ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

رمضان کےمہینہ میں افطار پارٹیوں پر خرچ ہونے والی رقم کو غریبوں میں تقسیم کرنے کی اپیل

امارت شرعیہ نے یہ بھی اعلان کیا ہےکہ اس بار کے رمضان میں افطار پارٹیاں نہیں ہوں گی۔ افطار پارٹیوں پرخرچ ہونے والے رقوم غریب، مسکین اور ضرورتمندوں میں تقسیم کیا جائے۔

  • Share this:
رمضان کےمہینہ میں افطار پارٹیوں پر خرچ ہونے والی رقم کو غریبوں میں تقسیم کرنے کی اپیل
مسلم طبقے سے علمائے کرام نے لاک ڈاؤن پر عمل کرنےکی گزارش کی ہے۔

پٹنہ: امارت شرعیہ بہار نے ملک کے تین صوبوں میں قائم اپنے تمام دفتروں کو ہدایت دیا ہےکہ وہ لوگوں کو رمضان کے تعلق سے ابھی سے ہی بیدار کرنے کی کوشش کرے۔ بہار، جھارکھنڈ اوراڑیسہ میں قائم اپنے تمام دفتروں اورگاؤں کی کمیٹیوں و تنظیموں سے گزارش کیا ہےکہ رمضان کے مہینہ میں عبادت کا سلسلہ گھروں میں قائم کرنےکی لوگوں سے اپیل کریں۔ دراصل لوک ڈاؤن میں اضافہ ہونے کے بعد امارت شرعیہ بھی حرکت میں آگیا ہے۔


امارت شرعیہ نے لوگوں سے اپیل کیا ہےکہ رمضان کا مہینہ لوک ڈاؤن میں ہی شروع ہوجائےگا، لہٰذا رمضان کی عبادت کا گھروں میں اہتمام کیا جائے۔ وہیں تراویح کی نماز مسجدوں میں نہیں ہوگی، جس کو دیکھتے ہوئے یہ اعلان کیا جاتا ہےکہ گھروں میں ہی تراویح کی نماز کا اہتمام کرے، جن گھروں میں حافظ موجود ہوں وہ اپنےگھروں میں تراویح پڑھائیں۔ مسجدوں میں تراویح نہیں پڑھی جائےگی۔ سوشل ڈسٹینس کو فالو کریں اور نمازکا گھروں میں اہتمام ہو، جہاں حافظ نہیں ہیں وہاں شروع تراویح کا انتظام کیا جائے۔


امارت شرعیہ نے یہ بھی اعلان کیا ہےکہ اس بار کے رمضان میں افطار پارٹیاں نہیں ہوں گی۔ افطار پارٹیوں پرخرچ ہونے والے رقوم غریب، مسکین اور ضرورتمندوں میں تقسیم کیا جائے۔ لاک ڈاؤن میں لوگوں کی مشکلیں بڑھ گئی ہیں۔ مزدور، کسان اور روزکھانےکمانے والے لوگ حاشیہ پرکھڑا ہوگئے ہیں۔ ایسے میں ان کی مدد کا سلسلہ مسلسل جاری رہنا چاہئے۔ امارت شرعیہ کے جنرل سکریٹری مولانا شبلی قاسمی نے نیوز 18 اردو سے بات کرتے ہوئےکہا کہ انسانی جانوں کی حفاظت کے لئے وزیر اعظم کا اٹھایا گیا یہ قدم بہتر ہے۔


امارت شرعیہ نے یہ بھی اعلان کیا ہےکہ افطار پارٹیوں پرخرچ ہونے والے رقوم غریب، مسکین اور ضرورتمندوں میں تقسیم کیا جائے۔
امارت شرعیہ نے یہ بھی اعلان کیا ہےکہ افطار پارٹیوں پرخرچ ہونے والے رقوم غریب، مسکین اور ضرورتمندوں میں تقسیم کیا جائے۔


رمضان کے مہینہ میں ویسے ہی لوگ صدقات، خیرات اور غریبوں کی مدد کرتے ہیں۔ اس بار اپنی جھولی دراز کرے اور بغیر کسی تفریق کے تمام ایسے لوگ جن کو کھانے پینے کا مسئلہ کھڑا ہوگیا ہے۔ ان کی مدد کی جائے۔ افطار پارٹیوں کے نام پر خرچ ہونے والی رقم کا پورا حصہ غریبوں میں تقسیم کیا جائے۔ لاک ڈاؤن کے سبب ایسے لوگ بھی سماج میں موجود ہیں جو کسی کے آگے ہاتھ نہیں پھیلا سکتے ہیں۔ ایسے لوگوں کی تلاش کی جائے اور خاموشی کے ساتھ رمضان کا مہینہ شروع ہونے سے پہلے ہی ان کی مدد کردی جائے۔ اس بات کا لوگ انتظار نہیں کریں کہ کوئی مدد مانگے گا تب ان کی مدد کی جائےگی۔ بلکہ بغیر وقت گنوائے ایسے لوگوں کو خاص طور سے ترجیح دیا جائے، جو لاک ڈاؤن کے سبب اپنی فیملی کی مدد نہیں کر پارہے ہیں۔
First published: Apr 14, 2020 06:29 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading