உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مرکزی وزیر کا بیٹا آشیش مشرا کب کرے گا سرینڈر؟ لکھیم پور کیس میں سامنے آیا یہ بڑا اپڈیٹ

    مرکزی وزیر کا بیٹا آشیش مشرا کب کرے گا سرینڈر؟ لکھیم پور کیس میں سامنے آیا یہ بڑا اپڈیٹ

    مرکزی وزیر کا بیٹا آشیش مشرا کب کرے گا سرینڈر؟ لکھیم پور کیس میں سامنے آیا یہ بڑا اپڈیٹ

    Lakhimpur Violence: ذرائع کی مانیں تو خبر یہ بھی نکل کر سامنے آرہی ہے کہ مرکزی وزیر مملکت کا بیٹا آشیش مشرا نیپال بھاگ گیا ہے۔ حالانکہ اس بات کی ابھی تک بھی تصدیق نہیں ہوئی ہے۔

    • Share this:
      لکھیم پور کھیری: یوپی کے لکھیم پور کھیری تشدد (Lakhimpur Kheri Violence) معاملے میں مرکزی وزیر مملکت برائے داخلہ اجے مشرا کا ملزم بیٹا آشیش مشرا (Ashish Mishra) کو کرائم برانچ (Crime Branch Police) نے جمعہ کو صبح بیان درج کرانے کے لئے اپنے دفتر بلایا تھا، لیکن ابھی تک آشیش مشرا یا ان کے وکیل کرائم برانچ کے دفتر نہیں پہنچے ہیں۔ ذرائع سے ملی اطلاع کے مطابق، آشیش مشرا کل یعنی ہفتہ کے روز پولیس کے سامنے پیش ہوسکتا ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ مرکزی وزیر اجے مشرا آج دیر شام لکھیم پور کھیری پہنچیں گے، جس کے بعد کل ایک پریس کانفرنس کرکے بیٹے کو پیش کرسکتے ہیں۔ وہیں ذرائع کی مانیں تو خبر یہ بھی نکل کر سامنے آرہی ہے کہ آشیش مشرا نیپال بھاگ گئے ہیں۔ حالانکہ اس بات کی ابھی تک بھی باضابطہ تصدیق نہیں ہوئی ہے۔

      ذرائع نے بتایا، ’آشیش کو پولیس نے صبح 10 بجے طلب کیا تھا، لیکن وہ اب تک (ساڑھے 11 بجے) نہیں پہنچے ہیں۔ جانچ ٹی کی قیادت کر رہے پولیس ڈپٹی انسپکٹر جنرل (ہیڈکوارٹر) اوپیندر اگروال وقت پر دفتر پہنچ گئے‘۔ جمعرات کو دو لوگوں کو گرفتار کئے جانے کے بعد پولیس نے مرکزی وزیر اجے مشرا کے بیٹے آشیش مشرا کو لکھیم پور کھیری تشدد کے سلسلے میں پیش ہونے کے لئے کہا تھا۔ تشدد میں اتوار کو چار کسانوں سمیت 8 لوگ مارے گئے تھے۔ آشیش کو جمعہ کو 10 بجے پولیس لائن میں آنے کے لئے کہا گیا تھا اور اس بابت نوٹس ان کی رہائش گاہ کے باہر چسپاں کیا گیا تھا۔

      جوائنٹ کسان مورچہ (ایس کے ایم) نے یہاں جاری ایک بیان میں کہا کہ آشیش مشرا کو جاری کئے گئے سمن کے بعد بھی ان کا کوئی پتہ نہیں ہے۔ یہ بہت تشویشناک بات ہے۔ ایس کے ایم نے بیان میں کہا ’لکھیم پور سانحہ‘ میں شامل سمت جیسوال، انکت داس اور دیگر ساتھیوں کو گرفتار کرنے میں پولیس نرمی برت رہی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ تھار گاڑی (جس سے کسانوں کو کچلنے کا الزام ہے) میں سمت جیسوال واضح طور پر گاڑی سے بھاگتے ہوئے دکھائی دے رہا تھا۔ کسانوں نے دعویٰ کیا تھا کہ آشیش مشرا قافلے کے کسی گاڑی میں سوار تھے۔ حالانکہ آشیش اور ان کے والد اجے مشرا نے ان الزامات سے انکار کیا تھا۔ پولیس نے وزیر کے بیٹے اور دیگر کے خلاف ایف آئی آر کی جانچ کے لئے ڈپٹی انسپکٹر جنرل (ہیڈکوارٹر) اوپیندر اگروال کی صدارت میں 9 رکنی ٹیم کی تشکیل کی تھی۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: