உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گنا کسانوں کے شوگر ملز پر بقایاجات کی Lok Sabha میں گونج، کنور دانش علی نے اٹھائی آواز

    لوک سبھا میں آج پھر گنے کے کسانوں کا مسئلہ اپوزیشن کی طرف سے اٹھایا گیا، امروہہ سیٹ سے بہوجن سماج پارٹی کے رکن پارلیمنٹ کنور دانش علی نے لوک سبھا میں گنے کے کسانوں کی ادائیگی کا مسئلہ اٹھایا۔

    لوک سبھا میں آج پھر گنے کے کسانوں کا مسئلہ اپوزیشن کی طرف سے اٹھایا گیا، امروہہ سیٹ سے بہوجن سماج پارٹی کے رکن پارلیمنٹ کنور دانش علی نے لوک سبھا میں گنے کے کسانوں کی ادائیگی کا مسئلہ اٹھایا۔

    لوک سبھا میں آج پھر گنے کے کسانوں کا مسئلہ اپوزیشن کی طرف سے اٹھایا گیا، امروہہ سیٹ سے بہوجن سماج پارٹی کے رکن پارلیمنٹ کنور دانش علی نے لوک سبھا میں گنے کے کسانوں کی ادائیگی کا مسئلہ اٹھایا۔

    • Share this:
      نئی دہلی: لوک سبھا میں آج پھر گنے کے کسانوں کا مسئلہ اپوزیشن کی طرف سے اٹھایا گیا، امروہہ سیٹ سے بہوجن سماج پارٹی کے رکن پارلیمنٹ کنور دانش علی نے لوک سبھا میں گنے کے کسانوں کی ادائیگی کا مسئلہ اٹھایا۔ معاملہ اٹھاتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ گنے کے کسانوں کی ادائیگی کا معاملہ حل کرے۔ حکومت پر گنے کے کاشتکاروں کے گنے کے بقایا جو شوگر ملوں پر واجب الادا ہیں، وہ جلد از جلد گنے کے کاشتکاروں کو دیئے جائیں اور شوگر ملیں گنے کے کاشتکاروں کو بقایا رقم پر سود دے۔

      آج لوک سبھا میں ایم پی کنور دانش علی نے وقفہ صفرکے دوران گنے کے کسانوں کا مسئلہ اٹھاتے ہوئے کہا کہ اترپردیش میں کسانوں کی حالت بد سے بدتر ہوتی جارہی ہے۔ گندم کے پہلے کسانوں نے گندم پیدا کی۔ انہیں لگا کہ گندم کی اچھی قیمت ملے گی، لیکن حکومت نے گندم برآمد کرنا بند کردی۔ اس وقت گنے کے کاشتکاروں کی حالت یہ ہے کہ شوگر ملوں پر گنے کے کسانوں کے کتنے واجبات ہیں، اترپردیش حکومت نے اس شفافیت کو بھی روک دیا ہے۔



      کنور دانش علی نے کہا کہ پورے اتر پردیش کا ڈیٹا ہمارے پاس نہیں آ رہا ہے۔ میرے پارلیمانی حلقے میں، صرف سمبھولی شوگر فیکٹری کے پاس گنے کے کاشتکاروں کے 250 کروڑ روپئے واجب الادا ہیں، میں حکومت سے درخواست کروں گا کہ وہ اترپردیش حکومت کو یہ اعداد و شمار فراہم کرنے کی ہدایت کرے کہ پورے اتر پردیش میں گنے کے کسانوں کا کتنا قرضہ ہے؟

      انہوں نے مطالبہ کیا کہ گنے کے کاشتکاروں کے واجبات کی فوری ادائیگی کی جائے۔ گنے کے کاشتکاروں کے بقایا جات پر سود دیا جائے۔ اگرکسان کھاد اور بیج کے لئے قرض لیتے ہیں تو بینک ان سے سود وصول کرتے ہیں۔  کسانوں کو بینکوں کو سود دینا پڑتا ہے۔ نہ دیں تو اٹیچ کر دیا جاتا ہے، جیل میں ڈال دیا جاتا ہے۔ گنے کے کاشتکارگنے کی پیداوار کے لئے سال بھر محنت کرتے ہیں اور وہ شوگر مل کو گنا دیتے ہیں، لیکن شوگر مل انہیں وقت پر ادائیگی نہیں کرتی۔ حکومت گنے کے کاشتکاروں کو ان کے واجبات دے، گنے کے کاشتکاروں کے بقایاجات سود کے ساتھ دے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: