جموں وکشمیرمیں دہشت گردانہ حملےکا خطرہ، ہائی الرٹ پرتینوں فوج

جموں وکشمیرمیں حالات خراب کرنےکےلئے پاکستان کےدہشت گردانہ تنظیمیں حملہ کرسکتے ہیں۔

Aug 16, 2019 09:09 PM IST | Updated on: Aug 16, 2019 09:09 PM IST
جموں وکشمیرمیں دہشت گردانہ حملےکا خطرہ، ہائی الرٹ پرتینوں فوج

جموں وکشمیرمیں دہشت گردانہ حملےکا خطرہ۔ علامتی تصویر

جموں وکشمیرمیں دفعہ 370 ہٹائے جانے کے بعد وادی کا ماحول خراب کرنے کےلئے پاکستان کی دہشت گردانہ تنظیم حملے کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔ اسے دیکھتے ہوئے سبھی ہندوستانی فوجیوں اورسیکورٹی اہلکاروں کو ہائی الرٹ پررکھا گیا ہے۔ سرکاری ذرائع نے یہ اطلاع دی ہے۔

جموں وکشمیرکےچیف سکریٹری بی وی آرسبرامنیم نےکہا کہ جمعہ کی نمازکے بعد پوری ریاست میں صورتحال ٹھیک رہی۔ انہوں نےکہا کہ آنے والےدنوں میں اورچھوٹ میں اضافہ کیا جائے گا۔ انہوں نےکہا کہ کشمیرمیں مرحلہ واراورمنظم اندازمیں پابندیوں میں نرمی دی جائےگی اورہفتہ کےاختتام تک کشمیرمیں زیادہ ترفون لائنیں بحال کردی جائیں گی اور اسکول اگلے ہفتےکھل جائیں گے۔

Loading...

All-India-Army

عام طریقے سے ہوا کام کاج

سبرامنیم نے پریس کانفرنس میں کہا کہ وادی میں جمعہ کو ریاستی حکومت کے دفاترمیں عام طریقے سے کام کاج ہوا اورکئی دفاترمیں تو حاضری اچھی رہی۔ انہوں نے کہا کہ پانچ اگست کوجب پابندیاں لگائی گئیں، تب سے نہ کسی کی جان گئی اورنہ کوئی زخمی ہوا۔

پانچ اگست کوہٹایا گیا تھا دفعہ 370 

پانچ اگست کوجموں وکشمیرکے خصوصی ریاست کےدرجہ کومنسوخ کردیا گیا تھا اوراسے مرکزکےزیرانتظام دو خطوں میں تقسیم کردیا گیا تھا۔ سبرامنیم نے کہا 'آج جمعہ کی نمازکے بعد ملی رپورٹ کے مطابق پوری ریاست میں سب کچھ پرامن رہا۔ دہشت گردانہ تنظیموں، شدت پسند گروپوں اورپاکستان کے حالات بگاڑنےکی مسلسل کوشش کے باوجود ہم نے کسی کی بھی جان نہیں جانے دی'۔

Loading...