ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ایل جی کے فیصلہ پر سیاست تیز ، وزیر اعلی کیجریوال نے کہا : شاید بھگوان کی مرضی ہے کہ ہم ملک بھر کے لوگوں کی خدمت کریں

وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ٹویٹ کرکے کہا کہ ایل جی صاحب کے حکم نے دہلی کے لوگوں کیلئے بہت بڑی پریشانی اور چیلنج پیدا کردیا ہے ۔ ملک بھر سے آنے والے لوگوں کیلئے کورونا وائرس کے دوران علاج کا انتظام کرنا بڑا چیلنج ہے ۔

  • Share this:
ایل جی کے فیصلہ پر سیاست تیز ، وزیر اعلی کیجریوال نے کہا : شاید بھگوان کی مرضی ہے کہ ہم ملک بھر کے لوگوں کی خدمت کریں
ایل جی کے فیصلہ پر سیاست تیز ، وزیر اعلی کیجریوال نے کہا: شاید بھگوان کی مرضی ہے کہ ہم ...

قومی راجدھانی دہلی میں کافی دنوں کے بعد ایک مرتبہ پھر کورونا وائرس کو لے کر سیاست گرم ہوگئی ہے ۔ وزیر اعلی اروند کیجریوال اور ایل جی انل بیجل ایک مرتبہ پھر آمنے سامنے آگئے ہیں ۔ لیفٹیننٹ گورنر انل بیجل نے وزیر اعلی اروند کیجریوال کے اس فیصلہ کو ایک دن بعد ہی پلٹ دیا ، جس میں کہا گیا تھا کہ دہلی کے سرکاری اورپرائیویٹ اسپتالوں میں صرف دہلی والوں کا ہی علاج ہوگا ۔ واضح رہے کہ اب دہلی میں کوئی بھی اپنا علاج کرا سکے گا ۔ مرکز کے زیر انتظام خطہ ہونے کی وجہ سے ایل جی کے پاس اختیار ہے کہ وہ دہلی حکومت کے فیصلہ کو بدل سکتے ہیں ۔ اب اس فیصلہ پر وزیر اعلی کیجریوال اور نائب وزیر اعلی منیش سسودیا نے اپنے رد عمل کا اظہار کیا ہے ۔


وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ٹویٹ کرکے کہا کہ ایل جی صاحب کے حکم نے دہلی کے لوگوں کیلئے بہت بڑی پریشانی اور چیلنج پیدا کردیا ہے ۔ ملک بھر سے آنے والے لوگوں کیلئے کورونا وائرس کے دوران علاج کا انتظام کرنا بڑا چیلنج ہے ۔ شاید بھگوان کی مرضی ہے کہ ہم پورے ملک کے لوگوں کی خدمت کریں ۔ ہم سب کے علاج کا انتظام کرنے کی کوشش کریں گے ۔



وہیں دوسری طرف منیش سسودیا نے ٹویٹ کرکے کہا کہ بی جے پی کی ریاستی حکومتیں پی پی ای کٹ گھوٹالوں اور وینٹی لیٹر گھوٹالوں میں مصروف ہے ۔ دہلی حکومت سوچ سمجھ کر ایمانداری سے اس ڈیزاسٹر کو مینج کرنے کی کوشش کررہی ہے ۔ یہ بی جے پی سے دیکھا نہیں جارہا ، اس لئے ایل جی پر دباو ڈال کر گھٹیا سیاست کی ہے ۔

آپ کو بتادیں کہ دہلی میں بڑھتے کورونا معاملات کے درمیان اتوار کو دہلی کابینہ نے فیصلہ کیا تھا کہ دہلی حکومت کے سرکاری اور پرائیویٹ اسپتالوں میں صرف دہلی کے رہائشیوں کا علاج ہوگا جبکہ مرکزی حکومت کے اسپتالوں میں سبھی علاج کرا سکتے ہیں ۔

ورما کمیٹی کی سفارش کے بعد کیا تھا فیصلہ

وزیر اعلی کیجریوال نے اتوار کو ویڈیو کانفرنس کے ذریعہ میڈیا کو خطاب کیا تھا ۔ اس دوران انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کے بڑھتے معاملات اور طبی سہولیات پر مشورہ دینے کیلئے ان کی حکومت نے ایک کمیٹی تشکیل دی تھی ۔ انہوں نے بتایا کہ کمیٹی نے جون کے آخر تک ۱۵ ہزار بیڈ دستیاب کرانے کی سفارش کی ہے ۔ علاوہ ازیں ورما کمیٹی نے دہلی کے اسپتالوں کے بیڈ کو دہلی والوں کیلئے ریزرو کرنے کی بھی سفارش کی ہے ۔

وزیر اعلی نے بتایا کہ کابینہ میٹنگ میں ان سبھی معاملات پر غور و خوض کیا گیا ۔ انہوں نے بتایا کہ دہلی حکومت نے لوگوں سے بھی اس سلسلہ میں رائے مانگی تھی ۔ کیجریوال کی مانیں تو دہلی کے عوام نے بھی ریاست کے اسپتالوں میں موجود بیڈ کو یہاں کے رہائشیوں کیلئے مختص کرنے کی رائے دی ۔

انہوں نے واضح کردیا تھا کہ کورونا بحران تک دہلی کے نجی اسپتالوں کے بیڈ بھی دہلی والوں کیلئے محفوظ رہیں گے ۔ حالانکہ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کچھ اسپیشل نجی اسپتالوں میں لوگ ملک بھر سے آکر سرجری کرواتے ہیں ، وہ سبھی کیلئے کھلے رہیں گے ۔
First published: Jun 08, 2020 10:12 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading