உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Delhi News: کیجریوال نے ٹویٹ کرکے لگایا بڑا الزام، کہا : 'دہلی میں آپریشن لوٹس فیل'

    Delhi News: کیجریوال نے ٹویٹ کرکے لگایا بڑا الزام، کہا : 'دہلی میں آپریشن لوٹس فیل'

    Delhi News: کیجریوال نے ٹویٹ کرکے لگایا بڑا الزام، کہا : 'دہلی میں آپریشن لوٹس فیل'

    Delhi News: دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ٹویٹ کرکے کہا کہ 'دہلی میں آپریشن لوٹس فیل' ۔ اروند کیجریوال نے الزام لگایا ہے کہ بی جے پی دہلی سرکار کو گرانے کی کوشش کررہی ہے ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | New Delhi | New Delhi
    • Share this:
      نئی دہلی : دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ٹویٹ کرکے کہا کہ 'دہلی میں آپریشن لوٹس فیل' ۔ اروند کیجریوال نے الزام لگایا ہے کہ بی جے پی دہلی سرکار کو گرانے کی کوشش کررہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سی بی آئی ۔ ای ڈی کی ریڈ کا شراب پالیسی سے کچھ لینا دینا نہیں ہے ۔ جیسے انہوں نے دوسری ریاستوں میں کیا ہے ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: بی جے پی کے بڑے لیڈر کو اڑانے کی بڑی سازش ناکام، روس میں پکڑا گیا خودکش دہشت گردانہ حملہ


      اس سے پہلے گجرات کے دورے کے دوران دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے پیر کو کہا کہ نائب وزیر اعلی منیش سسودیا کو دہلی کے اسکولوں میں تعلیم کی کوالیٹی میں بہتری کیلئے بھارت رتن دیا جانا چاہئے ، لیکن مرکزی سرکار سیاسی مقاصد کی وجہ سے انہیں پریشان کررہی ہے ۔ گجرات دورے پر آئے کیجریوال نے کہا کہ نیویارک ٹائمس نے ہمارے ایجوکیشن ماڈل کی سراہنا کی ہے ۔


      یہ بھی پڑھئے: جانسن اینڈ جانسن کابڑافیصلہ، متنازع بیبی پاؤڈرکوشیلف سےنہیں اتارےگا!


      کیجریوال نے نامہ نگاروں سے کہا کہ سسودیا کی سراہنا کرنے کی بجائے انہیں نشانہ بنایا جارہا ہے ۔ کیجریوال نے یہ بھی اندیشہ ظاہر کیا کہ سسودیا کو جلد ہی گرفتار کیا جاسکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ منیش سسودیا کو گرفتار کیا جاسکتا ہے، کس کو پتہ مجھے بھی گرفتار کیا جاسکتا ہے ۔ یہ سب گجرات اسمبلی الیکشن کو دیکھتے ہوئے کیا جارہا ہے ۔

      کیجریوال نے دعوی کیا کہ گجرات کے لوگ دکھی ہیں اور ریاست میں پچھلے 27 سالوں سے بی جے پی حکومت کے 'اہنکار' کا خمیازہ بھگت رہے ہیں ۔ انہوں نے دعوی کیا کہ ریاست میں عام آدمی پارٹی کی سرکار بننے پر گجرات کے لوگوں کو معیاری تعلیم اور ہیلتھ سروسز فراہم کی جائے گی ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: