ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مساجد کے خلاف کسی بھی ممکنہ اقدام پرمیرواعظ عمر فاروق نے ایسے کیا اپنے ردعمل کا اظہار

میر واعظ نے اپنے ایک ٹویٹ میں اس پر اپنا ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا: 'اضافی فورسز کی تعیناتی کے بعد انتظامیہ کی طرف سے لوگوں میں خوف پیدا کرنے کے لئے روزانہ بنیادوں پر حکم نامے جاری کرنے پر متفکر ہوں

  • Share this:
مساجد کے خلاف کسی بھی ممکنہ اقدام پرمیرواعظ عمر فاروق نے ایسے کیا اپنے ردعمل کا اظہار
حریت کانفرنس (ع) کے چیئرمین میرواعظ عمر فاروق۔(تصویر:میرواعظ عمر فاروق ٹویٹر)۔

حریت کانفرنس (ع) کے چیئرمین میرواعظ عمر فاروق نے پولیس کی طرف سے مساجد اور ان کے منتظمین و مولویوں کی فہرست طلب کرنے کے حوالے سے کہا ہے کہ ہماری مساجد ومذہبی امور کے خلاف کسی بھی اقدام کا ڈٹ کر مقابلہ کیا جائے گا۔میر واعظ نے اپنے ایک ٹویٹ میں اس پر اپنا ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا: 'اضافی فورسز کی تعیناتی کے بعد انتظامیہ کی طرف سے لوگوں میں خوف پیدا کرنے کے لئے روزانہ بنیادوں پر حکم نامے جاری کرنے پر متفکر ہوں، ہماری مساجد اور ہمارے مذہبی امور کے خلاف کسی بھی قدم کا ریاست کے لوگ ڈٹ کر مقابلہ کریں گے۔ صورتحال کو جان بوجھ کر نہ بگاڑا جائے'۔


قابل ذکر ہے کہ سری نگر کے ضلع پولس صدر دفتر کی طرف سے جاری ایک خط میں سبھی پولس سپرنٹنڈنٹس سے کہا گیا ہے کہ وہ اپنے علاقے کی مساجد، ان کی انتظامیہ اور وہاں تعینات مولوی کی ساری جانکاری مہیا کرائیں۔ پولس ہیڈ کوارٹر کے ایس ایس پی کی طرف سے جاری یہ خط ایس پی سٹی ساؤتھ زون سری نگر، ایس پی سٹی حضرت بل زون سری نگر، ایس پی سٹی نارتھ زون سری نگر، ایس پی سٹی ایسٹ زون سری نگر اور ایس پی سٹی ویسٹ زون سری نگر کو بھیجا گیا ہے۔ خط میں ساری جانکاری جلد سے جلد دستیاب کرانے کے ساتھ ہی کہا گیا ہے کہ اس جانکاری کو اعلیٰ سطح پر بھیجا جانا ہے۔ تاہم ایس ایس پی سری نگر داکٹر حسیب مغل نے اس کو پولیسنگ کی معمول کی مشق قرار دیا ہے۔


First published: Jul 30, 2019 01:39 PM IST