உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اشوک گہلوت چھوڑنا چاہتے ہیں وزیر اعلی کا عہدہ؟ سونیا گاندھی سے استعفی کی پیشکش کی: ذرائع

    اشوک گہلوت چھوڑنا چاہتے ہیں وزیر اعلی کا عہدہ؟ سونیا گاندھی سے استعفی کی پیشکش کی: ذرائع (File)

    اشوک گہلوت چھوڑنا چاہتے ہیں وزیر اعلی کا عہدہ؟ سونیا گاندھی سے استعفی کی پیشکش کی: ذرائع (File)

    National News: کانگریس قومی صدر عہدہ کے الیکشن اور راجستھان کی سیاسی اتھل پتھل کے درمیان بڑی خبر ہے ۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعلی اشوک گہلوت نے سونیا گاندھی سے استعفی کی پیش کش کی ہے ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | New Delhi | Rajasthan
    • Share this:
      نئی دہلی : کانگریس قومی صدر عہدہ کے الیکشن اور راجستھان کی سیاسی اتھل پتھل کے درمیان بڑی خبر ہے ۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعلی اشوک گہلوت نے سونیا گاندھی سے استعفی کی پیش کش کی ہے ۔ گہلوت نے یہاں تک کہہ دیا ہے کہ وہ کانگریس صدر عہدہ کا الیکشن نہیں لڑنا چاہتے ہیں ۔ اس سے پہلے انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ اب وزیر اعلی عہدہ کا فیصلہ سونیا گاندھی کریں گی ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: دہلی حکومت نے مرکزی حکومت کو خوردہ کاروبار قوانین میں اصلاحات کی سفارش کی 


      جانکاری کے مطابق راجستھان کے وزیر اعلی جمعرات کو 10 جن پتھ پہنچے اور کانگریس کی عبوری صدر سونیا گاندھی سے ملاقات کی ۔ بتایا جاتا ہے کہ یہ ملاقات ایک گھنٹے سے زیادہ وقت تک چلی ۔ اس کے بعد گہلوت نے کہا کہ میں نے کانگریس کیلئے وفادار سپاہی کے طور پر کام کیا ۔ سونیا جی کے آشیرواد سے میں تیسری مرتبہ راجستھان کا وزیر اعلی بنا ۔ دو دن پہلے جو واقعہ پیش آیا، اس نے مجھے ہلا کر رکھ دیا ۔ مجھے اس کا بڑا دکھ ہوا ہے ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: ملازمین کو بڑا تحفہ، 78دنوں کی تنخواہ کے برابر ملے گا بونس، کابینہ نے دی منظوری


      انہوں نے کہا کہ میں نے سونیا جی سے معافی مانگی ہے ۔ لیجسلیچر پارٹی کی میٹنگ میں ایک لائن کی تجویز پاس کرنا میری اخلاقی ذمہ داری تھی ۔ میں اس کو کرا نہیں کراپایا ۔ اس ماحول میں میں نے فیصلہ کیا ہے کہ اب میں صدر عہدہ کا الیکشن نہیں لڑوں گا ۔ ان کے وزیرا علی کے عہدہ پر برقرار رہنے سے وابستہ سوال پر گہلوت نے کہا کہ اس سلسلہ میں فیصلہ سونیا گاندھی کریں گی ۔

      غور طلب ہے کہ حال ہی میں کانگریس آبزرور ملکا ارجن کھڑگے اور اجے ماکن راجستھان پہنچے تھے، لیکن وزرا اور ممبران اسمبلی کی حرکتوں نے انہیں پریشان کردیا ۔ ممبران اسمبلی نے ان سے ملاقات نہیں کی اور اپنی جانب سے شرائط رکھ دیں ۔ ممبران نے واضح طور پر کہہ دیا کہ سابق وزیر اعلی سچن پائلٹ کو وہ وزیر اعلی کے طور پر نہیں دیکھنا چاہتے ہیں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: