உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Assembly Elections 2022: جے پی نڈا کا دعویٰ- چار ریاستوں میں بنے گی بی جے پی کی حکومت، یوپی میں 300 سے زیادہ سیٹوں پر ہوگی جیت

    جے پی نڈا کا دعویٰ- چار ریاستوں میں بنے گی بی جے پی کی حکومت، یوپی میں 300 سے زیادہ سیٹوں پر ہوگی جیت

    جے پی نڈا کا دعویٰ- چار ریاستوں میں بنے گی بی جے پی کی حکومت، یوپی میں 300 سے زیادہ سیٹوں پر ہوگی جیت

    بی جے پی (BJP) کے قومی صدر جے پی نڈا نے دعویٰ کیا ہے کہ چار ریاستوں (Assembly Elections 2022) میں ایک بار پھر سے ان کی پارٹی حکومت بنائے گی۔ ان کے مطابق، اس وقت جن ریاستوں میں بی جے پی کی حکومت ہے وہاں کوئی اینٹی انکیمبنسی فیکٹر نہیں ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: بی جے پی (BJP) کے قومی صدر جے پی نڈا نے دعویٰ کیا ہے کہ چار ریاستوں (Assembly Elections 2022) میں ایک بار پھر سے ان کی پارٹی حکومت بنائے گی۔ ان کے مطابق، اس وقت جن ریاستوں میں بی جے پی کی حکومت ہے وہاں کوئی اینٹی انکیمبنسی فیکٹر نہیں ہے۔ نیوز 18 انڈیا کو دیئے گئے خصوصی انٹرویو میں سینئر اینکر امیش دیوگن سے بات چیت کرتے ہوئے جے پی نڈا کا کہنا ہے کہ یہاں اقتدار کے حق میں لہر ہے۔ نیوز 18 سے ایکسکلوزیو بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ اترپردیش میں بی جے پی کو تین سو سے زیادہ سیٹوں پر جیت ملے گی۔ واضح رہے کہ گوا اور اتراکھنڈ میں پہلے ہی الیکشن ہوچکے ہیں۔ یوپی میں چار دور کی ووٹنگ ہوچکی ہے۔ جبکہ منی پور میں ابھی دونوں فیز کے الیکشن ہونا باقی ہے۔ الیکشن کے نتائج 10 مارچ کو آئیں گے۔ آپ یہ پورا انٹرویو آج شام سات بجے نیوز 18 انڈیا پر دیکھ سکتے ہیں۔

      جے پی نڈا نے کہا کہ مغربی بنگال کی طرح اترپردیش میں نتیجے نہیں آئیں گے۔ انہوں نے کہا کہ مغربی بنگال میں بی جے پی نے پارٹی کو کھڑا کیا۔ جبکہ اترپردیش میں پہلے سے پارٹی کی تنظیم ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ پارٹی بنگال میں 3 سے 77 سیٹوں تک تک پہنچی۔ یہ بھی ایک بڑی حصولیابی ہے۔ ان سے جب پوچھا گیا کہ آخر مسلم بی جے پی کے کیوں ڈرتے ہیں تو اس سوال کے جواب میں جے پی نڈا نے کہا، ’ہم خوشنودی کے خلاف ہیں۔ سب کا وکاس ہو، یہی ہمارا ہدف ہے۔ جن دھن، سوبھاگیہ اور اجّولا سب کے لئے ایک طرح ہے۔
      اکھلیش یادو پر کی تنقید

      جے پی نڈا نے سماجوادی پارٹی کے سربراہ اکھلیش یادو پر جم کر تنقید کی۔ انہوں نے الزام لگایا کہ اکھلیش یادو خوشنودی کی سیاست کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا، ’اکھلیش یادو کی سیاسی سمجھ محدود ہے۔ اکھلیش یادو کی تاریخ دہشت گردوں کو بچانے کی رہی ہے۔ بم دھماکوں کے ملزمین کو اکھلیش نے چھڑوایا۔ سائیکل پر ووٹ کا مطلب دہشت گردوں کے حامیوں کو ووٹ۔ یادو فیملی ہمیشہ سے خوشنودی کی سیاست کرتی تھی۔ سماجوادی پارٹی نے ہمیشہ موقع پرست اتحاد کئے۔ دو جماعتوں کے اتحاد سے ووٹروں کا اتحاد نہیں ہوتا‘۔


       اکھلیش یادو کے اقتدار میں فساد ہوئے

      جے پی نڈا نے کہا کہ یوگی آدتیہ ناتھ نے جو کچھ بھی کہا کہ وہ سچ ہے۔ انہوں نے کہا، ’جو سچ ہے یوگی آدتیہ ناتھ جی نے وہی کہا۔ اکھلیش حکومت کے وقت 200 فساد ہوئے۔ ہم سب کا ساتھ وکاس کے منتر میں یقین کرتے ہیں۔ مسلمانوں کی حمایت بھی بی جے پی کو ملے گی۔ ووٹ بینک کی سیاست اپوزیشن کا کام ہے‘۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: