உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اسدالدین اویسی کا بڑا اعلان- راجستھان اسمبلی انتخابات 2023 میں حصہ لے گی مجلس اتحاد المسلمین

    اسدالدین اویسی کا بڑا اعلان- راجستھان اسمبلی انتخابات 2023 میں حصہ لے گی مجلس اتحاد المسلمین

    اسدالدین اویسی کا بڑا اعلان- راجستھان اسمبلی انتخابات 2023 میں حصہ لے گی مجلس اتحاد المسلمین

    AIMIM to contest Rajasthan Assembly Polls 2023: اسدالدین اویسی کی پارٹی آل انڈیا مجلس اتحادالمسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) راجستھان میں 2023 کے انتخابی میدان میں اترے گی۔ یہ اعلان پیر کے روز خود اسدالدین اویسی نے جے پور میں کیا۔

    • Share this:
      جے پور: اسدالدین اویسی (Asaduddin Owaisi) کی پارٹی آل انڈیا مجلس اتحادالمسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) راجستھان اسمبلی انتخابات 2023 (Rajasthan Assembly Election 2023) کے انتخابی میدان میں اترے گی۔ یہ اعلان پیر کے روز خود اسدالدین اویسی نے جے پور میں کیا۔ اویسی گزشتہ دنوں بھی جے پور کے سفر پر آئے تھے تب سے ہی یہ قیاس آرائی کی جارہی تھی کہ ان کی پارٹی راجستھان میں الیکشن لڑسکتی ہے۔

      اسدالدین اویسی جلد کریں گے تنظیم کا اعلان

      اسدالدین اویسی کے خفیہ طریقے سے کئی لوگوں سے ریاست میں پارٹی کی ذمہ داری کے لئے ملاقات بھی کی ہے۔ اویسی نے کہا کہ وہ راجستھان میں الیکشن لڑیں گے اور ان کی پارٹی راجستھان میں آئندہ ڈیڑھ ماہ میں پارٹی تنظیم کو لے کر اعلانات کردے گی کہ کسے کون سی ذمہ داری دی جا رہی ہے۔

      پورے راجستھان میں دورہ کریں گے اسدالدین اویسی

      اسدالدین اویسی نے کہا، ’میں خود پورے راجستھان کا دورہ کروں گا اور اس کے بعد ہماری پارٹی 2023 کے یہاں اسمبلی انتخابات میں مضبوطی سے الیکشن لڑے گی۔ مجھے یا میری پارٹی کا بی جے پی کی بی ٹیم کہا جانا غلط ہے، ایسے بہت سے مثال ہیں جہاں پر ہم الیکشن نہیں لڑ رہے تھے اور ایسی سیاسی پارٹی بہت بری طریقے سے الیکشن ہار گئیں، جو یہ کہتی ہیں کہ وہ وہمارے الیکشن لڑنے سے ہار گئے‘۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      یوگی نے آخر ایسا کیا کہا کہ بھڑک گئے اسد الدین اویسی ، کہا : ہندتوا فرضی تاریخ کی فیکٹری


      مجلس اتحادالمسلمین کے سربراہ اور حیدرآباد سے رکن پارلیمنٹ اسد الدین اویسی نے کہا کہ آج اگر ہم ملک میں اقلیتوں کی آواز کو مضبوط کرنے کے لئے الیکشن لڑتے ہیں تو اس میں غلط کیا ہے۔ یہ ہمارا آئینی اختیار اور حق ہے۔

      اترپردیش اسمبلیا نتخابات سے قبل ریاست کے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ اور اے آئی ایم آئی ایم کے سربراہ اسد الدین اویسی میں ایک بار پھر زبانی جنگ تیز ہوگئی ہے۔
      اترپردیش اسمبلیا نتخابات سے قبل ریاست کے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ اور اے آئی ایم آئی ایم کے سربراہ اسد الدین اویسی میں ایک بار پھر زبانی جنگ تیز ہوگئی ہے۔


      یوگی کے بیان پر بھڑک گئے اسدالدین اویسی

      اترپردیش اسمبلی انتخابات سے پہلے ایک مرتبہ پھر سیاسی بیان بازی تیز ہوگئی ہے۔ پاکستان کے بانی محمد علی جناح کے بعد اترپردیش کی سیاست میں چندر گپت موریہ کو لے کر ہنگامہ شروع ہوگیا ہے۔ ریاست کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے مورخین پر الزام لگایا کہ انہوں نے چندر گپت موریہ کو عظیم نہیں بتایا بلکہ ان سے ہارنے والے سکندر کو عظیم بتا دیا۔ یوگی کے اس بیان کے بعد اے آئی ایم آئی ایم کے سربراہ اسد الدین اویسی نے یوگی آدتیہ ناتھ کے پلٹ وار کیا ہے۔ اویسی نے ہندتوا کو ایک فرضی تاریخ کی فیکٹری بتایا ہے۔ یوگی نے کہا کہ تاریخ کو کیسے توڑا مروڑا جاتا ہے، ہماری تاریخ چندر گپت موریہ کو عظیم نہیں مانتا، عظیم کس کو کہا؟ جو ان سے جنگ ہار گئے تھے۔ انہیں الیکزینڈر گریٹ کہا جاتا ہے۔ ملک کے ساتھ بڑا دھوکہ ہوا ہے ، پھر بھی مورخین خاموشی اختیار کئے ہوئے ہیں۔ کیونکہ اگر سچ سامنے آتا ہے تو سماج ایک مرتبہ پھر اٹھ کھڑا ہوتا۔ ہندتوا ایک فرضی تاریخ کی فیکٹری ہے۔ چندر گپت اور الیکزینڈر تو کبھی لڑے ہی نہیں تھے۔ ان کے درمیان کوئی جنگ نہیں تھی۔ کسی کا یہ کہنا ہی بتاتا ہے کہ ہمیں اچھے ایجوکیشن سسٹم کی ضرورت کیوں ہے۔ اچھے اسکولوں کے فقدان میں بابا لوگ اپنے من سے کچھ بھی حقیقت بنا دیتے ہیں اور پروستے ہیں۔ بابا تعلیم کو اہمیت نہیں دیتے اور اور یہ ان کے بیانوں میں دکھتا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: