ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

لو جہاد کے خلاف قانون کی بات پر بھڑک گئے اسدالدین اویسی، بی جے پی پر لگایا الزام

اسدالدین اویسی (Asaduddin Owaisi) نے کہا، ’انہیں آئین کا مطالعہ کرنا چاہئے۔ نفرت کی ایسی تشہیر کام نہیں کرے گی۔ بی جے پی (BJP) بے روزگاری کا شکار نوجوانوں کو ورغلاکر ڈراما کر رہی ہے۔

  • Share this:
لو جہاد کے خلاف قانون کی بات پر بھڑک گئے اسدالدین اویسی، بی جے پی پر لگایا الزام
لو جہاد کے خلاف قانون کی بات پر بھڑک گئے اسدالدین اویسی، بی جے پی پر لگایا الزام

نئی دہلی: لو جہاد (Love Jihad) کے موضوع پر ان دنوں ملک میں بحث چھڑی ہوئی ہے۔ بی جے پی کے زیر اقتدار والی کئی ریاست لو جہاد کے خلاف قانون بنانے پر بھی کام کر رہی ہیں۔ ایسے میں کچھ جماعتیں بی جے پی بی جے پی کی مخالفت کر رہی ہیں۔ آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) کے سربراہ اسد الدین اویسی (Asaduddin Owaisi) نے اتوار کو اس مسئلے پر بولتے ہوئے بی جے پی (BJP) پر الزامات عائد کئے ہیں۔ انہوں نے کہا، ’یہ اسپیشل میرج ایکٹ کے آرٹیکل 14 اور 21 کی خلاف ورزی ہوگی۔ انہیں آئین کا مطالعہ کرنا چاہئے۔ نفرت کی ایسی تشہیر کام نہیں کرے گی۔ بی جے پی بے روزگاری کا شکار ہوئے نوجوانوں کو خوفزدہ کرنے کا ڈرامہ کر رہی ہے۔






اسدالدین اویسی نے کہا، ’اگر آپ رات میں کسی بی جے پی لیڈر کو جگاتے ہیں اور ان سے کچھ نام دینے کے لئے کہتے ہیں، تو وہ بولیں گے۔ اس کے بعد غدار، دہشت گرد اور آخر میں پاکستان۔ بی جے پی کو یہ بتانا چاہئے کہ 2019 کے بعد انہوں نے تلنگانہ اور خاص کرکے حیدرآباد کو کیا مالی مدد دی’۔



وہیں چھتیس گڑھ کے وزیراعلیٰ بھوپیش بگھیل نے بی جے پی لیڈروں پر تنقید کرتے ہوئے ان سے سوال پوچھا ہے۔ انہوں نے کہا، ’بی جے پی کے کئی لیڈروں کے اہل خانہ نے دوسرے مذہب میں شادی کی۔ میں ان بی جے پی لیڈروں سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ کیا یہ شادیاں بھی لوجہاد کی تعریف کے ماتحت آئیں گی’؟
چھتیس گڑھ کے وزیراعلیٰ بھوپیش بگھیل نے اپنے ٹوئٹر اکاونٹ پر ایک ویڈیو بھی شیئر کیا ہے۔ اس کے ساتھ انہوں نے لکھا ہے کہ ’میں بی جے پی لیڈروں سے پوچھنا چاہوں گا’۔ اس کے بعد ویڈیو میں وہ بی جے پی اور اس کے لیڈروں سے سوال کرتے ہوئے نظر آرہے ہیں’۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Nov 22, 2020 05:12 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading