بھارت بند کو نہیں ہونے دیا کامیاب ، دی یہ دلیل

بہوجن کرانتی مورچہ کے آج 29 جنوری کو بھارت بند کے اعلان کی کئی دیگر تنظیموں نے بھی حمایت کی ، لیکن ضلع اور پولیس انتظامیہ نے بند کو ناکام کرنے کے لئے پہلے سے ہی کمر کس لی تھی ۔

  • Share this:
میرٹھ میں پولیس نے سی اے اے اور این آر سی کے خلاف بھارت بند کو نہیں ہونے دیا کامیاب ، دی یہ دلیل
میرٹھ میں پولیس نے سی اے اے کے خلاف بھارت بند کو نہیں ہونے دیا کامیاب ، دی یہ دلیل

سی اے اے اور این آر سی کو لیکر ملک گیر پیمانے پر احتجاجی مظاہروں کا دور جاری ہے اور اسی سلسلے میں بہوجن کرانتی مورچہ کی جانب سے بھی 29 جنوری کو بھارت بند کا اعلان کیا گیا تھا ۔ لیکن یو پی حکومت نے بند کو ناکام کرنے کی پوری تیاری کر رکھی تھی ، جس کا اثر آج میرٹھ میں بھی نظر آیا ۔ وہیں سی اے اے اور این آر سی کو لے کر احتجاجی مظاہروں اور پرامن  بند کے خلاف حکومت اور پولیس کے اس رویہ پر سوالات بھی اٹھ رہے ہیں ۔


بہوجن کرانتی مورچہ کے آج 29 جنوری کو بھارت بند کے اعلان کی کئی دیگر تنظیموں نے بھی حمایت کی ، لیکن ضلع اور پولیس انتظامیہ نے بند کو ناکام کرنے کے لئے پہلے سے ہی کمر کس لی تھی ، یہاں تک کہ بند کے لئے پوسٹر لگانے والے چار افراد کو بھی پولیس نے گرفتار کیا اور شہر کے کاروباری تنظیموں کو احتجاج  کی حمایت میں بازار بند رکھنے سے روکنے کے لئے میٹنگ کرکے دباؤ بنانے کی کوشش بھی کی ۔ ایس پی سٹی اکھلیش نرائن کے مطابق اس طرح کے بند کی کوئی ضرورت نہیں تھی ، اسلئے بند کا اعلان کرکے لوگوں کو اس میں شامل کرنے کی کوشش کرنے والوں کے خلاف پولیس نے کارروائی کی ہے ۔


پولیس کی سختی اور دباؤ کی وجہ سے  پرامن احتجاج کے لئے بند کی حمایت میں عام افراد اور کاروباری تو کھل کر کچھ کہنے سے بچتے رہے ، لیکن قانون کے جاںکار اور سماجی ذمہ دار احتجاجی مظاہروں کے خلاف  حکومت اور پولیس کے اس رویہ کی کھل کر مخالفت کرتے ہوئے جمہوری نظام میں اسے عوام کی آواز دبانے کی کوشش قرار دے رہے ہیں ۔

First published: Jan 29, 2020 10:57 PM IST