உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بابری مسجد شہادت کی برسی: متھرا میں زبردست سیکورٹی، ریل بس کی آپریٹنگ روکی گئی، ہندو تنظیموں کے پروگرام پر پابندی

    بابری مسجد شہادت کی برسی: متھرا میں زبردست سیکورٹی، ریل بس کی آپریٹنگ روکی گئی

    بابری مسجد شہادت کی برسی: متھرا میں زبردست سیکورٹی، ریل بس کی آپریٹنگ روکی گئی

    متھرا میں سیکورٹی کو لے کر جنم بھومی استھل سے تقریباً 500 میٹر دوری تک خصوصی سیکورٹی گھیرا تیار کیا گیا ہے۔ پولیس کی نظر آس پاس کے مکانوں کے ساتھ ہندو وادی تنظیموں پر بھی ہے۔ 6 دسمبر کو نارائن سینا، شری کرشن جنم بھومی نرمان نیاس، شری کرشن جنم بھومی مکتی دل کی طرف سے روایت سے ہٹ کر الگ الگ پروگرام کرنے کا اعلان کیا گیا تھا۔ اس پر انتظامیہ نے انہیں کوئی اجازت نہیں دی ہے۔

    • Share this:
      متھرا: اترپردیش (Uttar Pradesh) کے ایودھیا میں 6 دسمبر یعنی بابری مسجد شہادت کی برسی کو دیکھتے ہوئے ہائی الرٹ ڈکلیئر کردیا گیا ہے۔ ایودھیا ہی نہیں متھرا (Mathura) میں بھی اس کو لے کر خصوصی الرٹ کے ساتھ سیکورٹی انتظامات کو چاق وچوبند کردیا گیا ہے۔ 6 دسمبر سے پہلے متھرا میں پولیس چپے چپے پر تعینات کردی گئی ہے۔ پولیس نے اس موقع پر کسی کو بھی کسی طرح کے انعقاد کی اجازت نہیں دی ہے۔ متھرا ورنداون کے درمیان چلنے والی ریل بس کی آمدورفت بھی روک دی گئی ہے۔

      متھرا کے سینئر پولیس سپرنٹنڈنٹ گورو گروور نے پورے متھرا میں سیکورٹی کا خصوصی گھیرا تیار رکھتے ہوئے جوانوں کو پل پل پر نظررکھنے کو کہا ہے۔ اس دوران کوئی شرارتی حرکت نہ ہو، اس کو لے کر سخت ہدایت بھی دی گئی ہے۔ ایس ایس پی کے مطابق، کچھ ہندو شدت پسند تنظیموں کے ذریعہ 6 دسمبر کو روایت سے ہٹ کر پروگراموں کے انعقاد کی اجازت مانگی جارہی تھی۔ اس پر انہیں اجازت نہیں دی گئی ہے۔



      متھرا- ورنداوان کے درمیان نہیں چلے گی ریل بس

      سیکورٹی کے پیش نظر ریلوے نے بھی بڑا قدم اٹھایا ہے۔ متھرا ورنداون کے درمیان چلنے والی ریل بس کی آمدورفت آئندہ احکامات  تک کے لئے روک دی گئی ہے۔ یہ ریل بس عید گاہ کے سامنے اور شری کرشن کی جائے پیدائش کے پاس سے ہوکر گزرتی ہے۔ اسی کو لے کر ریلوے نے اسے ملتوی کرنے کا فیصلہ لیا ہے۔ کل ملاکر انتظامیہ کسی بھی طرح کی نرمی برتنے کے موڈ میں نہیں ہے، جس سے کی لا اینڈ آرڈر خراب ہونے کے حالات بنیں۔

      متھرا میں سیکورٹی کو لے کر جنم بھومی استھل سے تقریباً 500 میٹر دوری تک خصوصی سیکورٹی گھیرا تیار کیا گیا ہے۔ پولیس کی نظر آس پاس کے مکانوں کے ساتھ ہندو وادی تنظیموں پر بھی ہے۔ 6 دسمبر کو نارائن سینا، شری کرشن جنم بھومی نرمان نیاس، شری کرشن جنم بھومی مکتی دل کی طرف سے روایت سے ہٹ کر الگ الگ پروگرام کرنے کا اعلان کیا گیا تھا۔ اس پر انتظامیہ نے انہیں کوئی اجازت نہیں دی ہے۔

      متھرا کو تین زون میں کیا گیا تقسیم

      اس کے علاوہ انتظامیہ نے علاقے کو ریڈ، پیلے اور سبز زون میں تقسیم کیا ہے۔ اسی طرح سے ان علاقوں میں بھاری پولیس اہلکار کی تعیناتی کی گئی ہے۔ دونوں مذہبی مقامات کے 300 میٹر علاقے میں بنے ریڈ زون پر آنے جانے والوں پر نظر رکھی جا رہی ہے۔ سیکورٹی کو دیکھتے ہوئے باہر سے بھی پولیس اہلکاروں کو بلایا گیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی تنظیموں کو سخت ہدایت جاری کر دی گئی ہے۔

      قومی، بین الااقوامی، جموں و کشمیر کی تازہ ترین خبروں کے علاوہ  تعلیم و روزگار اور بزنس  کی خبروں کے لیے  نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں۔

      Published by:Nisar Ahmad
      First published: