ایودھیا فیصلہ : اسد الدین اویسی کے خلاف کیس درج ، جذبات کو ٹھیس پہنچانے کا لگا الزام

بہار کے چھپرہ میں آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے حیدرآباد سے ممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کے خلاف کیس درج کیا گیا ہے ۔

Nov 14, 2019 08:46 PM IST | Updated on: Nov 14, 2019 08:46 PM IST
ایودھیا فیصلہ : اسد الدین اویسی کے خلاف کیس درج ، جذبات کو ٹھیس پہنچانے کا لگا الزام

اسد الدین اویسی کے خلاف کیس درج

بہار کے چھپرہ میں آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے حیدرآباد سے ممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کے خلاف کیس درج کیا گیا ہے ۔ ایودھیا تنازع میں سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے کے بعد اویسی کے بیان پر ہندو مہا سبھا کے ریاستی صدر نے عدالت میں شکایت داخل کی ہے ۔ شکایت میں ابھیمنیو کمار سنگھ نے اسد الدین اویسی پر لوگوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کا الزام عائد کیا ہے ۔ ابھیمنیو کا کہنا ہے کہ اویسی کے بیان سے سپریم کورٹ کے وقار کو بھی ٹھیس پہنچی ہے ، جس سے انہیں کافی تکلیف ہوئی ہے ۔

سی جے ایم کورٹ میں شکایت نمبر 3909 درج کراتے ہوئے ابھیمنیو کمار سنگھ نے کہا کہ ممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کے بیان سے لوگوں کے جذبات مجروح ہوئے ہیں اور اس سے دو کمیونٹی کے درمیان ہم آہنگی کو بھی نقصان پہنچا ہے ۔ چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ نے معاملہ کی سماعت کے بعد شکایت کو قبول کرتے ہوئے اے سی جے ایم فرسٹ کی عدالت میں کیس منتقل کردیا ہے ۔

Loading...

خیال رہے کہ آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے سربراہ اسد الدین اویسی نے کہا تھا کہ ان کی پارٹی ایودھیا معاملہ پر سپریم کورٹ کے فیصلہ کے تحت ایک مسجد کی تعمیر کیلئے دی جانے والی پانچ ایکڑ کی زمین کے حق میں نہیں ہے کیونکہ یہ لڑائی قانونی حقوق اور بابری مسجد کیلئے تھی ۔

جب ان سے کچھ مسلم لیڈروں کے ان تبصروں کے بارے میں پوچھا گیا کہ پانچ ایکڑ زمین حکومت کے ذریعہ تحویل میں لی گئی 67 ایکڑ زمین میں سے ہی الاٹ کی جانی چاہئے ، تو انہوں نے کہا کہ کئی سالوں تک جاری رہی یہ پوری جد و جہد زمین کے ایک ٹکڑے کیلئے نہیں تھی ۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم نے اتنے صبر وتحمل سے کام کیوں لیا ، ہم عدالت میں گئے ، اگر یہ زمین کا ایک ٹکڑا ہوتا تو ہم کہیں اور قبول کرسکتے تھے ، لیکن گزشتہ پچاس سالوں سے ہم سبھی صبر و تحمل کے ساتھ اس معاملہ کو قانون کی عدالت میں لڑ رہےتھے ۔

Loading...