ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

کورونا کی وجہ سے بیوٹی پارلر بند، رانچی کی خواتین سخت پریشان

رانچی کے راتو روڈ کی باشندہ شویتا اور سوچترا کا کہنا ہے کہ جب حکومت مردوں کے لئے شراب کی دوکانیں کھولنے کا حکم دے سکتی ہے تو خواتین کے لئے بیوٹی پارلر بند رکھنے کے احکامات کیوں جاری کی ہے۔

  • Share this:
کورونا کی وجہ سے بیوٹی پارلر بند، رانچی کی خواتین سخت پریشان
کورونا کی وجہ سے بیوٹی پارلر بند، رانچی کی خواتین سخت پریشان

رانچی: کورونا وبا کے ماحول میں تمام ضروریات زندگی کو سخت مشکلات سے گذرنا پڑ رہا ہے۔ ضرورتیں چاہے روٹی کی ہو یا خوبصورت دکھنے کی چاہت کی۔ اسے کورونا سے جنگ لڑنی پڑ رہی ہے۔ کہتے ہیں آئینہ کبھی جھوٹ نہیں بولتا ہے۔ حالات جیسے بھی ہوں چہرے کو پڑھنے میں آئینہ نے ہمیشہ ایمانداری دکھائی ہے، لیکن گذشتہ قریب 4 ماہ سے کورونا وبا کی وجہ کر تمام بیوٹی پارلر کے آئینہ پر پردہ پڑا ہوا ہے۔ ایسے میں اپنی خوبصورتی کو لےکر ہمیشہ محتاط اور چوکس رہنے والی خواتین کی پریشانیوں میں اضافہ ہو گیا ہے۔ انہیں رقم خرچ کرنے کے باوجود بیوٹشین پارلر سروس نہیں مل پا رہی ہے۔ لہٰذا مجبوری میں وہ اپنے گھر میں ہی خود کے لئے بیوٹی پارلر بنا لیا ہے۔ رانچی کے راتو روڈ کی باشندہ شویتا اور سوچترا کا کہنا ہے کہ جب حکومت مردوں کے لئے شراب کی دوکانیں کھولنے کا حکم دے سکتی ہے تو خواتین کے لئے بیوٹی پارلر بند رکھنے کے احکامات کیوں جاری کی ہے۔


موجودہ دور میں خوبصورتی اور حسن کا پرفکشن سرٹیفکیٹ دراصل بیوٹی پارلر کا آئینہ ہی جاری کرتا ہے۔ لہٰذا شویتا۔ سوچترا جیسی خواتین کے روزانہ کے معمول میں کچن کے کاموں کے ساتھ ساتھ خوبصورتی کے کام بھی شامل ہیں۔ ایسے میں کورونا کی وجہ سے بیوٹی پارلر سے دور رہنا ان کے دلوں کو خاصا پریشان کر رہا ہے اور جب دل کے بجائے خوبصورتی کو لے کر ایک کسک چہرے سے اٹھتی ہے، تب دل سے کورونا کے لئے بددعائیں نکلتی ہیں۔


خوبصورتی کو لےکر ہمیشہ محتاط اور چوکس رہنے والی خواتین کی پریشانیوں میں اضافہ ہو گیا ہے۔ انہیں رقم خرچ کرنے کے باوجود بیوٹشین پارلر سروس نہیں مل پا رہی ہے۔
خوبصورتی کو لےکر ہمیشہ محتاط اور چوکس رہنے والی خواتین کی پریشانیوں میں اضافہ ہو گیا ہے۔ انہیں رقم خرچ کرنے کے باوجود بیوٹشین پارلر سروس نہیں مل پا رہی ہے۔


وہیں دوسری جانب بیوٹی پارلر چلا کر اپنے خاندان کو پالنے والی خواتین پارلر کے بند رہنے سے بیحد مایوس ہیں۔ مین روڈ واقع ایک بیوٹی پارلر کی مالکن خوشبو خان کا کہنا ہےکہ بیوٹی پارلر مسلسل بند رہنے سے شدید طور پر مالی پریشانیوں سے گھر گئی ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ جمع پونجی خرچ ہو گئے ہیں۔ خوشبو خان کے مطابق رانچی شہر میں ایک ہزار سے زائد چھوٹی بڑی بیوٹی پارلر ہیں جن سے خواتین روزی روٹی کماتی ہیں، لیکن گذشتہ چار ماہ سے بند رہنے کی وجہ کر ان کی مالی پریشانیوں کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 16, 2020 05:17 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading